Sindh Environmental Protection Agency                                                                        
Environment Climate Change & Coastal Development
Department , Government of Sindh.
Home About Us RULES Press Release Downloads/Reports Gallery Contact Us
 

  PRESS RELEASE
 
     
  SEPA to survey industries established in residential areas

KARACHI: In view of the recent fire incident at a factory near a residential area of ​​the city, the Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) has decided to collect the data of illegal industrial and commercial activities in or around residential areas throughout the province to prevent such fire incidents in future.
In this regard, DG SEPA Naeem Ahmad Mughal has issued written directives to all his district offices asking them to conduct a door-to-door survey of residential areas of their respective jurisdiction and collect data of all such illegal industries which are operating without safety measures and can cause damage to human life, property, and environment in case of fire accidents.
District offices have also been asked to check that industries located in residential areas are operating with the approval of which competent authority.
Besides, the district offices have also been directed to review the environmental issues of the said industries.
 
  سندھ کے رہائشی علاقوں میں قائم صنعتوں کے سروے کا فیصلہ

ڈی جی سیپا نے ضلعی دفاتر کو ہدایات دے دیں

کراچی: حال ہی میں شہر کے رہائشی علاقے کے قریب قائم ایک فیکٹری میں آگ لگنے کے حادثے کے پیش نظر ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (ای پی اے سندھ) نے فیصلہ کیا ہے کہ صوبے بھر کے رہائشی علاقوں میں یا ان کے قریب ہونے والی غیر قانونی صنعتی و تجارتی سرگرمیوں کا ڈیٹا اکٹھا کیا جائے گا تاکہ آئندہ آگ لگنے کے واقعات کی روک تھام کی جاسکے.
اس ضمن میں ڈی جی سیپا نعیم احمد مغل نے اپنے تمام ضلعی دفاتر کو تحریری طور ہر ہدایات جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ تمام ضلعی دفاتر اپنی اپنی عملداریوں کے رہائشی علاقوں کا ڈور ٹو ڈور سروے کریں اور ایسی تمام غیر قانونی صنعتوں کا ڈیٹا اکھٹا کریں جو حفاظتی اقدامات کے بغیر کام کررہی ہیں جس کی وجہ سے ان میں آگ لگنے کے حادثات کی صورت میں انسانی جان و مال اور ماحول کو نقصان پہنچ سکتا ہے.
ضلعی دفاتر سے یہ بھی کہا گیا ہے کہ رہائشی علاقوں میں قائم صنعتوں سے یہ بھی پوچھا جائے کہ وہ کس مجاز اتھارٹی کی منظوری سے کام کررہی ہیں.
اس کے علاوہ ضلعی دفاتر کو مذکورہ صنعتوں کے ماحولیاتی امور کا جائزہ لینے کی بھی ہدایت کی گئی ہے.
 
  No oil spill from ship stranded on Clifton beach

Says DG SEPA after site inspection

Karachi: Oil is not spilling into the sea from the ship stranded on the shores of Clifton and the coordination committee formed on the matter is keeping a close watch on the matter and is professionally handling all matters.
On the directives of Sindh Chief Minister's Advisor on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab and Secretary Environment ,  the Director-General Sindh Environmental Protection (SEPA) Naeem Ahmed Mughal visited the site with his technical team and inspected the whole matter in detail. He also got a briefing from the representatives of Maritime Security Agency, Karachi Port Trust, and the concerned shipping company present on the occasion.
DG SEPA confirmed that no fuel of any kind was spilling from the ship and all environmental and other safety measures were being ensured professionally.
He said that it was earlier decided that out of the total 117 tons of low sulfur fuel in the ship, 95 tons would be safely removed from the ship while the remaining fuel was to be kept for its functioning. Subsequently, ten tons of fuel was taken out this morning However, due to high tides in the sea, the extraction of more fuel has been stopped for the time being due to caution.
Rejecting the rumors of any oil spill from the stranded ship, DG SEPA said that the government coordination committee formed on the issue was professionally looking into the matter and all the members of the committee were working together to ensure all safety measures including environmental.

Spokesperson
Environment, Climate Change, and Coastal Development Department
Government of Sindh
 
  SEPA collects Rs80 million from mineral water companies

KARACHI: Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) collected Rs 80 million from mineral water companies and deposited the money in the national treasury.
On the orders of Provincial Secretary Environment Muhammad Aslam Ghauri and Director General SEPA Naeem Ahmad Mughal, Deputy Directors Kamran Rajput and Munir Abbasi ascertained the collectible amount after scrutinizing the records of the referred companies.
The Supreme Court of Pakistan, under Constitutional Petition No. 26/2018, has ordered to deposit the amount in the public treasury for extracting mineral water from the ground and preparing it for drinking and selling it.
For the first time in the history of Pakistan, such an order was issued by the Supreme Court, which was an important and complex matter for government agencies to implement and plan for the collection of money.
However, the senior management of SEPA assigned the responsibility of implementing the orders of the Supreme Court and collecting the money to the two experienced Deputy Directors who not only determined the amount with the day and night labor and assistance of subordinate staff but also collected Rs80 million from Nestle, Shezan, Mehran Beverages, Aquafina, Pepsi, Popular, Siz Water and Culligan. This is the first recovery in Sindh on the order of the Supreme Court on which the Secretary Environment and the Director-General SEPA appreciated the performance of both the officers and their subordinates and hoped that receiving hefty sums from mineral water companies will greatly benefit the national exchequer and at the same time the Supreme Court order was complied with.
 
     
  پریس ریلیز

سیکریٹری ماحولیات کا سیپا حیدرآباد کا دورہ

ضلعی دفاتر کی کارکردگی کا جائزہ لیا

حیدرآباد ریجن کے دفتر کی توسیع کی گنجائش کا بھی معائنہ

حیدرآباد: محکمہ ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی حکومت سندھ کے سیکریٹری محمد اسلم غوری نے ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) کے ریجنل دفتر حیدرآباد کا دورہ کیا اور دفتری امور پر افسران سےبریفنگ لی.
سیکریٹری ماحولیات نے ریجن کے ضلعی دفاتر کی فیلڈ کی کارکردگی کا بھی جائزہ لیا.
حیدرآباد ریجن کی ماحولیاتی نگرانی کی بڑھتی ہوئی ذمہ داریوں کے پیش نظر ریجنل دفتر کی توسیع کی گنجائش کا بھی سیکریٹری ماحولیات نے جائزہ لیا اور موقع پر موجود ورکس اینڈ سروسز ڈپارٹمنٹ کے افسران کو بھی اس حوالے سے ہدایات جاری کیں.
محمد اسلم غوری نے فیلڈ کے افسران کو مزید تندہی سے ماحولیاتی قوانین پر عملدرآمد کی تاکید کی اور کہا کہ اپنے فرائض کی ادائیگی پر بھرپور توجہ مرکوز رکھیں.
 
 
No leniency decided for industrial polluters

Decision conveyed to industrialists in a high-level meeting


KARACHI: In a high-level meeting chaired by the Advisor to Chief Minister Sindh on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab it was decided that strict action would be taken against those who despite the availability of resources release their industrial effluent without treating it.   
Murtaza Wahab earlier received reports of contamination of Kanjhar Lake through the KB (Kalari Baghar) Feeder Canal of Kotri Industrial Area because of malfunctioning of combined effluent treatment plant (CETP) of Kotri Industrial Area. Eventually, he took notice of it and convened a meeting which was attended by Secretary Industry and Commerce Riaz-ud-Din, Secretary Environment, Climate Change, and Coastal Development Muhammad Aslam Ghauri, MD Site Kotri Asif Memon, MD Site Karachi Shehzad Fazal, and DG Environmental Protection Agency Sindh (SEPA) Naeem Mughal besides other concerned officers
On this occasion, Environment Adviser Murtaza Wahab expressed concern over the rising industrial water pollution and said that if there is no treatment plant in an industrial area, industrial effluent could be discharged without treatment and it is understandable.  But despite having a plant,  if the effluent goes directly to the water resources so it can be said nothing but administrative negligence.
Secretary Environment Aslam Ghauri suggested that the treatment plant of Kotri Industrial Area be repaired immediately by the concerned authorities and the industries which are reluctant to avail the services of the treatment plant for a fee, strict action to be taken against them.
DG SEPA Naeem Mughal said that according to sections 11 and 14 of the Sindh Environmental Protection Act 2014, it is strictly prohibited to spread any kind of pollution and violators will be fined millions of rupees daily as well as their business can also be shut down.
DG SEPA further said that industries that have not yet had a combined effluent treatment plant in their area can be asked to install a treatment plant as soon as possible while taking a lenient view for the time being. But those industries which have the treatment plant but do not play their due role to maintain it and their effluent is found to be flowing directly into the water bodies, there is no justification for granting any concession to them.
It was decided in the meeting that if the Kotri treatment plant is repaired then its treated water will be used for better purposes. Barrister Murtaza Wahab directed the concerned authorities that the same water should be used to convert the relevant area into a green zone.
The Environment Adviser also directed the MD Site and DG SEPA to get the referred treatment plant repaired immediately by the concerned agencies.
On this occasion, the Chairman of Kotri Industrial Area assured their cooperation with the regulator and the concerned departments.
It is to be noted that the Sindh Government has already allocated funds for setting up combined effluent treatment plants in all industrial areas in Sindh given industries' lack of capacity to set up their treatment plants inside the factory buildings. In this regard, a combined effluent treatment plant was already installed in Kotri Industrial Area five years ago.

Spokesperson, Environment Climate Change and Coastal Development Department Government of Sindh
 
 


وسائل کے باوجود صنعتی فضلہ جوں کا توں بہانے والوں سے کوئی رعایت نہ برتنے کا فیصلہ 

 سندھ حکومت نے صنعتی رہنمائوں کو حتمی پیغام دے دیا

مشیر ماحولیات مرتضی وہاب کی صدارت میں اعلی سطحی اجلاس

کراچی: کوٹری صنعتی ایریا کا ٹریٹمنٹ پلانٹ آئے دن خراب رہنے کے باعث وہاں کا ضرر رساں صنعتی فضلہ کے بی (کلری بگھار) فیڈر کینال سے ہوتا ہوا کینجھر جھیل کو آلودہ کرنے کی رپورٹوں کا وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون, ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب نے نوٹس لیتے ہوئے ایک اعلی سطحی اجلاس طلب کیا جس میں فیصلہ کیا گیا کہ ذرائع کی دستیابی کے باوجود صنعتی آبی فضلہ صاف کئے بغیر بہانے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی.
اجلاس میں سیکریٹری صنعت و تجارت ریاص الدین, سیکریٹری ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی و ساحلی ترقی محمد اسلم غوری, ایم ڈی سائٹ کوٹری آصف میمن, ایم ڈی سائٹ کراچی شہزاد فضل اور ڈی جی ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) نعیم مغل کے علاوہ دیگر اعلی افسران نے شرکت کی.
 اس موقع پر مشیر ماحولیات مرتضی وہاب نے بڑھتی ہوئی صنعتی آبی آلودگی پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اگر کسی صنعتی ایریا میں ٹریٹمنٹ پلانٹ نہ ہونے پر صنعتی آبی فضلہ صاف کئے بغیر بہایا جائے تو یہ بات تو سمجھ میں آتی ہے تاہم مشترکہ ٹریٹمنٹ پلانٹ ہونے کے باوجود وہ آئے دن خراب رہے اور وہاں کا صنعتی فضلہ براہ راست آبی وسائل سے جا ملے تو اسے انتظامی غفلت کے سوا کچھ نہیں کہا جاسکتا ہے.
اس موقع پر سیکریٹری ماحولیات اسلم غوری نے تجویز دی کہ متعلقہ ذمہ دار اداروں سے کوٹری صنعتی ایریا کا ٹریٹمنٹ پلانٹ فوری طور پر ٹھیک کرایا جائے اور ایسی صنعتیں جو ٹریٹمنٹ پلانٹ سے فیس کے عوض استفادہ حاصل کرنے میں لیت و لعل سے کام لیں ان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے.
ڈی جی سیپا نعیم مغل نے کہا کہ سندھ کے تحفظ ماحول کے قانون 2014 کی شق 11 اور 14 کے مطابق ہر قسم کی آلودگی پھیلانے کی سختی سے ممانعت ہے اور خلاف ورزی کرنے والوں پر لاکھوں روپے یومیہ جرمانے کے ساتھ ساتھ ان کے کاروبار کو یکسر بند بھی کرایا جاسکتا ہے.
ڈی جی سیپا نے کہا کہ ایسی صنعتیں جن کے علاقے میں مشترکہ ٹریٹمنٹ پلانٹ اب تک لگا ہی نہیں ان سے تو وقتی طور پر رعایت برتتے ہوئے انہیں جلد از جلد ٹریٹمنٹ پلانٹ لگوانے کا کہا جاسکتا ہے مگر وہ صنعتیں جو ٹریٹمنٹ پلانٹ کی دیکھ بھال میں اپنا مجوزہ کردار ادا نہ کریں اور اپنا فضلہ براہ راست بہاتی پائی جائیں ان کے خلاف کسی رعایت کا کوئی جواز نہیں بنتا ہے 
اجلاس میں طے کیا گیا کہ کوٹری ٹریٹمنٹ پلانٹ ٹھیک ہوجائے تو یہی پانی بہتر طور پر استعمال کرنے کے قابل ہوجائیگا۔جس پر بیرسٹر مرتضی وہاب نے متعلقہ حکام کو ہدایت کی 
 کہ اسی پانی کو متعلقہ ایریا  گرین زون بنانے کے کام کے لئے استعمال کیا جاۓ.
مشیر ماحولیات نے ایم ڈی سائیٹ اور ڈی جی سیپا کو ٹریٹمنٹ پلانٹ متعلقہ اداروں سے فوری ٹھیک کرانے کی ہدایت بھی کی
اس موقع پر کوٹری انڈسٹریل ایریا کے چیئرمین کی طرف سے اداروں کو تعاون کی یقین دہانی کروائی گئی۔
واضح رہے کہ سندھ حکومت نے فیکٹریوں کی اندرون عمارت میں انفرادی ٹریٹمنٹ پلانٹ لگانے کی گنجائش نہ ہونے کو دیکھتے ہوئے تمام صنعتی ایریاز میں مشترکہ ٹریٹمنٹ پلانٹ لگانے کے لیے پہلے ہی فنڈز مختص کردئیے ہیں جبکہ کوٹری صنعتی ایریا میں پانچ سال قبل مشترکہ ٹریٹمنٹ پلانٹ نصب کردیا گیا تھا

ترجمان محکمہ ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی حکومت سندھ
 
     
  سیپا حیدرآباد نے فضائی آلودگی پھیلانے پر دس کارخانے بند کرادئیے


حیدرآباد ۔ حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون،ماحولیات،موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب اور ڈائریکٹر جنرل ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا)نعیم احمد مغل کی خصوصی ہدایت پر ادارہ تحفظ ماحولیات حیدرآباد ریجن کے انچارج عمران علی عباسی کی سربراہی میں اسٹنٹ ڈائریکٹر (ٹیکنیکل) علی نواز بھنبھرو نے اپنی ٹیم کے ہمراہ حیدرآباد سائیٹ ایریا میں ماحولیاتی آلودگی پھیلانےوالے پیداواری یونٹس کے خلاف گرینڈ آپریشن کیا اور ماحولیاتی آلودگی کنٹرول نہ کرنے پر دس کارخانے بند کروادیے ۔
اس موقع پر ریجنل انچارچ سیپا حیدرآباد عمران علی عباسی نے بتایا کہ آج ہماری ٹیم نے حیدرآباد سائیٹ ایریا میں ماحولیاتی آلودگی پھیلانے والے دس کارخانوں پر قانون برائے تحفظ ماحول 2014 کے سیکشن 11 کے تحت کاروائیاں کی ہیں ۔ اور ان کو فضائی آلودگی پھیلانے پر فوری طور پر بند کروادیا ہے ۔
ریجنل انچارج عمران علی عباسی نے مزید بتایا کہ سیپا کے ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل کی خصوصی ہدایت پر ان تمام یونٹس کو تمام قانونی چارہ جوئی کے بعد بند کیا گیا ہے ۔ اگر یہ یونٹس تحفظ ماحول کے قانون 2014 پر عمل دارآمد نہیں کریں گے تو ان تمام کارخانوں کا ماحولیاتی ٹربیونل میں کیس بھی داخل کیا جائے گا جہاں پر ان تمام کارخانوں پر بھاری جرمانہ عائد ہوسکتا ہے اور اس قسم کی کاروائیاں مستقبل میں بھی جاری رہیں گی ۔

 
 
Secretary of Environment meets with Consul General of Malaysia


Palm cultivation and oil production in Sindh discussed

KARACHI: Secretary, Environment, Climate Change, and Coastal Development Department, Government of Sindh Muhammad Aslam Ghauri visited the Malaysian Consulate in Karachi and met Consul General Khairul Nazran Abdul Rehman. Riaz Ali Abbasi Director General of Sindh Coastal Development Authority was also present on the occasion. ۔
During the meeting, the issue of palm cultivation and oil production in Malaysia was discussed in detail so that the successful experimental cultivation of the said fruit on the coastal land of the Thatta district of Sindh and the process of extracting oil from it could be further expedited. In this regard, Malaysia's success story could be used to improve and expand its production.
During the meeting, the Consul General of Malaysia told the Secretary of Environment that his country cultivates palm at a total of six million hectares of coastal land. The production of which is exported to world markets, generating significant foreign exchange. It was agreed to continue liaison while bringing palm oil production from the trial phase to the regular phase.
The Environment Secretary thanked on behalf of the Government of Sindh for the guidance provided by Malaysia in the successful experiment of the said test product and hoped for similar cooperation in the future.
It should be noted that the Sindh Government, despite its limited resources, has recently introduced a success model by growing palm trees on a trial basis in the Kathore area of Thatta district and producing world-class oil from their fruits. The investment in the sector will be taken forward on a commercial basis so that Pakistan can save its valuable foreign exchange by meeting the domestic needs of palm oil as much as possible locally.
 
     
  سیکریٹری ماحولیات کی ملائشیا کے قونصل جنرل سے ملاقات
پام کی کاشت اور تیل کی پیداوار کے موضوع پربات چیت

کراچی: سیکریٹری محکمہ ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی حکومت سندھ محمد اسلم غوری نے کراچی میں واقع ملائشیا کے قونصل خانے کا دورہ کیا اورقونصل جنرل خیر النظران عبد الرحمن سے ملاقات کی اس موقع پر کوسٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی کے ڈائریکٹر جنرل ریاض علی عباسی بھی موجود تھے۔
ملاقات کے دوران ملائشیا میں پام کی کاشت اور اس سے تیل پیدا کرنے کے موضوع پر تفصیل سے بات چیت کی گئی تاکہ سندھ کے ضلع ٹھٹھہ کی ساحلی زمین پر حال ہی میں مذکورہ پھل کی کامیاب تجرباتی کاشت اور اس سے تیل نکالنے کے عمل کو مزید بہتر بناتے ہوئے اس کی پیداوار میں وسعت لانے کے لیے ملائشیا کی کامیابی کی داستان سے استفادہ اٹھایا جاسکے۔
ملاقات کے دوران ملائشیا کے قونصل جنرل نے سیکریٹری ماحولیات کو بتایا کہ ان کے ملک میں کل چھ ملین ہیکٹر ساحلی رقبے پر پام کی کاشت کی جاتی ہے جس کی پیداوار عالمی منڈیوں میں برآمد کرنے سے خطیر زرمبادلہ حاصل ہوتا ہے، دونوں جانب سے سندھ پاکستان میں پام آئل کی پیداوار آزمائشی مرحلے سے معمول کے مرحلے میں لانے کے دوران باہمی رابطہ جاری رکھنے پر اتفاق کیا گیا۔
سیکریٹری ماحولیات نے ملائشیا کی جانب سے مذکورہ آزمائشی پیداوار کے کامیاب تجرے میں فراہم کی گئی رہنمائی پرحکومت سندھ کی طرف سےشکریہ ادا کیا اور مستقبل میں بھی ایسے ہی تعاون کی امید ظاہر کی۔
واضح رہے کہ حال ہی میں حکومت سندھ نے اپنے محدود وسائل کے باوجود ٹھٹھہ کے علاقے کاٹھوڑ میں آزمائشی بنیادوں پر پام کے کثیر تعداد میں درخت اگاکر اور ان سے پیدا ہونے والے پھل سے عالمی معیار کا تیل پیدا کرکے کامیابی کا ایک ماڈل پیش کردیا ہے، جسے نجی شعبے کی سرمایہ کاری کے ذریعے تجارتی بنیادوں پر آگے بڑھایا جائے گا تاکہ پاکستان پام کی ملکی ضروریات کو زیادہ سے زیادہ مقامی طور پر پوری کرتے ہوئے اپنا قیمتی زر مبادلہ بچاسکے
 
     
  KARACHI: Dated 15/02/2021. Environmental Protection Agency, Government of Sindh (SEPA) has issued Environmental Protection Order (EPO) to M/s Creek Marina Builders and Developers directing them to stop construction of the building which is being constructed in Defence Housing Authority DHA phase 8 , situated at Abdul Sattar Edhi avenue Karachi , because of not filing its mandatory environmental assessment as per law.

DG, SEPA Mr. Naeem Ahmed Mughal pointed out in EPO that the builder of subject building was earlier offered an opportunity of personal hearing as well on 15/2/21 to seek their reply for non compliance of the Sindh Environmental Protection Act 2014.

Subsequently on non submission of required document, DG SEPA said, the builder has been directed to stop construction of referred building till its environmental approval is obtained.

Mr. Naeem Mughal DG SEPA also warned that on failure to comply with directives specified in EPO, prosecution shall be initiated in concerned court of law against the proponent.

It may be pointed out that under Section 17 of Sindh Environmental Prtoection Act 2014 no proponent shall commence or construct a development project within the jurisdiction of Sindh province unless its environmental approval by submitting EIA or IEE is obtained from SEPA.

Where as under Section 21 of the same Act DG SEPA has authority to stop construction or installation of a development project which was initiated without prior approval of Sindh EPA by filing its EIA/IEE.
 
  SEPA shut down factories for causing air pollution

Hyderabad: The Director-General of Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) Naeem Ahmad Mughal inspected the cotton waste and rice straw and husk factories in the Hyderabad site area to prevent and control air pollution. Immediate closure orders were issued on the spot. Imran Ali Abbasi, Regional Incharge, SEPA Hyderabad, Ali Nawaz Bhanbhro, Assistant Director (Technical), and Environmental Inspectors, Hyderabad Region were also present on the occasion.
Later, DG SEPA Naeem Ahmad Mughal inspected the brick kilns in Tando Haider and its surrounding in detail and issued legal action orders under the Sindh Environmental Protection Act 2014 against the kilns causing environmental pollution. On this occasion, Regional Incharge SEPA Hyderabad Imran Ali Abbasi said that such operations will continue in the future and no unit that spreads environmental pollution will be spared and legal action will be taken against them as per SEP Act 2014.

 
     
  فضائی آلودگی پھیلانے پر سیپا نے کارخانے بند کرادئیے

حیدرآباد: ڈائریکٹر جنرل ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) نعیم احمد مغل نے فضائی آلودگی کی روک تھام کے لئے حیدرآباد سائیٹ ایریا میں فضائی آلودگی پھیلانے والے کپاس کے کچرے اور چاول کے بھوسےاور چھلکے کے کارخانوں کا معائینہ کیا اور فضائی آلودگی کنٹرول نہ کرنے پر فوری کام بند کرنے کے احکامات موقع پر ہی جاری کر دئیے۔ اس موقع پر ریجنل انچارج ادارہ تحفظ ماحولیات عمران علی عباسی ،اسٹنٹ ڈائریکٹر (ٹیکنکل)علی نواز بھنبھرو اور حیدرآباد ریجن کے ماحولیاتی انسپیکٹرز بھی ہمراہ تھے۔
بعد ازاں ڈی جی سیپا نعیم احمد مغل نے ٹنڈوحیدر اور اس کے گردونواح میں قائم اینٹوں کے بھٹوں کی تفصیلی جانچ پڑتال کی۔اور ماحولیاتی آلودگی کا سبب بننے والے بھٹوں کے خلاف سندھ کے ماحولیاتی قانون 2014 کے تحت قانونی چارہ جوئی کے احکامات جاری کیے۔اس موقع پر ریجنل انچارج سیپا حیدرآباد عمران علی عباسی نے بتایا کہ اس قسم کی کاروئیاں مسقبل میں بھی جاری رہیں گی اور ماحولیاتی آلودگی پھیلانے والے کسی بھی یونٹ کو نہیں چھوڑا جائے گا اور ان کے خلاف ماحولیاتی قانون 2014 کے مطابق قانونی چارہ جوئی بھی کی جائے گی۔
 
 
Nominations sought from KCCI to review Sindh Environmental Law

Collaboration termed must for effective enforcement of law

Secretary Environment speaks at Karachi Chamber function

KARACHI: The Environment, Climate Change and Coastal Development Department, Government of Sindh has sent a letter seeking nominations from the Karachi Chamber of Commerce and Industry for setting up an advisory committee to review the Sindh Environmental Protection Act 2014. As soon as the required nominations are received, the committee will be notified after fulfilling necessary formalities so that the consultation process can be initiated to improve the various provisions of the said Act and make it more effective.
This was stated by Secretary Environment, Climate Change and Coastal Development Muhammad Aslam Ghauri at the closing ceremony of a two-day symposium on integrated solid waste management jointly organized by Karachi Chamber of Commerce and Industry, SEGMITE, and Sindh Environmental Protection Agency (SEPA).
Presenting an overview of the aims and objectives of the proposed committee, the Environment Secretary said that it has been six years since the enactment of the said law and what are the challenges faced by the regulator that is SEPA and business community during its implementation activities? The Advisory Committee will consider in detail all the points that have been problematic and where further room for improvement has been felt and will come up with mutually agreed upon workable and acceptable solutions for all parties. However, while doing so, the basic spirit of environmental standards and requirements will not be left behind in any way, and in the meantime, every effort will be made to keep the wheel of business growth moving while ensuring full protection of the environment.
He requested the representatives of KCCI to nominate commercial as well as technical experts in the committee so that trade facilitation could be considered keeping in view the technical aspects of the said law. He also said that for the effective implementation of environmental law, it is essential that the business community wholeheartedly support the regulatory agency in implementing its provisions.
Earlier, Shariq Vohra, President, Karachi Chamber of Commerce and Industry, in his address, lauded the immediate action taken by the Environment Secretary and said that the immediate implementation of the directives of Environmental Adviser Barrister Murtaza Wahab for setting up the said advisory committee issue just a day ago is commendable. It proves that there are still officers in government departments who take immediate action, and this suggests that efforts to pave the way for the implementation of environmental laws in Sindh will surely pay off, and this is the effort of the business community that no one should be bothered during its implementation and the observance of the law should equally continue.
He said that the recycling industry also needs to be regulated so that the government can facilitate their work and increase its revenue by levying necessary taxes on them. The informal recycling industry needs to be registered so that they can minimize their costs and increase their income by working in an integrated manner, which will encourage others to invest more in the industry.
Earlier in the symposium, 16 experts from various environmental and research institutes gave presentations on traditional and modern methods of solid waste management and how the experts should convert the issue of solid waste and waste disposal into income opportunities. They discussed important issues such as landfill site construction and management, eco-friendly management of electronic (computer and mobile phone) waste, and enhancing liaison between different agencies to address the issue.
 
     
  ماحولیاتی قانون کی جائزہ کمیٹی کے لیے کراچی چیمبر سے نامزدگیاں طلب

ماحولیاتی قانون کے مطلوبہ مقاصد کے حصول کے لیے تاجربرادری کا ساتھ ضروری قرار

سیکریٹری ماحولیات کا کراچی چیمبر کی تقریب میں اظہار خیال

کراچی: محکمہ ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی حکومت سندھ نے سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحولیات 2014کے از سر نو جائزے کے لیے بنائی جانے والی مشاورتی کمیٹی کے قیام کے لیے ایون صنعت و تجارت کراچی سے نامزدگیاں طلب کرنے کے لیے خط ارسال کردیا ہے، جبکہ مطلوبہ نامزدگیاں موصول ہوتے ہی ضروری کارروائی کے بعد کمیٹی کو نوٹیفائی کردیا جائے گا تاکہ مذکورہ قانون کی مختلف شقوں کوبہتر بناتے ہوئے اسے مزیدموثر بنانے کے لیے مشاورت کا عمل شروع کیا جاسکے۔
یہ بات سیکریٹری محکمہ ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی محمد اسلم غوری نے ایوان صنعت و تجارت کراچی، سیگمائٹ اور ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا)کے اشترک سے ٹھوس فضلے کے ہم آہنگ بندوبست کے موضوع پر منعقدہ دو روزہ سمپوزیم کی اختتامی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔
مجوزہ کمیٹی کے اغراض مقاصد کا اجمالی جائزہ پیش کرتے ہوئے سیکریٹری ماحولیات نے کہا کہ مذکورہ قانون کو نافذ ہوئے چھ سال ہوچکے ہیں اس دوران اس کے نفاذ کی سرگرمیوں کے دوران ریگولیٹری یعنی سیپا اور تاجر برادری کو کیا کچھ مشکلات درپیش آئیں، کن کن پہلوں پر الجھاؤ دکھائی دیا اور کہاں کہاں بہتری کی مزید گنجائش محسوس ہوئی ان تمام نکات پر مشاورتی کمیٹی تفصیلی غور کرے گی اور باہمی اتفاق سے تمام معاملات کے قابل عمل اور تمام فریقوں کے لیے قابل قبول حل پیش کرے گی تاہم اس دورن ماحولیاتی معیارات اور تقاضوں کی بنیادی روح کو کسی طور پس پشت نہیں ڈالا جائے گا بلکہ ہر مرحلے پر کوشش ہوگی کہ ماحول کی بھرپور حفاظت کو یقینی بناتے ہوئے تجارتی ترقی کا پہیہ رواں دواں رکھا جائے۔
انہوں نے ایون تجارت کراچی کے نمائندہ گان سے گزارش کی کہ کمیٹی میں تجارتی کے ساتھ ساتھ یکنیکی ماہرین کو بھی نامزد کریں تاکہ مذکورہ قانون کے تیکنیکی پہلووں کو مد نظر رکھتے ہوئے تجارتی آسانیوں پر غور کیا جاسکے۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ماحولیاتی قانون کے موثر نفاذ کے لیے ضروری ہے کہ تاجر برادری دل و جان سے اس کی شقوں پر عملدرآمد کرانے میں ریگولیٹری ایجنسی کا ساتھ دے۔
اس سے قبل ایوان و صنعت و تجارت کراچی کے صدر شارق وہرہ نے اپنے خطاب میں سیکریٹری ماحولیات کے فوری اقدام کو سراہتے ہوئے کہا کہ محض ایک روز قبل مذکورہ مشاورتی کمیٹی کے قیام کے لیے مشیر ماحولیات بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایات پر فوری عملدرآمد سے اندازہ ہوتا ہے کہ سرکاری محکموں میں فوری اقدامات لینے والے افسران اب بھی موجود ہیں، اور اس سے یہ بھی اندازہ ہوتا ہے کہ سندھ میں ماحولیاتی قوانین کے نفاذ کے لیے راہیں مزید ہموار کرنے کی کوششیں ضرور رنگ لائیں گی، اور یہی تاجر برادری کی کوشش ہے کہ قوانین کے نفاذ کے دوران کسی کو زحمت بھی نہ ہو اور قانون کی پاسداری بھی بدستور جاری رہے۔
ان کا کہنا تھا کہ اعادہ استعمال(ری سائیکلنگ) کی صنعت کو بھی ریگولیٹ کرنے کی ضرورت ہے تاکہ حکومت انہیں کام کرنے کی آسانیاں فراہم کرے اور اس کے صلے میں ان پر ضروری ٹیکس عائد کرکے حکومتی خزانے میں اضافہ کرے، اس ضمن میں اعادہ استعمال کی غیر رسمی صنعت کو رجسٹر کرنے کی ضرورت ہے تاکہ وہ مربوط طریقہ کار کے تحت کام کرکے اپنی لاگتیں کم سے کم کریں اور اپنی آمدن بڑھائیں جس سے صنعت میں مزید سرمایہ کاری کرنے کی ترغیب پیدا ہوگی۔
اس سے قبل سیمپوزیم میں ٹھوس فضلے کے انتظام و انصرام کے روایتی اور جدید طریقوں پر مختلف ماحولیاتی اور تحقیقی اداروں کے سولہ ماہرین نے اپنی اپنی پریزنٹیشنز پیش کیں ماہرین نے ٹھوس فضلے اور کوڑا کرکٹ کے پھیلاؤ کے مسئلہ کو کس طرح آمدن کے مواقع میں تبدیل کرنے، کچرے کی آخری آرام گاہ یعنی لینڈ فل سائٹ کی تعمیر و انتظام، برقی(کمپیوٹر و موبائل فون) کچرے کے ماحول دوست انتظام، اور مذکورہ مسئلے کے حل کے لیے مختلف اداروں میں باہمی رابطہ بڑھانے جیسے اہم امور پر سیر حاصل گفتگو کی۔
 
     
 
Proposal to review Sindh Environmental Act 2014 approved

An advisory review body to be set up within a week

Body to meet first in Advisor’s office next week

Murtaza Wahab addresses a ceremony at KCCI

KARACHI (February 3): Barrister Murtaza Wahab, Spokesperson to the Government of Sindh and Advisor to the Chief Minister on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development, has approved a proposal given by the Karachi business community to review Sindh Environmental Protection Act 2014. However, he said that the business community should cooperate in the implementation of the Sindh government's environmental protection agenda and promote the recycling of goods and biodegradable plastic bags. The business community should abandon prohibited plastic bags and promote disposable and environmentally friendly plastic bags to make the ban on buying, selling, manufacturing, and use more effective.
Addressing the inaugural session of a two-day symposium organized by the Karachi Chamber of Commerce and Industry (KCCI) on the topic of “Integrated Solid Waste Management”, the Environmental Adviser Murtaza Wahab said that the ban on non-degradable plastic bags was enacted last year. The Sindh Environmental Protection Agency (EPA) has launched a full-fledged legal campaign to make it effective and action has been taken against the violators in this regard. However, during the lockdown to prevent corona, the said campaign turned milder that will now be resumed. He asked the business community to discourage the delivery, sale, and manufacture of prohibited plastic bags at all levels to eliminate the basis for its supply in the markets.
Secretary Environment, Climate Change, and Coastal Development Department, Government of Sindh Muhammad Aslam Ghauri, and Director General Sindh Environmental Protection Agency Naeem Ahmad Mughal were also present on the occasion.
Approving Zubair Motiwala's suggestion from the business community for a review of Sindh Environmental Protection Act 2014, the Adviser said the government has no qualms if the business community wants to make further suggestions for effective enforcement of the laws. As we all know that the main purpose of this law is to ensure sustainable development in Sindh through prevention of environmental pollution and protection, preservation, rehabilitation, and improvement of the environment, no one should object to this point. He directed the Secretary of Environment to set up a review committee within a week and said that the first meeting of the committee would be held in his office within a week after its formation.
He said that due to unwarranted interrogation and round-ups, the performance of government agencies has been tarnished. Before launching a new project, any agency thinks many times that in case of failure, it is not accused of corruption. Our accountability agencies are waiting for an officer to make a mistake and when they start questioning him.
Murtaza Wahab said that this is why the process of development has been limited and no government agency likes to move towards innovative methods and new ideas because it knows that in case of failure, the sincerity of its intentions will be questioned. Terming a miscalculation outright malicious is tantamount to blocking the path to far-reaching development. He said that mistakes are made by those who work in new ways for better results. Those who don’t commit mistakes follow the herd instinct.
He called on the business community to invest in recycling so that used items could be exploited to control the growing garbage menace and minimize the increase in waste. He further said that the Sindh Government is also going to legislate in this regard so that maximum incentives and facilities can be given to the recycling industry.
Replying to a question, Murtaza Wahab said that all the taxes paid by the traders go to the federal exchequer. Despite this, the Sindh Government, through its resources, approved the repair and construction of 11 roads in the site industrial area. The first tranche of funds in this regard will be released soon.
Asked about rising inflation in the province, Murtaza Wahab said it was true that it was the responsibility of the provinces to curb unjustified inflation. But all commodities whose raw materials’ costs including electricity and gas charges are so higher. How can the prices of goods and services made from such raw materials come down due to the increase in prices? No trader will sell anything below cost, so the federal government should focus on lowering the prices of the factors of production. Costs that are controlled by the Federation should be brought to a reasonable level so that the provincial governments can bring the prices of goods and services made from them to an acceptable level.
He termed the Prime Minister's contact with the people by telephone as a publicity stunt, while referring to the Prime Minister's statement that Sindh is not his own, the Environmental Adviser said that Sindh should not be his because the people of Sindh are democrats, principled and supportive of truth and right. So how come they should be of a selected Prime Minister.
Earlier, Secretary Environment, Climate Change, and Coastal Development Department, Government of Sindh Muhammad Aslam Ghauri while speaking on the occasion said that the Karachi Chamber of Commerce and Industry plays a key role in running the industrial and commercial wheel of the country. In all the avenues of industry and trade of the country it has a central position, he said, adding that it is important to know how to support the government in environmentally friendly management of solid waste, and the efforts of KCCI in this regard by holding this event are commendable.
Leading business leaders Zubair Motiwala and Shariq Vohra also spoke on the occasion.
 
     
  سندھ کے ماحولیاتی قانون کے از سرنو جائزے کی تجویز منظور

کراچی کے تاجروں کی درخواست پر مشیر ماحولیات کی جائزہ کمیٹی تشکیل دینے کی ہدایت

محکمہ ماحولیات ایک ہفتے میں کمیٹی کا اطلاع نامہ(نوٹیفیکیشن) جاری کرے گا

جائزہ کمیٹی کا پہلا اجلاس اگلے ہفتے مشیر ماحولیات کے دفتر میں ہوگا

مرتضی وہاب کا کراچی چیمبر آف کامرس میں خطاب

کراچی: حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب نے کراچی کی تاجر برادری کی جانب سے دی گئی سندھ کے ماحولیاتی قوانین کے ازسر نو جائزے کی تجویز منظور کرتے ہوئے محکمہ ماحولیات کو اس مقصد کے لیے مشترکہ جائزہ کمیتی کی تشکیل کی ہدایات موقع پر ہی جاری کردیں تاہم انہوں نے کہا کہ تاجر برادری حکومت سندھ کے ماحولیاتی تحفظ کے ایجنڈا پر عملدرآمد میں تعاون کرے اور اشیاء کے اعادہ استعمال(ری سائیکلنگ) کے فروغ اور پلاسٹک بیگز کی خرید و فروخت، تیاری اور استعمال پر لگائی ہوئی پابندی کو موثر بنانے کے لیے تاجر برادری ممنوع پلاسٹک بیگز ترک کرتے ہوئے قابل تلف اور ماحول دوست پلاسٹک بیگز کو فروغ دے۔
ایون صنعت و تجارت کراچی کی جانب سے ٹھوس فضلہ ٹھکانے لگانے کے ہم آہنگ نظام کے موضوع پر منعقدہ دو روزہ سیمپوزیم کے افتتاحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے مشیر ماحولیات مرتضی وہاب نے کہا کہ گزشتہ سال ناقابل تحلیل پلاسٹک کی تھیلیوں پر لگائی گئی پابندی کے نفاذ کو موثر بنانے کے لیے ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ(سیپا) بھرپور قانونی مہم چلا چکا ہے اور اس ضمن میں خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف کارروائیاں بھی کی جاتی رہی ہیں تاہم کورونا کی روک تھام کے لیے لگائے گئے لاک ڈاؤن کے دوران مذکورہ مہم میں تعطل آگیا تھا جسے اب دوبارہ شروع کیا جائیگا۔ انہوں نے تاجر برادری سے کہا کہ ممنوعہ پلاسٹک بیگز کی ترسیل، فروخت اور تیاری کی ہر سطح پر حوصلہ شکنی کریں تاکہ اس کی مارکیٹوں میں ترسیل کی بنیاد کا ہی خاتمہ ہوجائے۔
سیکریٹری ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی حکومت سندھ محمد اسلم غوری اور ڈائریکٹر جنرل ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ نعیم احمد مغل بھی تقریب میں موجود تھے۔
سندھ کے ماحولیاتی قانون کے از سر نو جائزے کے لیے مشیر ماحولیات نے تاجر برادری کی جانب سے زبیر موتی والا کی دی ہوئی تجویز منظور کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کو کوئی قباحت نہیں اگر تاجر برادری مذکورہ قوانین کے موثر نفاذ کے لیے مزید تجاویز دینا چاہتی ہے، کیونکہ اس قانون کا بنیادی مقصد سندھ میں ماحولیاتی آلودگی کی روک تھام اورماحول کے بچاؤ، حفاظت، بحالی اور بہتری کے ذریعے پائیدار ترقی کو یقینی بنانا ہے، اس نکتہ پر کسی کو بھی کوئی اعتراض نہیں ہونا چاہیے۔ انہوں نے سیکریٹری محکمہ ماحولیات کو ایک ہفتے میں جائزہ کمیٹی کے قیام کی ہدایات دیتے ہوئے کہا کہ کمیٹی کی تشکیل کے بعد ہفتے بھر میں اس کا پہلا اجلاس ان کے دفتر میں ہوگا۔
انہوں نے کہ کہ بلاوجہ کی پوچھ تاچھ اور پکڑ دھکڑ کی وجہ سے سرکاری اداروں کی کارکردگی گہنا کر رہ گئی ہے، کوئی بھی ادارہ نیا منصوبہ شروع کرنے سے پہلی کئی بار سوچتا ہے کہ ناکامی کی صورت میں کہیں اس پر بدعنوانی کا الزام تو نہیں لگ جائے گا، کیونکہ ہمارے ہاں کے احتسابی ادارے اس انتظار میں رہتے ہیں کہاں کوئی افسر غلطی کرے اور کب اس سے پوچھ تاچھ شروع کردی جائے۔
مرتضی وہاب کا کہنا تھا کہ اسی وجہ سے ترقی کا عمل محدود ہوکر رہ گیا اور کوئی بھی سرکاری ادارہ نئے طریقوں اور نئے آئیڈیاز کی طرف جانا تک پسند نہیں کرتا کیونکہ اسے معلوم ہوتا ہے کہ ناکامی کی صورت میں اس کی نیت ہی پر شک کیا جانے لگے گا، حالانکہ غلط اندازے کو یکسر بدنیتی قرار دینا دور رس ترقی کے راستے بند کردینے کے متراف ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ غلطی وہ کرتا ہے جو بہتر نتائج کے لیے نت نئے طریقوں سے کام کرتا ہے، جو غلطی نہ کرے اس کا مطلب ہے کہ وہ بھیڑ چال کا شکار ہے۔
انہوں نے تاجر برادری سے کہا کہ وہ اشیاء کے اعادہ استعمال(ری سائیکلنگ) کے لیے سرمایہ کاری کریں تاکہ کوڑا کرکٹ کے بڑھتے ہوئے افریت کو قابو میں کرنے کے لیے استعمال شدہ اشیاء کو کام میں لایا جائے اور کچرے میں اضافے کو کم سے کم سطح پر لایا جاسکے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس سلسلے میں حکومت سندھ بھی قانون سازی کرنے جارہی ہے تاکہ اعادہ استعمال کی صنعتوں کو زیادہ سے زیادہ مراعات اور ترغیبا ت دی جاسکیں۔
مرتضی وہاب نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ تاجروں کی ادا کی گئی تمام محصولات اور مال گزاریاں وفاقی خزانے میں جاتی ہیں تاہم اس کے باوجود حکومت سندھ نے اپنے ذرائع سے سائٹ انڈسٹریل ایریا کی گیارہ سڑکوں کی مرمت و تعمیر کے لیے منظوری دے دی ہے اور اس ضمن میں فنڈز کی پہلی قسط بھی بہت جلد جاری کردگی جائے گی۔
صوبے میں بڑھتی ہوئی گرانی کے حوالے سے پوچھے گئے سوال پر مشیر ماحولیات مرتضی وہاب نے کہا کہ یہ بات درست ہے کہ بلاجواز مہنگائی کی روک تھام صوبوں کی ذمہ داری ہے، تاہم وہ تمام اشیاء جن کے خام مال کی قیمتیں بجلی اور گیس کی لاگتوں میں اضافے کے باعث آسمان پر پہنچ چکی ہیں ایسے خام مال سے بنائی گئی اشیاء و خدمات کی قیمتیں کیونکر کم ہوسکتی ہیں، کوئی بھی تاجر لاگتوں سے کم قیمت پر کوئی چیز فروخت نہیں کرے گا، اس لیے وفاقی حکومت کو چاہیے کہ ذرائع پیداوار کی وہ لاگتیں جن کی قیمتوں کا کنٹرول وفاق کے پاس ہے، انہیں معقول سطح پر لائے تاکہ صوبائی حکومتیں ان سے بنائی گئی اشیاء و خدمات کی قیمتوں کو بھی قابل قبول سطح پر لاسکیں۔
انہوں نے بذریعہ ٹیلی فون عوام سے وزیر آعظم کے رابطے کو ایک ڈھونگ قرار دیا اور کہا ایسے کام سستی شہرت حاصل کرنے کے سوا کچھ بھی نہیں، جبکہ وزیر آعظم کے سندھ کو اپنا نہ سمجھنے کے بیان کے حوالے سے مشیر ماحولیات نے کہا کہ سندھ کو ان کا ہونا بھی نہیں چاہیے کیونکہ سندھ کے عوام جمہوریت پسند، اصول پرست اور سچ اور حق کا ساتھ دینے والے ہیں وہ کیسے دستی انتخاب(ہینڈ پکڈ) کے ذریعے بننے والے وزیر آعظم کے اپنے ہوسکتے ہیں۔
اس سے قبل سیکریٹری ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی محمد اسلم غوری نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ایوان و صنعت و تجارت کراچی ملک کا صنعتی و تجارتی پہیہ چلانے میں کلیدی کردار ادا کرتا ہے اور ملک کے تمام ایون ہائے صنعت و تجارت میں مرکزی مقام رکھتا ہے، ان کا کہنا تھا کہ کوڑے کرکٹ اور ٹھوس فضلے کے ماحول دوست انتظام میں حکومت کا کیسے ساتھ دیا جائے یہ جاننا بہت ضروری ہے اور اس حوالے سے کے سی سی آئی کی یہ کاوش لائق تحسین ہے۔
تقریب سے معروف تاجر رہنماء زیبر موتی والا اور شارق وہرہ نے بھی خطاب کیا۔
 
     
  ماحولیاتی قوانین کی عدم تعمیل پر سیپا کی کار سازوں کو سرزنش

کراچی: نعیم احمد مغل ، ڈائریکٹر جنرل ، ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) نے آٹوموبائل سیکٹرز کے یونٹس بشمول کی آ موٹرز (یونس اینڈ برادرز گروپ)
اور ماسٹر موٹرز (گروپ آف ماسٹر انڈسٹری) کا آج 02 فروری کو اپنی ٹیم کے ساتھ دورہ کیا اور ان کی ماحولیاتی قوانین کی تعمیل کی سطح کا باریک بینی سے معائنہ کیا.
کی آ موٹرز کے دورے کے موقع پر سیپا کی ٹیم نے کمپنی کی پیداواری سرگرمیوں سے ہونے والے ماحولیاتی اثرات کی تشخیص کرانے کے بعد کی شرائط کی تکمیل کو بھی چیک کیا اور اس کی انتظامیہ کو پانی بچانے کے پائیدار طریقوں پر عمل کرنے کی تاکید کی اور کوڑا کرکٹ ٹھکانے لگانے کا نظام موثر بنانے کے ساتھ ساتھ ناگزیر آلودگیوں کو ان کی حدود میں رکھنے کی بھی ہدایات دیں.
ماسٹر موٹرز کے دورے کے دوران دیکھا گیا کہ کمپنی سندھ کے ماحولیاتی قانون 2014 کی شق 17 کی خلاف ورزی کررہی ہے جبکہ اپنی بنیادی سرگرمیوں میں بھی ماحولیاتی قواعد و ضوابط کی پاسداری نہیں کی جارہی تھی جس پر ڈی جی سیپا نے برہمی کا اظہار کیا اور کمپنی کو اپنے ماحولیاتی معاملات کی درستگی کا حکم دیا.اور اپنی صفائی میں کچھ کہنے کا موقع دیتے ہوئے کمپنی انتظامیہ کو اپنے دفتر طلب کرلیا.
سیپا ٹیم نے ڈی جی خان سیمنٹ کی ذخیرہ گاہ کا بھی دورہ کیا اور دھول کے اخراج کی روک تھام ٹھیک طرح سے نہ کرنے پر کمپنی کی انتظامیہ کو ذاتی شنوائی کا موقع دیتے ہوئے اپنے دفتر طلب کرلیا.
سیپا ٹیم نے دیگر صنعتوں کا بھی دورہ کیا اور انہیں ماحولیاتی قوانین پر عمل کرنے کی سختی سے تاکید کی بصورت دیگر انہیں قانونی کارروائی کی بھی پیشگی وارننگ دی.
 
  SEPA rebukes car makers for not complying with green laws

KARACHI: Naeem Ahmed Mughal, Director General, Sindh EPA visited different
Automobile industrial units namely M/s. Kia Motors (Yunus & Brothers Group)
(YBG) and M/s. Master Motors (Group of Master Industry) today on 02nd February
2021 for checking their environmental issues in view of compliance of Sindh
Environmental Protection Act-2014 and its Rules.
During site visit of M/s. Kia Motors for checking the compliance of
Environmental Impact Assessment (EIA) decision. During the discussion with the
management of M/s. Kia Motors and status of compliance of Environmental
Laws, Director General, SEPA passed the direction to management for adoption
water conservation practices and zero discharge practices for the sustainable use
of water, effective management of solid waste management system and
pollution measures are taken for the improvement of the environmental condition at the
plant.
Moreover, during a site visit of M/s. Master Motors it was observed that the
M/s. Master Motors didn’t follow the Environmental Impact Assessment (EIA)
process and engaged in the violation of Section 17 of Sindh Environmental
Protection Act-2014. Similarly, operational activities of M/s. Master Motors
also carried out in non-compliance with SEP Act-2014 and its Rules. DG, SEPA
showed displeasure on the management of M/s. Master Motors with regard their
environmental issues and non-compliance of SEP Act-2014 and continuously
engaged in the violation of SEP Act-2014 and call upon the hearing to explain
their position concerning the violation of SEP Act-2014.
Sindh EPA team visited the newly constructed Coal Yard of the DG Khan
Cement Factory, at the coal storage yard, the SEPA team observed insufficient
measures arrangements that leading a high concentration of dust emissions/
particulate matters in the ambient environment and management called for
Personal Hearing. In addition to this, DG, SEPA also thoroughly visited
different industrial units of Port Qasim area and they were communicated must
follow the Environmental Laws and its Rules. On their failure to comply, stern
action shall be taken against the violators under SEP Act-2014.
 
  Plastic manufacturers call on Secretary Environment

Need stressed to discourage use of unsafe plastics

Curbs on sale of banned plastic bags at wholesale level urged

KARACHI: A high-level delegation of Pakistan Plastic Manufacturers Association met Secretary Environment Climate Change and Coastal Development Muhammad Aslam Ghauri at his office here on Tuesday during which matters about harmful plastic bags illegal shipment in Sindh from outside the province; need to introduce plastic scrap in road construction to get rid of it in an environmentally friendly manner, as well as a plan to stop the wholesale sale of prohibited plastic bags were discussed in detail.
In his opening remarks, the Secretary Environment said that the dependence on plastic items in daily life has become excessive, while very few people know that once the plastic is produced, it can never be eliminated. It is also a fact that it will take time to stop using harmful plastic items altogether, but as an immediate substitute, a plastic that can be disposed of safely can significantly reduce the risks to the environment.
The Environment Secretary also said that the implementation of the ban on thin and small plastic bags in Sindh had been halted due to the complete and subsequent partial lockdown of the Corona epidemic in previous months. Instructions are being issued for its effective implementation so that the use of non-biodegradable plastic bags in the province can be stopped and only biodegradable and environmentally friendly plastic bags can be used.
Earlier, the members of the delegation of the Plastic Manufacturers Association expressed their concern over the illegal shipment of raw materials for banned plastic bags from other provinces in the province, saying such raw materials cost ten times less than local environmentally friendly raw materials. Domestic plastic bag producers make their products from those that are available in the market at very cheap prices that retailers buy on a preferential basis. This will be continuing, they apprehended, as long as the ban on banned plastic bags was effectively enforced. Given the ban in place, there is no scope for the consumption of such environmentally unfriendly raw materials, but for some time now its use has increased due to lack of restraint.
They also said that a ban on wholesale sales would have to be enforced to curb the sale of illicit plastic bags to nip the evil in the bud. Also, retail plastic bag makers are operating under small setups in the residential areas for which government needs to have an extensive monitoring network to access them which government does not have.
The delegation members said that in neighboring countries, to get rid of plastic waste a certain amount of it is being melted down and used in road construction, which would make the roads more durable as they are waterproof than cement roads. That is why there is a need to encourage the use of plastic waste in the construction of the roads in Pakistan as well.
Apart from the Chairman Plastic Manufacturers Association Ehteshamuddin, the delegation included former Chairman Imran Ghani, Secretary-General Rashid, Vice President Rashid Aziz, and Member, Shoaib Munshi, while Additional Secretary Environment Raees Ali Jafari, Spokesperson of Environment Department Mujtaba Baig, and Section Officer Environment Abdul Latif Sanjarani was also present.
 
  سیکریٹری ماحولیات سے پلاسٹک سازوں کے نمائندوں کی ملاقات

دیگر صوبوں سے ممنوعہ پلاسٹک بیگز کے خام مال کی سندھ میں ترسیل پر اظہار تشویش

پلاسٹک کا کچرہ سڑکوں کی تعمیر میں استعمال کرنے کی تجویز

ممنوعہ پلاسٹک بیگز کی تھوک کی سطح پر فروخت رکوانے کی درخواست

کراچی: پاکستان پلاسٹک مینوفیکچررز ایسوسی ایشن کے ایک اعلی سطح وفد نے آج یہاں منگل کے روز سیکریٹری ماحولیات موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی حکومت سندھ محمد اسلم غوری سے ان کے دفتر میں ملاقات کی جس دوران صوبے میں نقصان دہ پلاسٹک بیگز کی بیرون صوبہ سے آمد رکوانے کے معاملے کے علاوہ استعمال شدہ پلاسٹک سے ماحول دوست چھٹکارہ پانے کے لیے اسے سڑکوں کی تعمیر میں متعارف کرانے پر بات چیت کی گئی اور ساتھ ہی ساتھ ممنوعہ پلاسٹک بیگز کی تھوک کی سطح پر فروخت رکوانے کے لائحہ عمل پر بھی غور کیا گیا۔
اپنے ابتدائی کلمات میں سیکریٹری ماحولیات نے کہا کہ روزمرہ زندگی میں پلاسٹک کی اشیاء پر دارومدار حد سے زیادہ بڑھ گیا ہے، جبکہ بہت کم لوگ یہ بات جانتے ہیں کہ پلاسٹک ایک بار پیدا کردیا جائے تو اس کے بعد اسے کبھی ختم نہیں کیا جاسکتا اور یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ نقصان دہ پلاسٹک سے بنی اشیاء کا استعمال یکسر ترک کرنے کے لیے عرصہ درکار ہوگا تاہم ایسا پاسٹک جسے تلف کیا جاسکتا ہو بطور نعم البدل اس کے سے ماحول کو لاحق خطرات میں کافی حد تک کمی لائی جاسکتی ہے۔
سیکریٹری ماحولیات نے یہ بھی کہا کہ سندھ میں پتلے اور چھوٹے پلاسٹک بیگز پر عائد پابندی پر عملدرآمد پر تسلسل میں گزشتہ دنوں کورونا کی وباء روکنے کے لیے لگائے گئے مکمل اور بعد ازیں جزوی لاک ڈاؤن کے باعث کچھ تعطل تو ہوا تھا تاہم اس پر دوبارہ موثر عملدرآمد کے لیے ہدایت جاری کی جارہی ہیں تاکہ صوبے میں ناقابل تلفی پلاسٹک بیگز کے استعمال کو ترک کیا جاسکے اور صرف قابل تلفی اور ماحول دوست پلاسٹک بیگز کے استعمال کی اجازت ہو۔
اس سے قبل پلاسٹک مینوفیکچررز ایسوسی ایشن کے وفد نے صوبے میں دیگر صوبوں سے ممنوع پلاسٹک بیگز کے خام مال کی غیر قانونی آمد پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ایسا خام مال مقامی ماحول دوست خام مال کے مقابلے میں دس گنا کم قیمت ہوتا ہے اور گھریلو سطح پر پلاسٹک کی تھیلیاں بنانے والے انہی سے اپنی مصنوعات بناتے ہیں جو بازار میں نہایت سستے داموں دستیاب ہوتی ہیں جنہیں خوردہ دکاندار ترجیحی بنیادوں پر خریدتے ہیں، جب تک ممنوعہ پلاسٹک بیگز پر لگائی گئی پابندی پر موثر عملدرآمد کرایا جارہا تھا اس وقت تک تو ایسے ماحول دشمن خام مال کی کھپت کی گنجائش نہیں تھی تاہم کچھ عرصہ سے اس کا استعمال زیادہ روک ٹوک نہ ہونے کے باعث بڑھ گیا ہے۔
انہوں نے یہ بھی کہا کہ ممنوعہ پلاسٹک بیگز کی فروخت رکوانے کے لیے تھوک کی سطح پر پابندی پر عملدرآمد کرانا ہوگا، کیونکہ خوردہ سطح پر پلاسٹک بیگز بنانے والے گلی محلوں میں یہ کام کررہے ہیں جن تک رسائی کے لیے نگرانی کے وسیع نیٹ ورک کی ضرورت پیش آئے گی جو حکومت کے پاس موجود ہونا ممکن نہیں ہے۔
وفد کے اراکین نے بتایا کہ پڑوسی ممالک میں پلاسٹک کے کچرے سے چھٹکارہ پانے کے لیے اسے پگھلا کر اس کی مخصوص مقدار سڑکوں کی تعمیر میں استعمال کی جارہی ہے جس سے سڑکیں سیمنٹ کی بنی سڑکوں کے مقابلے میں واٹر پروف ہونے کے باعث زیادہ پائیدار ہوتی ہیں اس لیے پاکستان میں بھی پلاسٹک کے کچرے سے چھٹکارے کے لیے سڑکوں میں اس کے استعمال کی حوصلہ افزائی کی ضرورت ہے۔
وفد میں پلاسٹک مینوفیکچررز ایسو سی ایشن کے چیئرمین کے علاوہ سابق چئیر مین عمران غنی، سیکریٹری جنرل راشد، نائب صدر راشد عزیز اور ممبر شعیب منشی شامل تھے، جبکہ اجلاس میں ایڈیشنل سیکریٹری ماحولیات رئیس علی جعفری، ترجمان محکمہ ماحولیات مجتبی بیگ اور سیکشن آفیسر ماحولیات عبدالطیف سنجرانی بھی شریک تھے۔
 
     
  ڈائریکٹر جنرل انوائرمنٹل پروٹیکشن ایجنسی سندھ جناب نعیم احمد مغل کی خصوصی ہدایات کے تحت سیپا کی ٹیم نے خمیسو گوٹھ ، کراچی میں آج بروز منگل کو ماحولیاتی قوانین کی خلاف ورزی کرنے والی فیکٹریوں کے خلاف سندھ انوائرنمنٹل پروٹیکشن ایکٹ 2014 کے تحت کاروائی کی ، تفصیلات کے مطابق اس علاقے میں واقع جو انڈسٹریل یونٹس بغیر کوئی ویسٹ واٹر ٹریٹمینٹ پلانٹ لگائے کام کر رہے ہیں اور جو انڈسٹریل یونٹس کسی بھی طرح کی ماحولیاتی آلودگی کے مرتکب پائے جائیں گے ان کے خلاف آگے بھی سیپا ایکٹ 2014 کے تحت قانونی کاروائی کی جائے گی ،اس ضمن میں آج جب ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ کی مانیٹرنگ ٹیم جب متعلقہ علاقے میں پہنچی تو اس کو اپنی کاروائی کے دوران مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا لیکن اس کے باوجود مقامی پولیس کے تعاون سے سے ادرہ تحفظ ماحولیات کی ٹیم نے صنعتی عمل کے تحت پیدا ہونے والے مضر صحت پانی یعنی کہ ویسٹ واٹر کے سیمپل لینے کے عمل کو یقینی بنایا اور ماحولیاتی قوانین کی خلاف ورزی کرنے والے عناصر پر یہ بات واضح کی کہ ان کے خلاف مزید قانونی کارروائی بھی کی جائے گی، واضح رہے کہ ڈائریکٹر جنرل انوائرمنٹل پروٹیکشن ایجنسی سندھ جناب نعیم احمد مغل کی یہ واضح ہدایات ہیں کہ ماحولیاتی قوانین کی خلاف ورزی کرنے والے تمام عناصر کے خلاف مربوط اور منظم کاروائی کی جاے تاکہ قدرتی ماحول کے تحفظ کو یقینی بنایا جا سکے  
  CDA to launch public ferry service for cruises

KARACHI: To provide Pakistanis with affordable sea voyages, the Coastal Development Authority (CDA) Government of Sindh should soon complete the basic survey as well as identify recreational places on the inland sea and for shuttling of people over there launch a ferry service with the participation of the private sector so that Pakistanis can also enjoy such coastal entertainment while staying in the country for which they currently have to go abroad.
This was stated by the Spokesperson Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab while addressing a high-level meeting on Coastal Development.
The meeting was attended by the Secretary Environment, Climate Change and Coastal Development Department, Government of Sindh Muhammad Aslam Ghauri, and Director General Coastal Development Authority (CDA) Government of Sindh Riaz Ali Abbasi besides other senior officials.
Coastal Development Adviser said that to provide healthy recreational opportunities to the citizens, it is necessary to utilize land resources as well as marine resources so that the people can go to various small islands in the sea and realize that nature has blessed us with such invaluable picnic resorts. With just a little care, we can make them world-class tourist destinations.
Murtaza Wahab further said that the Coastal Development Authority should also involve the private sector in the efforts of maritime tourism development so that the coastal strip of Sindh, which is rich in natural resources, can be developed for the economic development of the province and the country.
He also said that as soon as the initial cruise facility is launched, given the pressure of public demand, many private sector investors will come forward to expand maritime tourism in the area, which will not only provide employment to the locals but it will also help in further enhancing the positive image of Pakistan on the world horizon.
Murtaza Wahab further said that maritime tourism in the world is called the blue economy through which the developed countries earn millions of dollars in foreign exchange annually. Therefore, as a developing country, it is important that we also use these valuable resources to make the most of our economy.
 
 
Wahab visits leather industries cluster


Emphasizes on solarizing tanners treatment plant

Vows action against tanneries not treating their wastewater

Also plants saplings on green belt

KARACHI: If the combined effluent treatment plant of the leather industry in Korangi Industrial Area is converted to solar energy, it will not only save electricity but also significantly reduce the cost per gallon of wastewater treatment of leather industry; reducing the overall cost of leather products will also increase their competitiveness in global markets. As a result, increased sales will increase domestic revenue in the form of foreign exchange.
These views were expressed by Barrister Murtaza Wahab, Spokesperson to the Government of Sindh and Advisor to the Chief Minister Sindh on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development on the occasion of tree plantation with representatives of Pakistan Tanners Association (PTA) at the Green Belt in Korangi Industrial Area Sector 7A.
He said that the capacity of the said treatment plant also needs to be enhanced so that the fixed cost would remain the same for treating more wastewater so that the cost per unit would also decline. It would significantly reduce the environmental cost to the industries for treating their wastewater which eventually will benefit the consumers.
Murtaza Wahab directed the representatives of the association that if any member industry instead of discharging its wastewater through the combined plant releases directly into the drain, they should immediately complain about it with the Sindh Environmental Protection Agency so that the violator can be prosecuted according to the law.
On this occasion, Murtaza Wahab along with PTA chief Gulzar Feroze also planted trees on the green belt and assured him of all possible help from the Sindh Government in solving the environmental problems of the leather industry.
Chairman Planning and Development Department, Government of Sindh Muhammad Waseem and Deputy Commissioner Korangi were also present on the occasion.
 
     
  مشیر ماحولیات مرتضی وہاب کا چمڑہ سازی کے صنعتی علاقے کا طوفانی دورہ

چمڑے کی صنعتوں کو مشترکہ ٹریٹمنٹ پلانٹ شمسی توانائی پر لانے کی تاکید

جو صنعت آبی فضلہ ٹریٹ نہ کرائے اس کے خلاف کارروائی کی یقین دہانی

مرتضی وہاب نے علاقے کے گرین بیلٹ پر پودے بھی لگائے

کراچی: پاکستان کی چمڑہ سازی کی صنعتوں کے کورنگی انڈسٹریل ایریا میں لگے مشترکہ ٹریٹمنٹ پلانٹ کو شمسی توانائی سے چلایا جائے تو نہ صرف اس سے بجلی کی بچت ہوگی بلکہ چمڑے کی صنعتوں کا آبی فضلہ ٹریٹ کرنے کی فی گیلن لاگت میں بھی خاطر خواہ کمی آئے گی جس سے چمڑے کی مصنوعات کی مجموعی لاگت بھی کم ہونے سے ان کی عالمی منڈیوں میں قوت مسابقت بڑھے گی نتیجتا" فروخت بڑھنے سے زر مبادلہ کی صورت میں ملکی آمدن میں اضافہ ہوگا.
ان خیالات کا اظہار حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب نے پاکستان ٹینرز ایسوسی ایشن (پی ٹی اے)کے نمائندوں کے ساتھ کورنگی انڈسٹریل ایریا سیکٹر سیون اے میں قائم گرین بیلٹ پر شجرکاری کے موقع پر کہی.
انہوں نے کہا کہ مذکورہ ٹریٹمنٹ پلانٹ کی استعداد بھی بڑھانے کی ضرورت ہے تاکہ زیادہ آبی فضلہ ٹریٹ کرنے کے دوران فکسڈ لاگتیں بدستور یکساں رہنے سے فی یونٹ لاگت یکساں رہے گی جس سے اپنا آبی فضلہ ٹریٹ کرانے والی صنعتوں کو ماحولیاتی لاگتوں کی مد میں کافی بچت ہوسکتی ہے.
مرتضی وہاب نے ایسوسی ایشن کے نمائندوں کو ہدایت دی کہ اگر کوئی رکن صنعت مشترکہ پلانٹ سے اپنا فضلہ ٹریٹ کرانے کی بجائے اسے براہ راست نالے میں بہائے تو فورا" اس کی شکایت ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ کو کی جائے تاکہ اس کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کی جاسکے.
اس موقع پر مرتضی وہاب نے پی ٹی اے کے سربراہ گلزار فیروز کے ہمراہ گرین بیلٹ پر پودے بھی لگائے اور انہیں چمڑہ سازوں کے ماحولیاتی مسائل کے حل میں حکومت سندھ کی جانب سے ہر ممکن مدد کا یقین دلایا.
اس موقع پر چئیرمین محکمہ منصوبہ بندی و ترقیات حکومت سندھ محمد وسیم اور ڈپٹی کمشنر کورنگی بھی موجود تھے
 
  Ban on setting up new factory without treatment plant

Decision to tighten industrial and construction pollution prevention laws

Wahab vows to make province a hub of sustainable development

KARACHI: Sindh Government's spokesperson and Adviser to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab has said that setting up of new factories without treatment plants would not be allowed across the province as there is no point in such development at the cost of irreparable damage to our natural environment.
In a high-level review meeting on provincial environmental laws with Secretary Environment, Climate Change and Coastal Development Department Government of Sindh Muhammad Aslam Ghauri and Director General Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) Naeem Ahmad Mughal, the Environmental Adviser said that to speed up the implementation of laws, they should be framed in such a way that no delay occurs in their implementation and those who spread pollution cannot escape from them.
He said that to ensure sustainability in industrial and construction development, amendments should be made in the relevant provisions of the Sindh Environmental Protection Act to make them more effective and bring more transparency in their implementation to keep the wheel of development going with no disturbance in the protection of the environment.
In this regard, he directed DG SEPA to immediately formulate guidelines for the treatment of industrial wastewater so that there would be no delay in the process of disposal of industrial effluent.
He added that the aspect of environmental self-accountability should also be kept in mind as much as possible, however, the role of SEPA in law enforcement should be gradually enhanced.
He expressed satisfaction that with the access of environmental monitoring to more or less all the districts of the province has been enabled, while industrialists and builders are also being encouraged to bring sustainability in their business affairs, the positive effects of which will soon begin to appear on the ground.
The Environmental Adviser said that the capacity of SEPA's environmental monitoring and law enforcement sections should be further enhanced and through their joint efforts, environmental violations should be dealt with indiscriminately.
Murtaza Wahab added that the framework for enforcing environmental laws should be structured in such a way that no ambiguity or complication arises at any level during implementation so that there is no conflict or any unnecessary misunderstanding between law enforcers and those who are being enforced.
He said that our industries and our construction sector are playing an important role in the development of the province and the Government of Sindh is providing them all possible facilities in this regard so that the private and public sectors together work for the province and our country to make it a hub of sustainable development.
 
     
  ٹریٹمنٹ پلانٹ کے بغیر نئی فیکٹری لگانے پر پابندی عائد

صنعتی و تعمیراتی آلودگی کی روک تھام کے قوانین مزید سخت کرنے کا فیصلہ

مشیر ماحولیات کا صوبے کو پائیدار ترقی کا گہوارہ بنانے کا عزم

کراچی: حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون, ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب نے کہا ہے کہ صوبے بھر میں ٹریٹمنٹ پلانٹ کے بغیر نئی فیکٹری لگانے پر پابندی ہوگی کیونکہ ایسی ترقی کا کوئی فائدہ نہیں جس کی ماحولیاتی لاگت ناقابل تلافی ہو.
سیکریٹری ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی حکومت سندھ محمد اسلم غوری اور ڈائریکٹر جنرل ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ نعیم احمد مغل کے ساتھ صوبائی ماحولیاتی قوانین پر اعلی سطحی جائزہ اجلاس میں مشیر ماحولیات نے کہا کہ قوانین کے نفاذ میں تیزی لانے کے لیے ضروری ہے کہ ان کی تشکیل ہی اس طرح ہو کہ ان کے نفاذ میں کوئی تاخیر نہ ہو اور ان سے آلودگی پھیلانے والے بچ نہ سکیں.
ان کا کہنا تھا کہ صنعتی و تعمیراتی ترقی میں پائیداری یقینی بنانے کے لیے سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول کی متعلقہ شقوں میں اس طرح کی ترامیم کی جائیں کہ وہ مزید موثر ہوں اور ان کے نفاذ میں مزید شفافیت آئے ساتھ ہی ساتھ ترقی کا پہیہ بھی چلتا رہے اور ماحول کی حفاظت میں بھی کوئی خلل نہ آئے.
انہوں اس ضمن میں ڈی جی سیپا کو ہدایات دیں کہ صنعتوں کا آبی فضلہ ٹریٹ کرنے کے فوری طور پر رہنماء اصول وضع کئے جائیں تاکہ صنعتی فضلہ ٹھکانے لگانے کے عمل میں کسی قسم کی ٹال مٹول کا کوئی امکان نہ رہے.
انہوں نے مزید کہا کہ ماحولیاتی خود احتسابی کے پہلو کو بھی زیادہ سے زیادہ ملحوظ خاطر رکھا جائے تاہم قوانین کے نفاذ میں سیپا کا کردار بھی بتدریج بڑھایا جاتا رہے.
انہوں نے اس امر پر اطمینان کا اظہار کیا کہ ماحولیاتی نگرانی کی رسائی صوبے کے کم و بیش تمام اضلاع تک ہوجانے سے صنعت کار و معمار بھی اپنے تجارتی امور میں پائیداری لانے کی جانب راغب ہورہے ہیں جس کے مثبت اثرات بہت جلد نمودار ہونے لگیں گے.
مشیر ماحولیات کا کہنا تھا کہ سیپا کے ماحولیاتی نگرانی اور نفاذ قانون کے شعبہ جات کی استعداد مزید بڑھائی جائے اور ان کی مشترکہ کوششوں کے ذریعے ماحولیاتی خلاف ورزیوں پر بلاتفریق فوری کارروائی کی جائے.
مرتضی وہاب نے مزید کہا کہ ماحولیاتی قوانین کے نفاذ کے ڈھانچے کی تشکیل اس طرح سے ہونی چاہئے کہ نفاذ کے دوران کسی بھی سطح پر کوئی ابہام یا پیچیدگی نہ ہو تاکہ قانون نافذ کرنے والوں اور جن پر نفاذ ہورہا ہے ان کے مابین کسی قسم کی بلاوجہ کی باہمی غلط فہمی نہ ہو.
ان کا کہنا تھا کہ ہماری صنعتیں اور ہمارا تعمیراتی شعبہ صوبے کی ترقی میں اہم کردار ادا کررہا ہے اور حکومت سندھ انہیں اس حوالے سے ہر ممکن سہولیات فراہم کررہی ہے تاکہ نجی و سرکاری شعبے مل جل کر صوبے اور ہمارے ملک کو پائیدار ترقی کا گہوارہ بناسکیں
 
     
  Dalda Foods CEO meets Secretary Environment

Mr Faisal Sabzwari Chief Executive Officer of Dalda Foods Limited and Abdul Rasheed Jan Mohammd Director Dalda Foods Limited called on Secretary Environment, Climate Change and Coastal Development Department Government of Sindh Muhammad Aslam Ghouri at his office and discussed the various matters pertaining to successfully experimented oilpalm test project of Government of Sindh.
 
  Issue date: 25-12-2020

SEPA stops unloading of soya beans at KPT

KARACHI: The Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) has acted on the instructions of Sindh Chief Minister's Adviser on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab in the light of its preliminary investigation into air pollution in Keamari and under Section 21 of the Sindh Environmental Protection Act 2014, the transfer of cargo from a ship laden with soya beans on berth No. 11 and 12 to the port has been stopped.
During a visit on Wednesday to the port, a high-level technical team of SEPA led by Director General Naeem Ahmed Mughal, found soya beans unloading was polluting the air with large amounts of particulate matter (PM) and soyabean dust.
Orders were issued to KPT on the spot to immediately stop the transfer of soya beans from the ship. Subsequently a written order was also issued late night on Wednesday.
SEPA team also found that satisfactory safety measures were not being taken by the KPT staff to control the dust and PM emissions while transfering the cargo.
In this regard, the Environment Adviser Barrister Murtaza Wahab said in a statement, citing the SEPA report, that the apparent soyabean transfer seems to be the cause of air pollution in the area.
He added that the foreign ship had arrived at the port carrying 67,000 tonnes of soy beans, which has been stopped from transfering it to the port.
KPT staff informed the SEPA team that out of 67000 tonnes, 15000 tonnes had already been unloaded from the ship.
Residents around Kemari were reportedly affected by its emissions during the referred cargo transfer.
He said that KPT authorities have been directed to immediately stop its unloading from the ship.
It should be noted that under the Sindh Environmental Protection Act, SEPA can stop any activity that has harmed, is harming or likely to harm the environment.

 
  تاریخ اجراء 25-12-2020

سیپا نے جہاز سے سویا بین کی بندرگاہ منتقلی رکوادی

کراچی: ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا).نے وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون, ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایات پر فوری عمل کرتے ہوئے کیماڑی میں فضائی آلودگی کے معاملے پر اپنی ابتدائی تفتیش کی روشنی میں سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014 کی شق 21کے تحت برتھ نمبر 11 اور 12 پر لگے ہوئےسویا بین سے لدے بحری جہاز سے مال کی بندرگاہ میں منتقلی رکوادی ہے اور اس ضمن میں تحریری ہدایت بھی جاری کردی گئی ہے.
تفصیلات کے مطابق سیپا کی اعلی تیکنیکی ٹیم نے بدھ کو ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل کی سربراہی میں بندرگاہ کے دورے کے دوران دیکھا کہ سویا بین اتارتے ہوئے ذراتی مادوں (پارٹیکولیٹ میٹر) اور سویا دھول کی بڑی مقدار ہوا میں اڑکر فضاء کو آلودہ کررہی تھی اور کے پی ٹی نے فضائی ماحول کے بچائو کے تسلی بخش اقدامات بھی نہیں لیے تھے لہذہ موقع پر ہی کے پی ٹی کو جہاز سے سویا بین کی منتقلی فوری رکوانے کے زبانی احکامات جاری کردئیے گئے. جبکہ بعد ازیں تحریری ہدایت نامہ بھی بدھ کو رات گئے جاری کردیا گیا.
اس حوالے سے مشیر ماحولیات نے ایک بیان میں سیپا کی رپورٹ کے حوالے سے کہا ہے کہ بظاہر سویا بین کی منتقلی علاقے میں فضائی آلودگی کا سبب محسوس ہوتی ہے.
انہوں نے مزید کہا کہ غیر ملکی جہاز 67 ہزار ٹن سویا بین لے کر بندرگاہ پہنچا تھا جس سے سویا بین کی منتقلی کا عمل رکوا دیا گیا ہے
رپورٹ کے مطابق سویا بین کی منتقلی کے دوران گرد اڑنے سے کیماڑی کے اطراف میں رہائشی متاثر ہو رہے تھے.
انہوں نے بتایا کہ کے پی ٹی حکام کو جہاز سے سویا بین کی منتقلی فوری روکنے کی ہدایت کر دی گئی ہے.
سیپا کی ٹیم کو موقع پر موجود کے پی ٹی کے عملے نے بتایا تھا کہ جہاز سے کل 67 ہزار میٹرک ٹن میں سے پندرہ ہزار ٹن سویا بین اتارا جاچکا تھا
واضح رہے کہ سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول کے تحت سیپا ہر اس سرگرمی کو رکوا سکتا ہے جس سے ماحول کو نقصان ہوگیا ہو, ہورہا ہو یا ہونے کا خدشہ ہو.
 
  SEPA raids coal importers' godowns

KARACHI: To curb the menace of soot and dust emissions, a monitoring team of Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) headed by its Director General Naeem Ahmed Mughal visited on Wednesday different godowns of coal importers in Bin Qasim Induatrial Area and found most of them were not following prescribed SoPs of coal handling and transportation.
The coal yards/godowns visited by SEPA team were Maple Leaf Cement Coal Godown, Fareed Contractor Godown, Awan Trading Co, Lucky Commodities Coal Warehouse, Sardar Coal Godown which were importing & storing coal unsafely in the limits of Port Qasim.
It may be mentioned that coal stocks if not handled with safety precautions, by and large, cause air pollution in the form of contamination of ambient air more particularly with particulate matter and dust leading their high concentration of soot in the air environment. Resultantly, they deteriorate air quality of the surroundings to an intolerable limit that cause respiratory diseases and other health problems to the people of the vicinity.
During his random visit, DG SEPA along with District Incharge Muneer Ahmed Abbasi and field team of District Malir confirmed that insufficient measures were being taken in coal handling and its transportation. Consequently, notices were issued to all coal importers, industrial users of coal as fuel and transporters to immediately adopt safe practices for mitigation measures for the control of dust emissions and particulate matters.
In addition to this, it was also noticed that thousand of trucks/ dumpers were being moved from the vicinity of Port Qasim Authority (PQA) to the city and upcountry for transportation of coal. SEPA under its mandate will keep ensuring to minimize emissions from coal through fool proof transportation to prevent air pollution from such activities.
Restriction will also be imposed on smoke emitting coal-carrying transport that they must adopt safe practices with regard to controlling the coal emissions during its transportation.
Moreover, coal material littering due to unsafe handling and transportation mechanism will also be checked and perpetrators of such violations will be dealt with iron hand.
SEPA will keep taking strict action against coal handlers to persuade them adopt best management practices regarding handling of coal in an environment friendly manner in Karachi city and also throughout the Province of Sindh.
SEPA will also coordinate more vigorously with District Administration and Police Department for seeking assistance to deal with such matters more strictly. In addition, directions were also issued by DG, SEPA for removal of illegal dumping of coal, so that the health of the nearby inhabitants can be saved from this menace.
 
  کوئلہ درآمدکنندگان کے گوداموں پر سیپا کا چھاپہ

کراچی: کالک اور دھول کے اخراج کو روکنے کے لئے ، ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) کے ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل کی سربراہی میں سیپا کی مانیٹرنگ ٹیم نے بدھ کے روز بن قاسم صنعتی ایریا میں کوئلے کے درآمد کنندگان کے مختلف گوداموں کا اچانک دورہ کیا اور دیکھا کہ ان میں سے بیشتر کوئلے سے برتاو اور نقل و حمل کے مجوزہ طریق کار پر عمل نہیں کررہے تھے.
جن گوداموں کا دورہ کیا گیا ان میں میپل لیف سیمنٹ کوئلہ گودام ، فرید کنٹریکٹر گودام ، اعوان ٹریڈنگ کمپنی ، لکی کموڈٹیز کوئلہ گودام ، سردار کوئلہ گودام شامل ہیں جو پورٹ قاسم کی حدود میں کوئلہ غیر محفوظ طریقے سے درآمد اور اسٹور کررہے تھے۔
واضح رہے کہ کوئلے کے ذخیرے اگر زیادہ سے زیادہ حفاظتی احتیاطی تدابیر کے ساتھ رکھے اور لائے لیجائے نہ جائیں تو وہ فضائی آلودگی میں بڑھاوے کا باعث بنے ہیں خاص طور پر چھوٹے ذرات اور دھول کی وجہ سے فضاء کالک زدہ ہوجاتی ہے۔ جس سے آس پاس کا ماحول ناقابل برداشت حد تک خراب ہوجاتا ہے اور آس پاس کے لوگوں کے لیے سانس لینا دشوار ہونے کے ساتھ ساتھ تنفس کی متعدد بیماریوں اور دیگر صحت کی پریشانیوں کا خطرہ کئی گنا بڑھ جاتا ہے۔
اپنے دورے کے دوران ، ڈی سیپا نے ڈسٹرکٹ انچارج منیر احمد عباسی اور ضلع ملیر کی فیلڈ ٹیم کے ہمراہ اس بات کی تصدیق کی کہ کوئلے کے برتاو اور اس کی آمدورفت میں ناکافی حفاظتی اقدامات کیے جارہے ہیں۔ اس کے نتیجے میں ، کوئلہ کے تمام درآمد کنندگان ، کوئلے کے صنعتی صارفین اور ٹرانسپورٹروں کو نوٹسز جاری کیے گئے تاکہ وہ دھول کے اخراج پر قابو پانے اور متعلقہ معاملات کے لئے تخفیف کے اقدامات فوری لیتے ہوئے محفوظ طریقے اختیار کریں۔
اس کے علاوہ ، دورے کے دوران یہ بھی دیکھا گیا کہ ہزاروں ٹرک / ڈمپر پورٹ قاسم اتھارٹی (پی کیو اے) کے آس پاس سے شہر اور دیگر علاقوں کے لیے کوئلے کی نقل و حمل میں مصروف تھے۔
سیپا اپنے دستوری فرائض کے تحت فول پروف ذرائع نقل و حمل کے ذریعے کوئلے سے خارج ہونے والے اخراج کو کم سے کم کرنے کو یقینی بنائے گا تاکہ فضائی ماحول کو اس طرح کی سرگرمیوں سے بچایا جاسکے۔
بغیر احتیاطی تدابیر کے کوئلہ لانے لیجانے والی ٹرانسپورٹ کو بھی پابند کیا جائے گا کہ وہ کو نقل و حمل کے دوران کوئلے کے اخراج پر قابو پانے کے سلسلے میں محفوظ طریقے اختیارکریں۔
مزید یہ کہ غیر محفوظ طریقے سے ہینڈلنگ اور نقل و حمل کے طریقہ کار کی وجہ سے کوئلے سے پھیلنے والی گندگی کو بھی جانچا جائے گا اور ایسی خلاف ورزی کرنے والوں کو آہنی ہاتھ سے نمٹا جائے گا۔
کوئلہ غیر محفوظ طریقوں سے سنبھالنے والوں کے خلاف سیپا سخت کارروائی کرتا رہے گا تاکہ وہ کراچی شہر اور پورے صوبہ سندھ میں ماحول دوست انداز میں کوئلے سے نمٹنے کے حوالے سے بہترین انتظامات کو اپنائیں۔
اس طرح کے معاملات کو مزید سختی سے نمٹنے میں تعاون کے لیے سیپا ضلعی انتظامیہ اور پولیس محکمہ کے ساتھ مزید بھر پور طریقے سے رابطہ کرے گی۔ اس کے علاوہ ڈی جی سیپا کی جانب سے کوئلے کی غیر قانونی ڈمپنگ کو ختم کرنے کے لئے بھی ہدایات جاری کی گئیں ، تاکہ قریبی رہائشیوں کی صحت کو اس کی تباہی سے بچایا جاسکے۔
 
     
 
*Investors showing interest in palm farming*
Visit palm fruit crop in Thatta
KARACHI: Domestic and foreign investors have started showing interest in the recently introduced palm farming sector after satisfactory results in its trial production of palm fruit in Thatta due to the efforts of Sindh Government's Department of Environment, Climate Change and Coastal Development.  
According to details, in addition to a well-known local edible oil company, a delegation of local traders and the Malaysian embassy visited the Sindh government's 50-acre Palm Fruit Orchard in Kathore Thatta, to assess the quality of the fruit and the suitability of the soil
The delegation of the investors along with Secretary Environment, Climate Change and Coastal Development, Govt of Sindh Muhammad Aslam Ghauri also visited the Palm Oil Mill set up by the Sindh government and inspected its production process.
Expressing satisfaction over the quality and conducive production environment in the region, they were of the view that the region has excellent investment opportunities in palm cultivation and palm oil production which should be fully utilized by the global and local business community.
On the occasion, the Environment Secretary informed the delegation that Sindh  has crossed an important milestone through its successful experiment of palm cultivation. This project will play a key role in the prosperity of Pakistan and hopefully will meet the domestic demand for palm oil to a great extent.  
It may be recalled that the Sindh Government's Environment Department had a year ago planted a trial crop of 50 acres of palm fruit in the Kathore area of ​​Thatta, which was found to meet international standards, after which it was decided to take immediate measures to expand its cultivation in the area to reach its production potential.  
Subsequently, global and local investors are being warmly welcomed to cultivate palm on arable land of maximum area so that the sector can be given the status of a local industry taking full advantage of its productive potential, after which there is a strong possibility that annual domestic demand for palm oil worth Rs. 4 billion will not only be met locally but Pakistan will also be able to export surplus produce.
 
     
     
  مٹیاری میں صوبائی محتسب کے ہمراہ سیپا ٹیم کا اینٹوں کے بھٹوں کا دورہ

مٹیاری۔ محتسب اعلی سندھ جناب اکرم سعید کے ہمراہ ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ حیدرآباد ریجن کے انچارج عمران علی عباسی اور ضلعی انچارچ مٹیاری ڈپٹی ڈائریکٹر( قانون)قطب الدین درس نے ماحولیاتی انسپیکٹروں کے ساتھ ضلع مٹیاری اور اس کے گردونواح میں اینٹوں کے بھٹوں کا دورہ کیا اور ماحولیاتی خلاف ورزی کے مرتکب بھٹہ مالکان سے سخت بازپرس کی.
تفصیلات کےطابق محتسب اعلی سندھ اور سیپا ٹیم نے مٹیاری شہر اور اس کے گردونواح میں قائم اینٹوں کے بھٹوں میں استعمال ہونے والے ایندھن کاجائزہ لیا اور ممنوعہ قرار دی گئی اشیاء کے استعمال کی تصدیق ہونے پراینٹوں کے بھٹوں کے مالکان پر سخت برہمی کا اظہار کیا اس موقع پرسیپا کے ضلعی انچارچ مٹیاری قطب الدین درس نے بتایا کہ محتسب اعلی کی موجودگی میں اینٹوں کے بھٹہ مالکان کو سختی سے تنبیہ کی گئی ہے کہ وہ بھٹوں پر ماحول دوست ایندھن کا استعمال کریں اور اس میں کپڑا،کچرا،پلاسٹک وغیرہ استعمال نہ کریں اور اپنے بھٹوں کو قانون کے مطابق بنائیں ماحولیاتی قوانین کے تحت چلائیں بصورت دیگر سخت قانونی کاروائی بشمول بھٹوں کی بندش کے ساتھ ساتھ انہیں جیل بھی جانا پڑے گا. اس سلسلے میں پہلے ہی سیپا ریجنل آفس حیدرآباد نے سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014 کی خلاف ورزی پر 5 بھٹوں کے مالکان کے خلاف کورٹ میں مقدمات داخل کردیے ہیں جو کہ فضائی آلودگی کا سبب بن رہے تھے۔

ترجمان ۔محکمہ ماحولیات ، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی حکومت سندھ۔
 
  SEPA summons heads of KDA, DMC Korangi and KATI

KARACHI:.The Director General, Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) Naeem Ahmed Mughal called the Director General, Karachi Development Authority (KDA); Chairman, Korangi Association of Trade and Industry (KATI).Limited and Administrator DMC, Korangi for personal hearing under Section 21(1) of Sindh Environmental Protection Act-2014, due to their inadequate arrangements of environmental pollution control system.
According to details, DG SEPA has made a surprise visit today (Monday) along with field team of District Korangi.
He visited different industrial & residential areas of District Korangi and taken serious notice on overflow of wastewater from storm drainage/ nalas at main Korangi Road. The said wastewater which ultimately reaches into the marine ecosystem was causing significant pollution load and adverse environmental impacts on aquatic environment of Arabian sea.
DG, SEPA also visited different spots of Korangi residential area where unauthorized dumping of solid waste and its burning was observed which ultimately was deteriorating the air quality of the city.
SEPA team observed that KDA constructed a road without taking due measures of managing dust emissions which was deteriorating the air quality of the surrounding area.
It was also noticed that KATI Limited was lying a pipe line and as a result huge heaps of soil was present adjacent to main Korangi Road causing mismanagement of soil waste.
In view of above violations, the heads of KDA, KATI and DMC Korangi were served on notices to appear in person before DG SEPA to explain their position before taking a legal action against them.
 
     
  Training Workshop on Climate Change Reporting

Climate change adaptation framework in Sindh on anvil: Aslam Ghauri

KARACHI: Provincial Secretary of Environment, Climate Change and Coastal Development Department Muhammad Aslam Ghauri has said that professional consultation on climate change policy of Sindh province is in final stage after which the policy implementation structure under the Environment Department in the province will be established. It will help accelerate the systematic and coordinated efforts to address important issues related to climate change through mutual cooperation.
Addressing as a special guest at the training workshop on “Climate Change Reporting in Digital Age” organized by Frederick Naumann Foundation simultaneously at Karachi and Islamabad via video link, the Provincial Secretary Environment said that the tragedy is that climate change is one of the few issues that has been committed by someone else while someone else is suffering and added that as we see that Pakistan is one of the ten countries that are facing the most adverse effects of this issue. While the role of Pakistan in creating it globally is not that much noticeable.
He said that realizing the gravity of the problem, timely steps are being taken in Pakistan and especially in Sindh province, the fruits of which will soon be seen. But there is also a pressing need to inform the public through the media about the gravity of the problem. We need to make sure that our per capita carbon emissions are kept to a minimum and the impacts of climate change do not exceed tolerable levels.
He added that concerted efforts are needed to draw public attention to climate change and environmental pollution so that serious environmental violations can be prevented by law on the one hand and on the other hand people are persuaded to change their attitudes and practices for a better environment.
Referring to eco journalism on the subject of climate change, Aslam Ghauri said that the beat of climate change in Pakistan is not as popular as that of any other field, but in today's digital age, it is slowly gaining ground. Is also being noticed, which is a welcome step forward for overall environmental improvement.
Appreciating the FNF's training workshop, the Environment Secretary said that in order to increase public awareness and meet the sustainable economic requirements, the overall focus on this issue is deepening. However, there must be a consensus among the people on the perception of the problem. Therefore, in order to solve the problem of climate change, we must first acknowledge its delicacy and seriousness, and in this regard, raise public awareness about climate change. I think the media can play a key role in this regard, he remarked.
From Islamabad, the head of FNF Pakistan, Birgit Lamm, well-known environmental columnist Aafia Salam and Amir Amjad also addressed the gathering. Later, Chief Guest Muhammad Aslam Ghauri distributed complementary certificates among the trained journalists. On this occasion, Sikandar Baloch the Media Consultant of Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab, leading environmental journalist Shabina Faraz and Spokesperson of Environment Department Mujtaba Baig were also present.

 
موسمیاتی تبدیلی کی پالیسی مشاورت کے آخری مراحل میں ہے؛ اسلم غوری

خبرنگاری برائے موسمیاتی تبدیلی پر منعقدہ ورکشاپ سے سیکریٹری ماحولیات کا خطاب

کراچی: صوبائی سیکریٹری محکمہ ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی محمد اسلم غوری نے کہا ہے کہ صوبہ سندھ کی موسمیاتی تبدیلی کی پالیسی پر حتمی مشاورت آخری مراحل میں ہے جس کے بعد اس کی منظوری ملتے ہی صوبے میں محکمہ ماحولیات کے تحت پالیسی پر عملدرآمدی ڈھانچے کے قیام کے لیے کام شروع کردیا جائے گا تاکہ موسمیاتی تبدیلی جیسے اہم مسئلے کو باہمی اشتراک سے حل کرنے کے لیے منظم و مربوط کوششوں میں تیزی لائی جاسکے۔
عالمی ماحولیاتی انجمن فریڈرک نیومان فاونڈیشن کی جانب سے ڈیجیٹل عہد میں موسمیاتی تبدیلی پر خبرنگاری کے موضوع پر ویڈیو لنک کے ذریعے کراچی اور اسلام آباد میں بیک وقت منعقد ہ تربیتی ورکشاپ سے بطور مہمان خصوصی خطاب کرتے ہوئے صوبائی سیکریٹری ماحولیات نے کہا کہ المیہ یہ ہے کہ موسمیاتی تبدیلی ان چند مسائل میں سے ایک ہے جس کا ارتکاب کسی اور نے کیا جبکہ خمیازہ کوئی اور بھگت رہا ہے جیسا کہ ہم دیکھ رہے ہیں کہ پاکستان ان دس ممالک کی فہرست میں شامل ہے جنہیں اس مسئلے کے مضر اثرات کا سب سے زیادہ سامنا کرنا پڑرہا ہے جبکہ اسے پیدا کرنے میں عالمی سطح پر پاکستان کا کردار نہ ہونے کے برابر ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ مسئلے کی سنگینی کو بھانپتے ہوئے پاکستان اور خاص طور پر صوبہ سندھ میں بروقت اقدامات لیے جارہے ہیں جن کے ثمرات عنقریب دکھائی دیں گے، تاہم ضرورت اس بات کی بھی ہے کہ میڈیا کے ذریعے عوام کو اس مسئلہ کی سنگینی کا احساس دلایا جائے تاکہ ہمارے ہاں بھی فی کس کاربن کا اخراج کم سے کم ہوسکے اور موسمیاتی حدت قابل برداشت حد سے تجاوز نہ کرسکے۔
انہوں نے مزید کہا کہ عوامی توجہ موسمیاتی تبدیلی اور ماحولیاتی آلودگی کی جانب مبذول کرنے کے لیے ہمہ جہت کوششوں کی ضرورت ہے تاکہ ایک جانب سنگین ماحولیاتی خلاف ورزیوں کو بذریعہ قانون روکا جاسکے جبکہ دوسری جانب ماحول دوست طرز زندگی اختیار کرنے کے لیے عوام کو اپنے رویوں اور عمل میں تبدیلی لانے پر قائل کیا جاسکے۔
ماحولیاتی اور موسمیاتی تبدیلی کے موضوع پر صحافت کے حوالے سے اسلم غوری نے کہا کہ پاکستان میں موسمیاتی تبدیلی کی بیٹ (beat) کو اتنی پذیرائی حاصل نہیں جتنی کہ دیگر ہر دلعزیز شعبہ جات کو حاصل ہے تاہم آج کے ڈیجیٹل دور میں آہستہ آہستہ اس شعبے کے جانب بھی رخ کیا جارہا ہے جو مجموعی ماحولیاتی بہتری کے لیے ایک خوش آئندہ پیش قدمی ہے۔
: فریڈرک نیومان فاونڈیشن کی جانب سے تربیتی ورکشاپ کے انعقاد کو سراہتے ہوئے سیکریٹری ماحولیات نے کہا کہ عوامی شعور میں اضافے اور پائیداراقتصادی تقاضے پورے کرنے کے لیے اس موضوع پر مجموعی توجہ میں اضافہ ہورہا ہے مزید یہ کہ کسی بھی مسئلے کے حل کے لیے ضروری ہے کہ مسئلہ کے ادراک کے حوالے سے لوگوں میں ہم آہنگی ہو اسی لیے ہمیں موسمیاتی تبدیلی کے مسئلے کے حل کے لیے بھی سب سے پہلے اس کی نزاکت اور سنگینی کو تسلیم کرنا ہوگا اور اس ضمن میں موسمیاتی تبدیلی کے بارے میں عوامی شعور اجاگر کرنے میں میڈیا کا کلیدی کردار ہوسکتا ہے۔
اسلام آباد سے اس موقع پر فریڈرک نیومان فاونڈیشن پاکستان کی سربراہ بیرگٹ لیم، معروف ماحولیاتی کالم نگار عافیہ سلام اور عامر امجد نے بھی خطاب کیا۔ بعد ازیں مہمان خصوصی محمد اسلم غوری نے تربیت حاصل کرنے والے صحافیوں میں تکمیلی اسناد تقسیم کیں اس موقع پر وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کے میڈیا کنسلٹنٹ سکندر بلوچ، معروف ماحولیاتی صحافی شبینہ فراز اور ترجمان محکمہ ماحولیات مجتبیٰ بیگ بھی موجود ت
     
 
SEPA shuts down two plants of Exide Battery

Summons the administration to explain its position
KARACHI: Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) has shut down two Exide Battery's plants for handling hazardous chemicals unsafely and owing to other environmental violations.
According to details, following the directives of Sindh Government's Spokesperson and  Adviser to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab to continue indiscriminate action against the polluters, DG SEPA Naeem Ahmed Mughal along with his team paid a surprise visit to the Site Industrial Area. He was accompanied by Waris Gabol, Director, SEPA Karachi Region.
During the visit, it was observed that the chemicals containing sulfur gas in the Lead Smelting and Battery Manufacturing plants of the Exide Battery were kept open in the factory. It was also observed that fumes of lead were polluting the air and effluent was being released without any proper treatment over there.
Such carelessness is not only detrimental to the safety of land, air and aquatic environment but also poses a serious threat to factory workers and surrounding residents.
Therefore, in the interest of human health and environment, DG SEPA, exercising his power under sub-Section 3 of Section 21 of the Sindh Environmental Protection Act, 2014, issued directives to shut down the two units of the factory and summoned its management in his office today (Wednesday, December 9) for personal hearing to defend their position before further action is taken against them.

 
 
سیپا نے ایکسائید بیٹری کے دو پلانٹس بند کرادئیے

خلاف ورزی پر وضاحت کا موقع دیتے ہوئے انتظامیہ کی طلبی 

کراچی: ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) نے خطرناک زہریلا مواد کھلے بندوں غیرمحفوظ رکھنے اور دیگر ماحولیاتی خلاف ورزیوں پر ایکسائیڈ بیٹری کے دو پلانٹ بند کرادئیے.
تفصیلات کے مطابق حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون, ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی آلودگی کاروں کے خلاف بلاتقریق کارروائی جاری رکھنے کی ہدایت پر عمل کرتے ہوئے ڈی جی سیپا نعیم احمد مغل نے اپنی ٹیم کے ہمراہ سائٹ انڈسٹریل ایریا کا اچانک دورہ کیا. سیپا کراچی ریجن کے ڈائریکٹر وارث گبول بھی ان کے ہمراہ تھے.
دورے کے دوران دیکھا گیا کہ ایکسائیڈ بیٹری کے سیسہ پگھلانے اور بیٹریاں بنانے کے پلانٹس میں سلفر گیس رکھنے والے کیمیائی مادوں کو فیکٹری میں کھلے عام رکھا گیا تھا, سیسہ ملے دھویں کے مرغولے فضاء میں مل رہے تھے جبکہ آبی فضلہ کسی ٹریٹمنٹ کے بغیر بہایا جارہا تھا.
ایسی بے احتیاطیں نہ صرف زمینی, فضائی اور آبی ماحول کے لیے نقصان دہ ہیں بلکہ فیکٹری میں کام کرنے والے مزدوروں اور اطراف کے رہائشیوں کے لیے بھی سنگین خطرہ ہیں.
لہذہ انسانی صحت اور ماحولیاتی حفاظت کے مفاد میں ڈی جی سیپا نے سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014 کی دفعہ 21 کی ذیلی شق 3 کے تحت اپنا اختیار استعمال کرتے ہوئے فیکٹری کے مذکورہ دونوں یونٹس بند کرادئیے اور انتظامیہ کو اپنے دفاع میں کچھ کہنے کا موقع دیتے ہوئے آج (بدھ 9 دسمبر) اپنے دفتر طلب کرلیا.
 
     
 
SEPA closes down poultry farm on generating land pollution

KARACHI: On the directives of Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab, the monitoring team of Environmental Protection Agency Sindh (SEPA) has sealed a poultry farm in Malir district for its non-compliance with the mandatory environmental requirements.
According to the details, the team of SEPA Malir District during its routine environmental monitoring found out that a poultry farm operating under the name of MK Poultry in Murad Memon Goth of Malir District is violating concerned sections of Sindh Environmental Protection Act 2014 (SEP Act14) while raising and rearing activities of the chickens. Their waste was not being disposed of safely and there was no proper disposal of poultry feed remnants. In addition to generating solid waste in the area, it was also spreading unbearable odor and causing breathing difficulty for residents of the surrounding area.
The Malir District team headed by its in-charge Deputy Director Munir Abbasi took immediate action and sealed the poultry farm with the help of local police under Sub-section 2 of Section 21 of SEP Act14.
It should be noted that in accordance with Sub-section 40 of Section 2 of the SEP Act14, any manufacturing or production activity which causes the spread of any kind of pollution including waste and intolerable odor and continues despite the prohibition, then such activity can be stopped by the authorized officer of SEPA.


سیپا نے آلودگی پھیلانے پر پولٹری فارم بند کرادیا

کراچی: حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایات پر ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ(سیپا) کی مانیٹرنگ ٹیم نے ضلع ملیر میں واقع پولٹری فارم کو مرغیوں کی نشونما کے دوران ماحولیاتی تقاضے پورے نہ کرنے پر سیل کردیا۔ 
تفصیلات کے مطابق سیپا ضلع ملیر کی ٹیم نے اپنی معمول کی ماحولیاتی نگرانی کے دوران پتہ چلایا کہ ضلع ملیر کے مراد میمن گوٹھ میں ایم کے پولٹری کے نام سے کام کرنے والا مرغبانی کا مرکز چوزوں کی نگہداشتی اور نشونماء کی سرگرمیوں کے دوران نہ مرغیوں کے فضلے کو محفوظ طریقے سے ٹھکانے لگار ہا تھا اور نہ ہی وہاں مرغیوں کی غذا کی باقیات کے مناسب انتظام کا کوئی بندوبست وجود تھا جس کی وجہ سے علاقے میں گندگی کے علاوہ چار سو ناقابل برداشت بو پھیل رہی تھی جس میں مکینوں کے لیے سانس تک لینا دشوار ہوتا جارہا تھا۔ 
ضلع ملیر کی ٹیم نے اپنے انچارج ڈپٹی ڈائریکٹر منیر عباسی کی سربراہی میں فوری ایکشن لیتے ہوئے سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014کی دفعہ اکیس کی ذیلی دفعہ دو کے تحت مقامی پولیس کی مدد سے مذکورہ پولٹری فارم سیل کردیا۔ 
واضح رہے کہ سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول   2014کی دفعہ دو کی ذیلی دفعہ چالیس کے مطابق ہر وہ پیداواری سرگرمی جو کسی بھی قسم کی آلودگی بشمول فضلے اور نا قابل برداشت بدبو کے پھیلاؤ کا سبب بنے اور پھیلاؤ منع کرنے کے باوجود جاری رہے تو ایسی سرگرمی کو سیپا کا مجاز افسر بند کراسکتا ہے۔ 

ترجمان
محکمہ ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی
حکومت سندھ
 
     
 
حدود سے زائد دھواں دینے والی161 گاڑیوں پر سیپا کے جرمانے

کراچی: ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ(سیپا) کی جانب سے گزشتہ دو ماہ کے دوران شہر کے مختلف مصروف مقامات و شاہراہوں پر کی جانے والی گاڑیوں کی چیکنگ کے دوران بائیس فیصد گاڑیاں صوبائی ماحولیاتی قانون کی خلاف ورزی کرتی پائیں گئیں جن پر ٹریفک پولیس کے توسط سے موقع پر ہی جرمانہ عائد کردیا گیا۔
حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایت پر سیپا شہر میں چلنے والی چھوٹی بڑی گاڑیوں کی مستقل نگرانی کررہا ہے۔
گاڑیوں کی ماحولیاتی نگرانی کے انچارج انجینئر صدا بخش کی سربراہی میں سیپا کی ٹیموں نے کراچی کے تمام اضلاع میں اکتوبر اور نومبر میں کل 729چھوٹی بڑی گاڑیوں بشمول، بسوں، کاروں، ویگنوں، رکشوں، ٹرکوں، ٹرالروں اور سوزوکیوں کی ماحولیاتی جانچ پڑتال کی جن میں سے 161گاڑیاں سندھ کے ماحولیاتی معیارات سے زائد دھواں دیتی پائی گئیں۔ 
جن مقامات پر گاڑیوں کی چیکنگ کی گئی ان میں جیل چورنگی، گرومندر، ڈرگ روڈ، ڈاک خانہ، نیپا چورنگی، کلفٹن، تین ہٹی، کے ڈی اے چورنگی، کریم آباد، صفورا چورنگی، قیوم آباد، شان چورنگی، طارق روڈ، سنگر چورنگی، شاہ فیصل کالونی، کراچی یونیورسٹی، حسن اسکوائر، پرانی سبزی منڈی، اسلامیہ کالج، فورکے چورنگی، سیرینا چورنگی، گولیمار چورنگی، لسبیلا، ڈیفنس موڑ اور قیوم آباد شامل ہیں۔ 
چیکنگ کے دوران گاڑیوں سے نکلنے والے دھویں میں خاص طور پر کاربن مونو آکسائید اور ہائیڈرو کاربن چیک کیا گیا اور جن 161گاڑیوں کے اخراج میں ان گیسوں کی مقدار زیادہ پائی گئی ٹریفک پولیس کی مدد سے موقع پر ہی ان پر کل ایک لاکھ اکسٹھ ہزار روپے جرمانہ عائد کیا گیا۔ 

SEPA fines 161 vehicles for emitting smoke
KARACHI: The Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) during its campaign of inspection of vehicles at various busy places and roads of the city during the last two months found that 22% of the vehicles were violating the provincial environmental law, which were penalized on the spot through Traffic Police. 
On the directives of Sindh Government Spokesman and Sindh Chief Minister's Adviser on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab, SEPA is constantly monitoring small and large vehicles plying in the city.
In October and November, a total of 729 small and large vehicles, including buses, cars, wagons, rickshaws, trucks, trailers, and suzukis, were inspected by SEPA teams in all districts of Karachi led by Engineer Sada Bakhsh, in-charge of environmental monitoring of vehicles. Out of them, 161 vehicles were found to be emitting smoke beyond the Environmental Quality Standards of Sindh.
The places where vehicles were checked include Jail Chowrangi, Gurmunder, Drig Road, Post Office, Napa Chowrangi, Clifton, Tin Hatti, KDA Chowrangi, Karimabad, Safora Chowrangi, Qayyumabad, Shaan Chowrangi, Tariq Road, Singer. Chowrangi, Shah Faisal Colony, Karachi University, Hassan Square, Old Sabzi Mandi, Islamia College, 4K Chowrangi, Serena Chowrangi, Golimar Chowrangi, Lasbela, Defense Mor and Qayyumabad.
During the inspection, carbon monoxide and hydrocarbon were specially checked in the smoke emitted from the vehicles, and the amount of these gases was found to be high in the emissions of 161 vehicles which were penalized to the tune of Rs161,000 with the help of traffic police. 
 
     
 
ڈی جی سیپا کا میرپورخاص ریجن کا دورہ

آلودگی کار شوگرمل اور ڈسٹلری انتظامیہ کو اپنے دفتر طلب کرلیا
شہر میں کچرے کی بدانتظامی پر بلدیہ میرپورخاص کے خلاف کارروائی کا حکم
میرپورخاص: وزیراعلی سندھ کے مشیر برائے قانون،ماحولیات،موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی خصوصی ہدایت پرادارہ تحفظ ماحولیات حکومت سند ھ (سیپا)کے ڈاٸریکٹر جنرل نعیم احمد مغل نے میرپورخاص جاکر العباس شوگر مل کے ٹریٹمینٹ پلانٹ و ڈسٹیلری کا دورا کیا ۔ دورے کے دوران انہوں نے شوگرمل کی چمنی سے نکلنے والے زہریلے دھوئیں کے اخراج پر مل مالکان کو سخت تنبیہ کی اور ٹریٹمنٹ پلانٹ سے صاف ہوکر نکلنے والے پانی کو دوبارہ استعمال کرنے کے احکامات دیے
 جبکہ ڈسٹیلری سے نکلنے والے خطرناک فضلے کو سائنٹیفک طریقے سے ٹھکانے نہ لگانے اور ڈسٹیلری سے نکلنے والے زہریلے پانی کوصاف ( ٹریٹ) نہ کرنے پر سیپا میرپورخاص کو سخت ایکشن لینے کا کہا اور مل مالکان کو 3  دسمبر کو سندھ انواٸرنمینٹل پروٹیکشن ایکٹ 2014 کے سیکشن 21 کے تحت ذاتی شنوائی کا نوٹس جاری کرنے کا سیپا میرپورخاص ریجن کوحکم دیا تاکہ پانی اور زمین کو آلودگی سے بچایا جا سکے اور ماحولیاتی قوانین کی پاسداری کو یقینی بنایا جا سکے  دریں اثناء انہون نے میرپورخاص یونیکول ڈسٹلری کا بھی دورا کیا اور وہان پرانہوں نے پریزنٹیشن لی جس میں یونیکول ڈسٹلری میں جو بھی ماحولیات کے لیے اقدامات کیے گئے ان کو زیر غور لایا گیا اور بعد ازاں یونیکال ڈسٹلری کے ویسٹ واٹر لگونس کا بھی دورہ کیا اور دیکھا کہ ماحولیاتی قوانین کی پاسداری ہو رہی ہے یا نہیں ۔جب کہ میرپور خاص شوگر مل سے نکلنے والے بڑی تعداد میں دھویں کے اخراج پرشوگر مل و ڈسٹیلری  انتظامیہ کو بھی 3  دسمبر کو ذاتی شنوائی کا نوٹس جاری کرنے کا حکم دیا۔میرپورخاص کے خصوصی دورہ کے دوران جرواری رنگ روڈ اور مختلف جگہوں پر جلتا ھوا کچرا اور مونسپل ویسٹ دیکھ کرسندھ انواٸرنمینٹل پروٹیکشن ایکٹ 2014کے تحت مونسپل انتظامیہ کے خلاف سخت کاروای کا حکم جاری کیا۔
 دورے کے دوران سیپا میرپورخاص کے ڈپٹی ڈاٸریکٹر محمد صھیب راجپوت اور اسٹنٹ ڈاٸریکٹر علی محمدرند و دیگر ان کے ہمراہ تھے ۔
ڈاٸریکٹرجنرل نے بتایا کہ ہم ماحولیاتی قانون کی پاسداری کو یقینی بنا رہے ہین اور اگر کوٸی بھی ان کی خلاف ورزی کرتے ہوٸے پایا گیا تو اس کے خلاف ہم سخت ترین کارواٸی کرینگے۔

ڈی جی سیپا کا ضلع مٹیاری میں شوگرمل اور ڈسٹلری کا اچانک دورہ 

ماحول دوست اقدامات نہ لینے پر مل انتظامیہ کی سیپا کے دفتر طلبی 

حیدرآباد:.ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) کے ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل نے سیپا حیدرآباد کے ریجنل انچارج ڈپٹی ڈائریکٹر(ٹیکنکل ) عمران علی عباسی اور ضلع انچارج مٹیاری اسسٹنٹ ڈائریکٹر (لاء) قطب الدین درس اور فیلڈ آفسیر نور احمد ناھیوں کے ہمراہ مٹیاری شوگر مل اور ڈسلری  کا اچانک دورہ کیا اور مٹیاری شوگر مل اور ڈسلری کی تفصیلی ماحولیاتی جانچ پڑتال کی.
حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون, ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایات پر آلودگی کی روک تھام کے لیے ڈی جی سیپا دستاویزی نگرانی کے ساتھ ساتھ وقتا" فوقتا" فیلڈ میں جاکر بھی ماحولیاتی نگرانی کرتے رہتے ہیں
شوگرمل اور ڈسٹلری میں صفائی کے ناقص انتظامات اور فضائی آلودگی کا سبب بنے والے دھوئیں  اورزہریلےپانی اور  فضلے کو صحیح طرح تلف نہ کرنے پر انہوں نے مل انتظامیہ پر سخت برہمی کا اظہار کیااور بروقت زہریلے  پانی کو کھیتوں میں جانے سے روکنے کے احکامات جاری کیے۔ادارہ تحفظ ماحولیات کے قانون سیپا ایکٹ 2014 پر عمل نہ کرنے پر شوگر مل اور ڈسلری انتظامیہ کوذاتی شنوائی کے لئے سیپا کے دفتر طلب کرلیا۔ اس موقع پر ڈی جی سیپا نعیم احمد مغل  نے ماحولیاتی قوانین کی پاسداری کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ صوبے کے ماحولیاتی قوانین پر عمل نہ کرنے والوں کے خلاف بلاتفریق قانونی کارروائی کی جائے گی
 
 
Decision to set up a laboratory to boost palm growth in Sindh

3000 acres of coastal lands will be utilized for palm cultivation: Wahab

KARACHI: The Governing Body of Coastal Development Authority (CDA), Government of Sindh – the apex decision making body on coastal areas of the province - has approved the establishment of palm trees nursery and tissue culture laboratory to further expand the palm cultivation and oil extraction project in coastal areas of Sindh.
The 16th Governing Body Meeting of CDA chaired by Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh for Law, Environment, Climate Change and Coastal Development (ECC&CD) Barrister Murtaza Wahab and was attended by its all key members including MPAs Muhammad Ali Malkani, MPA Ms. Shaheena Sher Ali, MPA Ali Hasan Zardari apart from Secretary ECC&CD Department Muhammad Aslam Ghouri and DG, CDA among various others. 
In his opening remarks, Advisor to CM Sindh on Coastal Development Barrister Murtaza Wahab has said that there is huge potential of saving and earning of foreign exchange reserves with the coastal areas of Sindh; the only need is to exploit them with a visionary mindset. Therefore, he said, in view of their monetary significance we already have successfully developed the pilot project of palm oil cultivation and extraction on 150 acres of land in the Kathore area of Thatta. “Subsequently with the unflinching efforts of the CDA officials and officers our mini palm oil mill has already started its production” he added. 
He further said that a chunk of 1500 acre land in the same area is being acquired from Forest Department, Government of Sindh while another 1500 at another spot in the same area will also be acquired in near future. Investors will be attracted by offering them maximum incentives to initiate their own projects of palm cultivation and its oil extraction to serve the local needs of one of the most multipurpose product for both consumption and industrial use. 
Secretary ECC&CD Department briefed the meeting about details of the recently executed pilot project of palm oil cultivation and oil extraction and said that another project for the establishment of palm plants nursery and tissue culture laboratory is also being developed to reap the production potential of palm oil from the coastal lands of the province. 
Sharing the palm fruit productive capacity of coastal areas of Thatta he said that on 1-acre land 60 palm trees are grown and each tree produces 12 bunches of palm having 10 kg weight which means a total 720 kg palm can be produced on an acre. This predicts that on the effective exploitation of the new experiment of Sindh Government a huge amount of palm can be produced indigenously to reduce our reliance on its import. 
It was also decided in the meeting to develop the 220 micro islands of Thatta as tourist resorts which will not only offer earning opportunities both locally and in foreign exchange but will also create job opportunities for the local populace. DG CDA was asked to start preparing the proposal of developing these islands in such a way that after obtaining its final approval from the Sindh Cabinet to eventually execute it smoothly without any unnecessary delay. 
On the proposal of MPA Ms. Shaheen Sher Ali, it was decided in the meeting that a delegation of the members of the Governing Body will also visit the project site to have the first-hand observation of the entire activity to give their precious ideas for its further improvement. 
Other development and non-development matters of CDA were also put up for the considering of the Governing Body which were approved subject to the fulfillment of their codal formalit

 
     
 
100 spots in Karachi will be monitored
KARACHI: In view of the growing public concerns regarding air environmental degradation of the urban and rural areas of the Sindh province, the Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) is planning to conduct an extensive air quality assessment survey of the whole province through its regional offices and with the help of certified private laboratories. 
Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development Barrister Murtuza Wahab has already directed the SEPA to come up with actual facts and figures regarding the air environment of the province so that viable corrective measures may be taken to improve the situation. 
In this regard, the Director General SEPA has recently conducted a deliberative meeting of the representatives of the certified environmental laboratories working in Sindh to take them on board in this exercise which will be commenced once all pre-survey arrangements are made accordingly. 
All the regional offices of SEPA including, Karachi, Hyderabad, Sukkur, Larkana, and Mirpurkhas and their subsequent District Incharges have also been alerted in this regard to earmark their human resources to conduct the subject activity in a befitting manner. 
The air quality of Karachi will be monitored with equally extensive efforts as quite recently a number of reports regarding the fall in its ambient air quality spaciously appeared in the print and electronic media. Therefore, it is expedient to monitor its air emissions and to analyze them scientifically to eventually check their deviation from standards in vogue.  
In Karachi, the air quality of more than 100 locations will be monitored based on different aspects like rush hours, industrial surroundings, depositions of smoke pockets, landfill sites, highways, wind corridors, traffic congestion areas, heavy industrial complexes, coal storage, and handling facilities, etc.
Likewise, owing to the likelihood of smog pollution in rural areas where a large number of brick kilns operate in different pockets and their emissions aggravate the air pollution by mixing up with fog in the winter season. Consequently, it affects visibility while driving more particularly in the morning hours. Therefore, air monitoring of rural areas will also extensively be conducted to examine if the smog is within the permissible limit or not. 
It may be recalled, that SEPA regional offices have recently conducted vigorous monitoring of brick kilns in most of the districts and strictly warned their owners to convert their brick baking procedure from conventional methods to zig-zag technology. 
The DG SEPA has reaffirmed its pledge to continue taking action without any discrimination against all such elements found involved in causing air pollution, which is apart from many other, one of the main causes of respiratory diseases and deaths all over the world. 

 
 
سیپا کا فضائی ماحول کے تجزیے کا فیصلہ
کراچی کے سو مقامات کے فضائی معیار کو پرکھا جائے گا

کراچی: ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ(سیپا) نے پورے صوبے بالخصوص شہر کراچی کے فضائی معیار کی گراوٹ کی درست سطح کاپتہ چلانے کے لیے صوبے بھر کے فضائی ماحول کی خصوصی نگرانی کا فیصلہ کیا ہے جس کے تحت پورے صوبے کے چھوٹے بڑے شہروں میں سیپا کی ٹیمیں جدید آلات سے فضاء کا معائنہ کریں گی جن کی روشنی میں حتمی اعداد و شمار مرتب کئے جائیں گے، اس سرگرمی میں سیپا کے علاقائی دفاتر کے ساتھ ساتھ مستند ماحولیاتی تجربہ گاہیں بھی شامل ہونگی۔ 
حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب اس سلسلے میں سیپا کو پہلے ہی ہدایات جاری کرچکے ہیں کہ پورے صوبے کے فضائی ماحول کا سائنسی جائزہ لینے کے بعد حتمی اعداد شمار جمع کئے جائیں تاکہ ان کی روشنی میں صورتحال کی درستگی کے لیے جامع اور بھرپور اقدامات لئے جائیں۔ 
اس حوالے سے سیپا کے ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل سندھ کی مستند ماحولیاتی تجربہ گاہوں کے نمائندگان کا اجلاس بھی کرچکے ہیں تاکہ مذکورہ سرگرمی میں انہیں بھی شانہ بشانہ رکھا جائے اور سب کی مربوط کوششوں سے جامع اعداد و شمار مرتب کئے جاسکیں۔ ابتدائی تیاری مکمل ہوتے ہی تمام علاقوں کے فضائی ماحول کی نگرانی شروع کردی جائے گی۔ 
اس ضمن میں سیپا کے علاقائی دفاتر بشمول کراچی، حیدرآباد، سکھر، لاڑکانہ اور میرپورخاص کے ساتھ ساتھ ضلعی دفاتر کو بھی ہدایات دی جاچکی ہیں کہ وہ اپنی افراد قوت کو مذکورہ سرگرمی کے لیے تیار رکھیں تاکہ بلا تاخیر اسے پایہ تکمیل تک پہنچایا جاسکے۔ 
واضح رہے کہ حال ہی میں کراچی کے فضائی ماحول کے حوالے سے میڈیا میں کافی تشویشناک خبریں سامنے آئی تھیں جنکی حساسیت کو دیکھتے ہوئے کراچی کے فضائی ماحول کی سائنسی بنیادوں پر بھرپور مانیٹرنگ کی جائے گی جس کے تحت کراچی کے سو مقامات پر فضائی ماحول کا جائزہ لیا جائے گا، ان مقامات کا انتخاب ٹریفک کے دباؤ، صنعتی علاقوں، لینڈ فل سائٹس، کوئلے کے ذخائر کی موجودگی، ہوا کے دباؤ والے علاقوں اور دیگر معمول سے ہٹ کر پیداواری سرگرمیوں والے علاقوں کی بنیاد پر کیا جائے گا۔
اسی طرح سردیوں کی آمد کے موقع پر سندھ کے بیشتر اندرون علاقوں میں اینٹوں کے بھٹوں سے نکلنے والے دھویں کے دھند میں مل جانے سے آلودہ دھند حدود سے زائد ہوجانے کا خدشہ بڑھ جاتا ہے، جس کے باعث حد نگاہ سکڑ جاتی ہے جو صبح کے وقت خاص طور پر ڈرائیونگ کے دوران خاصہ خطرناک ہوتا ہے، لہذٰہ سندھ کے اندرون شہروں کے فضائی ماحول کی یکساں شدت کے ساتھ نگرانی کی جائے گی تاکہ یہ دیکھا جاسکے کہ اینٹوں کے بھٹوں کے دھویں سے فضائی معیار کی گراوٹ قابل برداشت حد سے نیچے تو نہیں چلی گئی۔ 
یاد رہے کہ حال ہی میں سیپا کے علاقائی و ضلعی دفاتر نے ایسے اضلاع جہاں اینٹوں کے بھٹے زیادہ تعداد میں ہیں ان کی ماحولیاتی نگرانی مکمل کرلی ہے اور ایسے بھٹے جو اینٹیں پکی کرنے کے روایتی طریقوں پر عمل کررہے تھے انہیں فوری طور پر زگ زیگ ٹیکنالوجی اپنانے کے ہدایات دے دی گئی ہیں جس سے فضاء نسبتاً کم آلودہ ہوتی ہے۔
ڈی جی سیپا نعیم مغل نے اس حوالے سے اپنے عزم کا ایک بار پھر اعادہ کیا ہے کہ ایسے تمام عناصر جو کسی بھی قسم کی آلودگی پھیلانے میں ملوث پائے گئے ان کے خلاف سند ھ کے قانون برائے ماحولیات 2014کے تحت بلاتفریق کارروائی جاری رکھی جائے گی۔ 

ت
 
     
 
Sindh kick-starts maiden palm oil production in the country

Palm Oil Mill will produce 2T oil per day: Wahab
KARACHI: (November 18): The Government of Sindh has achieved another milestone of development by successfully executing its pilot project of palm oil production which was actually envisioned by Shaheed Mohtarma Benazir Bhutto during the first tenure of her government. 
The Palm Oil Mill under the administrative supervision of the Environment, Climate Change, and Coastal Development Department along with operational oversight of the Sindh Coastal Development Authority (CDA) has started palm oil production. It will help save billions of dollars of foreign exchange annually as, before this breakthrough, Pakistan’s demand for palm oil was met through importing it mainly from Southeast Asian countries.  
Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development (ECC&CD) Barrister Murtaza Wahab visited both Palm Oil Mill at Ghulamullah Town, Thatta, and Palm Oil Field on Tuesday along with Secretary ECC&CD Department Aslam Ghauri and DG CDA.
Talking to media persons on the occasion, Barrister Murtaza Wahab said that the Environment, Climate Change, and Coastal Development Department had planted 50 acres of palm trees in Thatta district. Alhamdulillah, palm trees have given record fruit which will produce 2 tons of palm oil per day. Barrister Murtaza Wahab said that Pakistan spends up to 4 billion dollars annually in its foreign exchange for the import of palm oil which is a huge amount. 
He further said that owing to our efforts, the Sindh Government has allocated more land for cultivation in Thatta district after the success of the pilot project of palm oil. Now more palm trees are being planted on 1500 acres of land. 
He informed the media that oil has started to be extracted from the fruits of palm trees which is our great achievement. He congratulated all the staff of the ECC&CD Department and SIDA on the success of the pilot project.
He also termed the cultivation of palm and production of oil from it as a game-changer and said that the experiment of palm oil production in Sindh is viable therefore it became successful and we are happy about it. He said that 1100 palm trees were planted on a trial basis. It is good news not only for Sindh but also for the people of Pakistan that the experience of palm cultivation and oil production has been successful. 
Barrister Wahab said that after Thar Coal, the Sindh Government's Palm Oil project will also prove to be glittering precedence of the progress through local resources. Palm cultivation and oil production will bring huge investment in Thatta district and will create job opportunities for thousands of families. 
He pointed out that this is the only and the first-ever project of its kind in Pakistan. Before this, no palm oil mill has been set up anywhere in the country. The saplings planted in the field were imported from China by the ECC&CD Department. 
Barrister Murtaza Wahab expressed his hope that like Thar Coal, this project would also provide employment to the local people. He gratefully said that the vision of PPP leadership and Chief Minister Sindh has been brought to fruition.

 
 
ملکی تاریخ میں پہلی بار سندھ میں پام آئل کی پیداوار شروع

کراچی(18 نومبر)حکومت سندھ کا تاریخ ساز منصوبہ، سندھ کے ساحلی علاقوں سے اچھی خبر، سندھ حکومت کا گیم چینجر آزمائشی منصوبہ کامیاب ہوگیا جس سے سالانہ اربوں روپے کا زرمبادلہ بچایاجاسکےگا صوبائی محکمہ ماحولیات موسمیاتی تبدیلی  اور ساحلی ترقی کی پام آئل مل نے پیداوار شروع کردی ہے مشیر ماحولیات موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی اور ترجمان سندھ حکومت بیرسٹر مرتضی وہاب نے سیکریٹری محکمہ ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی محمد اسلم غوری، ڈی جی سندھ ساحلی ترقی اتھارٹی اور دیگر افسران کے ہمراہ گزشتہ روز ضلع ٹھٹھہ میں غلام اللہ ٹاؤن میں لگائی گئی پام آئل مل کا دورہ کیا بیرسٹر مرتضی وہاب نے پام آئل فیلڈ کا بھی دورہ کیا اس موقع پر میڈیا نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے بیرسٹر مرتضی وہاب  نے کہا ک محکمہ ماحولیات موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی نے ضلع ٹھٹھہ میں 50ایکڑ رقبے پر پام کے درخت کاشت کیے تھے الحمداللہ پام کے درختوں نے ریکارڈ پھل دینا شروع کردیا ہے جن سے یومیہ 2ٹن پام آئل کی پیداوار ہوگی۔ بیرسٹر مرتضی وہاب نے بتایا کہ پاکستان پام آئل کی درآمد پر سالانہ 4ارب ڈالر تک زرمبادلہ خرچ کرتاہے جو ایک خطیر رقم ہے ہماری کوششوں سے سندھ حکومت نے پام آئل کے پائلٹ پراجیکٹ کی کامیابی کے بعد کاشت کے لئے مزید زمین مختص کردی ہے ضلع ٹھٹھہ میں 1500ایکڑ رقبے پر پام کے مزید درخت کاشت کیے جارہے ہیں پام کے درختوں سے نکلنے والے پھلوں سے آئل نکالنا شروع کردیا ہے جو ہماری بڑی کامیابی ہے بیرسٹر مرتضی وہاب نے نے آزمائشی تجربہ کامیاب ہونے پر تمام عملے کو مبارکباد دی بیرسٹر مرتضی وہاب نے پام کی کاشت اور آئل کی پیداوار کو گیم چینجر بھی قرار دیا اور کہا کہ سندھ میں کاشت کیئے گئے پام اور آئل کی پیداوار کا تجربہ قابل عمل اور کامیاب رہا جس پر ہمیں خوشی ہے انہوں نے بتایا کہ پام کے 1100درخت آزمائشی طورپر کاشت کیے گئے تھے جن سے پیداوار شروع ہوگئی ہے یہ نہ صرف سندھ بلکہ پورے پاکستان کے عوام کے لئے بڑی خوشخبری ہے کہ پام کی کاشت اور آئل کی پیداوار کا تجربہ کامیاب رہاہے۔ بیرسٹر مرتضی وہاب کا کہنا تھا کہ تھرکول کے بعد یہ سندھ حکومت کا پام آئل منصوبہ بھی نئی مثال ثابت ہوگا پام کی کاشت اور آئل کی پیداوار سے ضلع ٹھٹھہ میں بڑی سرمایہ کاری آئے گی محکمہ ماحولیات موسمیاتی تبدیلی اورساحلی ترقی کا پام آئل منصوبہ ہزاروں خاندانوں کے لئے روزگار کا سبب بنے گا انہوں نے بتایا کہ پاکستان میں اپنی نوعیت کا یہ واحد اور پہلا منصوبہ ہے اس سے قبل ملک میں کہیں بھی پام آئل کی مل نہیں لگائی گئی ہے یہ پلانٹ محکمے نے چین سے درآمد کیا ہے بیرسٹر مرتضی وہاب نے کہا کہ تھر کول کی طرح اس منصوبے میں بھی مقامی لوگوں کو روزگار فراہم کیا جائیگا انہوں نے کہا کہ پیپلزپارٹی کی قیادت اور وزیراعلی سندھ کے ویژن کو پایہ تکمیل تک پہنچایا ہے۔
 
     
 
SEPA holds a final review of 4 incinerators for Larkana

Medical waste may act as a vehicle in an AIDS-affected area
KARACHI: Naeem Ahmad Mughal, Director General, Sindh Environmental Protection Agency (SEPA), presided over an environmental review session held here for the installation and operation of four incinerators for the disposal of medical waste in an environmentally friendly manner in various hospitals of Larkana district. 
In the meeting of experts after examining the environmental impact of the four incinerators, it was decided that environmental approval for their installation and operation would be given in due course of time, keeping in view of the public opinions taken earlier on them. 
It is to be noted that the Sindh Government is taking all-out measures to prevent further spread of AIDS in Larkana which was spreading on a limited scale over there in the recent past. Safe disposal of hospital waste eliminates the risk of the spread of any infectious diseases including AIDS; therefore, the plan for the installation and operation of subject incinerators in various hospitals of the referred district is being speedily examined to assess their environmental implications.
With the financial support of the World Health Organization and the managerial supervision of the Department of Health, Government of Sindh, one incinerator with the capacity of 50 kg per hour of medical waste will be installed at Sheikh Zayed Women's Hospital, Larkana, while one each of the capacity of 20 kg of waste per hour will be installed at Taluka Hospital Rato Dero and Rural Hospital Nodero. In addition, the place of the installation of the fourth incinerator with a capacity of 10 kg of medical waste per hour will be decided by the Health Department.
Barrister Murtaza Wahab, Spokesperson to the Government of Sindh and Advisor to the Chief Minister on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development, has already directed SEPA to conduct an environmental review of all such projects directly related to the public interest on a priority basis. They should be approved without delay while fulfilling their necessary environmental requirements.
 It may be recalled that in the recent past, several cases of AIDS were reported in Larkana. Out of 30,000 tests conducted between April and June last year, AIDS was found in 876 people, of whom 82% were children under 15 years of age. There were guesstimates that the spread of AIDS in the city could also be due to unsafe medical practices, including the reuse of used syringes and drips for treatment, as well as the presence of the quacks (unauthorized medical practitioners) in the area.
During the expert review meeting, DG SEPA Naeem Ahmad Mughal asked various questions from the WHO and Health Department representatives regarding the installation of the incinerators and their subsequent operations in the context of their environmental safety. Dr Sara Salman, WHO head in Sindh, told the meeting that her organization was working with the Health Department Sindh to prevent the spread of AIDS in Larkana and to improve the healthcare system in hospitals, especially to ensure safe disposal of medical waste. ۔ The WHO is also financing the medical waste disposal machines and in this regard, an agreement has been signed with a company called Madeline Technologies for the installation of the said machines in all the three hospitals in Larkana district.
During the meeting, the issues related to the amount of smoke coming out of the chimneys of these incinerators once they are installed and possible side effects while disposing of medical waste, the method of disposal of incinerated waste’s ash, provision of the necessary training to their handlers and operators and temporary storage of the waste before disposal were critically examined. Subsequently, DG SEPA urged the WHO to continue administrative oversight and financial support for the supply, installation, and subsequent operation of the machines beyond their three-year contract period. He also assured that SEPA would provide all possible assistance in environmental matters till the completion of the projects.
It should be noted that under Section 17 of the Sindh Environmental Protection Act 2014, all development projects implemented in Sindh, including the construction of buildings and installation of machines, must be approved by SEPA after conducting their environmental impact assessment (EIA). On receiving the comments/opinions of stakeholders through public hearings and media, a committee of experts constituted by SEPA, after a detailed environmental review of the project under consideration, decides whether to give it final approval or refer back for necessary alterations.
 
     
 


لاڑکانہ میں طبی فضلے کی محفوظ تلفی کے چار منصوبوں کا ماحولیاتی جائزہ مکمل

ایڈز سے متاثرہ علاقوں میں طبی فضلہ بھی مرض کے پھیلاؤ کا سبب بنتا ہے

کراچی: ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ(سیپا) کے ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل کی صدارت میں لاڑکانہ میں طبی فضلہ ماحول دوست طریقے سے ٹھکانے لگانے والی چارمشینوں (انسنریٹر) کی تنصیب اور کام کاج (آپریشن)کا حتمی ماحولیاتی جائزہ لینے کے لیے ماحولیاتی و طبی ماہرین کا مشترکہ اجلاس ہوا جس میں چاروں مشینوں کے ماحولیاتی اثرات کی جانچ پڑتال کرنے کے علاوہ قبل ازیں ان پر لی گئی عوامی آراء کو مدنظر رکھتے ہوئے طے کیا گیا کہ چاروں مشینیں لگانے اور چلانے کی ماحولیاتی منظوری مقررہ وقت میں دے دی جائے گی۔ 
واضح رہے کہ لاڑکانہ میں کچھ عرصہ قبل محدود پیمانے پر پھیلنے والے ایڈزکے مرض کو مزید پھیلنے سے روکنے کے لیے حکومت سندھ ہمہ جہت اقدامات لے رہی ہے جن میں سے ایک وہاں کے بڑے ہسپتالوں میں مذکورہ مشینوں کی تنصیب بھی ہے جن کے لگنے کے بعد اسپتالوں کے کچرے سے کسی بھی قسم کے متعدی امراض کے پھیلاؤ کاخطرہ ختم ہوجاتا ہے تاہم ایسی مشینوں کے ماحولیاتی مضمرات کی اچھی طرح چھان پھٹک کرنے کے بعد انہیں لگانے کی منظوری دی جاتی ہے۔ 
عالمی ادارہ صحت کے مالی تعاون اور محکمہ صحت حکومت سندھ کے زیر انتظام پچاس کلو گرام فی گھنٹہ کے حساب سے طبی کچرہ تلف کرنے والی ایک مشین شیخ زید وومن ہسپتال لاڑکانہ شہر میں لگائی جائے گی جبکہ ایک گھنٹے میں بیس کلو گرام کچرہ تلف کرنے والی ایک ایک مشین تعلقہ ہسپتال رتو ڈیرو اور رورل ہسپتال نو ڈیرو میں لگائی جائے گی اس کے علاوہ دس کلوگرام فی گھنٹہ کی استعداد رکھنے والی چوتھی مشین کی تنصیب  کے مقام کا فیصلہ محکمہ صحت کرے گا۔
حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی اس حوالے سے سیپاکو ہدایت ہے کہ ایسے تمام منصوبے جن سے براہ راست مفاد عامہ جڑا ہے ان کا ماحولیاتی جائزہ ترجیحی بنیادوں پر ضروری تقاضے پورے کرتے ہوئے ان کی بلاتاخیر منظوری دی جائے۔  
 یاد رہے کہ ماضی قریب میں لاڑکانہ میں ایڈز کے متعدد مریض سامنے آئے تھے، گزشتہ سال اپریل سے جون کے عرصے میں کئے گئے تیس ہزار ٹیسٹ میں سے پونے نو سو افراد میں ایڈز پایا گیا تھا جن میں بیاسی فیصد پندرہ سال سے کم عمر بچے تھے جنہیں دیکھتے ہوئے اندازہ لگایا گیا تھا کہ شہر میں ایڈز کے پھیلاؤ کاممکنہ ذریعے غیر محفوظ طبی سرگرمیاں بھی ہوسکتی ہیں جن میں خاص طور پر استعمال شدہ سرنج کا دوبارہ استعمال اور غیر محفوظ طریقے سے مریضوں میں ڈرپ لگانے کے علاوہ اتائی ڈاکٹروں کی طبی سرگرمیاں شامل ہیں۔ 
ماہرین کے جائزہ اجلاس کے دوران ڈی جی سیپا نعیم احمد مغل نے مشینوں کی تنصیب اور بعد ازیں ان کے کام کاج(آپریشنز) کے حوالے سے ڈبلیو ایچ او اور محکمہ صحت کے نمائندوں سے ماحولیاتی تحفظ کے تناظر میں مختلف سوالات پوچھے۔ سندھ میں ڈبلیو ایچ او کی سربراہ ڈاکٹر سارہ سلمان نے اجلاس کو بتایا کہ ان کا ادارہ محکمہ صحت کے ساتھ لاڑکانہ میں ایڈز کا پھیلاؤ روکنے اور ہسپتالوں میں طبی نظام بہتر بنانے خاص طور پر طبی فضلے کی محفوظ تلفی یقینی بنانے کے لیے کام کررہا ہے۔ ڈبلیو ایچ او کی جانب سے طبی فضلہ تلف کرنے کی مشینوں کی مالی معاونت بھی کی جارہی ہے اور اس ضمن میں ضلع لاڑکانہ کے تینوں ہسپتالوں میں مذکورہ مشینوں کی تنصیب کے لیے میڈلائن ٹیکنالوجیز نامی کمپنی سے معاہدہ کرلیا گیا ہے۔
اجلاس کے دوران طبی فضلہ تلف کرتے وقت مذکورہ مشینوں کی چمینوں سے نکلنے والے دھویں کی مقدار اور ممکنہ مضر اثرات،جلے ہوئے کچرے کی راکھ کی تلفی کے طریقہ کار، مشین چلانے والوں کو ضروری تربیت کی فراہمی اور ضرررساں فضلے کی تلفی سے قبل اسے محفوظ رکھنے جیسے معاملات کا باریک بینی سے جائزہ لیتے ہوئے ڈی جی سیپا نے ڈبلیو ایچ او کو تاکید کی کہ مشینوں کی فراہمی، تنصیب اور بعد ازیں موثر کارگزاری کی خاطر انتظامی نگرانی اور مالی معاونت تین سالہ ٹھیکے کے بعد بھی جاری رکھی جائے۔ انہوں نے سیپا کی جانب سے منصوبوں کی تکمیل تک ماحولیاتی امور میں ہرممکن مدد کی فراہمی کا بھی یقین دلایا۔ 
واضح رہے کہ سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014کی دفعہ 17کے تحت سندھ میں لگائے جانے والی تمام ترقیاتی منصوبوں بشمول عمارات کی تعمیر اور مشینوں کی تنصیب سے قبل سیپا سے ان کا ماحولیاتی جائزہ کراکے منظوری لینا ضروری ہے جس کے لیے سیپا جمع کرائے گئے منصوبے پر بذریعہ عوامی شنوائی اور میڈیا، متعلقہ اداروں اور افراد کی آراء حاصل کرتا ہے جس کے بعد پہلے سے قائم کردہ ماہرین کی کمیٹی کے جائزہ اجلاس میں زیر غور منصوبے کا تفصیلی ماحولیاتی جائزہ لینے کے بعد انہیں حتمی منظوری دینے یا نہ دینے کا فیصلہ کیا جاتا ہے۔ 
 
 
Environment Department offers to help promote green finance 

KARACHI: Muhammad Aslam Ghauri, Secretary, Environment, Climate Change and Coastal Development Department, Government of Sindh, has said that in order to ensure sustainable development, it is necessary not only to indiscriminately implement the environmental laws but also to meet environmental requirements during all commercial and industrial activities in letter and spirit. 
Addressing a program at a local hotel (Marriott) to promote eco-friendly banking jointly organized by major leading private banks of the country on Thursday here he said, at the same time projects that pledge not to harm the natural environment during their execution and onward operation should be provided with commercial and industrial loans on priority basis and on easy terms to promote eco-friendly trade practices in the country. 
“Following this way we can safely pass on the fruits of the development to our future generations, and in this regard, the Environment Department is ready to extend all possible assistance to the banking sector to promote and facilitate the success of such green financing’s initiatives.
The Secretary said that non-compliance with environmental requirements during commercial and industrial activities results in huge environmental cost. We are seeing its harmful effects around us, which is making diseases to become more common, new epidemics are appearing and human immunity is clearly weakening, so it is important not only to enforce environmental laws by taking strict legal action against the perpetrators of environmental violations, but all sectors and their affiliated institutions should do their utmost to ensure the success of all such initiatives that promote eco-friendly trade and industry.
Aslam Ghauri, while mentioning the steps taken by the Sindh Government to promote sustainable development and combat the negative effects of climate change, said that in this regard, Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) has taken innumerable steps to address environmental violations. Not only is SEPA continuing to crack down on polluting elements through effective strategies to prevent pollution, but it is also providing all possible guidance to manufacturing and commercial enterprises that intend to meet environmental requirements so that they can provide environmentally friendly products and services with effective cost control.
He further said that SEPA has started drafting the clean production policy in which public consultation has also been initiated through which the draft policy will be made more and more refined and workable so that industries can produce sustainable products and services. While the climate change policy being drafted by the Environment Department is also in the final stages of preparation, after which it will be submitted for approval so that all private and government institutions in the province can cope with the effects of climate change and increase their efficiency on this score. 
Leading industrialist Mirza Ikhtiar Baig and other environmentalists also addressed the event and offered their valuable views regarding the launch and promotion of eco-friendly financial products. Famous industrial and commercial leader Mian Zahid Hussain was also present on the occasion.

 
     
 
کوٹری اور حیدرآباد میں ڈی جی سیپا کا بیٹریوں کے کارخانوں کا اچانک دورہ

کارخانوں کی ماحولیاتی ابتری پر شدید برہم

حیدرآباد:.ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) کے ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل نے سیپا حیدرآباد کے ریجنل انچارج ڈپٹی ڈائریکٹر(ٹیکنکل ) عمران علی عباسی اور اسسٹنٹ ڈائریکٹر(ٹیکنیکل) علی نواز بھنبھرو اوراسسٹنٹ ڈائریکٹر (لاء) قطب الدین درس کے ہمراہ کوٹری سائٹ کا اچانک دورہ کیا اور پرائیوٹ بیٹریوں کی ری سائکلنگ کرنے والی فیکٹریوں کی تفصیلی ماحولیاتی جانچ پڑتال کی اور مزید ماحولیاتی آلودگی کو کنٹرول کرنے  کے احکامات جاری کیے۔ یاد رہے کہ گزشتہ دورے میں ان فیکٹریوں میں صفائی کے انتظامات غیر تسلی بخش ہونے پر انہیں مہلت دی گئی تھی۔مہلت ختم ہونے پر آج دوبارہ ان فیکٹریوں کا اچانک دورہ کیا گیا ۔بعد ازان ڈی جی سیپا نعیم احمد مغل نے حیدرآباد سائیٹ ایریا میں بھی بیٹری بنانے والے یونٹ کا  دورہ کیا جہاں پر صفائی کے مناسب انتظامات نہ ہونے پر سخت برہمی کا اظہار کیا اور فیکٹری انتظامیہ/مالک کو ذاتی شنوائی کے لئے جمعرات 12 نومبر 2020 کو ریجنل آفس ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ حیدرآباد  طلب کرلیا۔ اس موقع پر ڈی جی سیپا نعیم احمد مغل  نے ماحولیاتی قوانین کی پاسداری کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ صوبے کے ماحولیاتی قوانین پر عمل نہ کرنے والوں کے خلاف بلاتفریق قانونی کارروائی کی جائے گی

ترجمان
محکمہ ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی
حکومت سندھ
 
 
SEPA seals two steel-melting polluting factories in district West

 KARACHI: On the directives of Sindh Government Spokesperson and Advisor to Chief Minister Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab and Director General of Environmental Protection Agency Sindh (SEPA) Naeem Ahmed Mughal, SEPA  Monitoring Team of district West sealed off two steel melting factories located on Manghopir Road on the grounds of spreading pollution.
According to the details, the SEPA monitoring team found that the production activities of both Zemson Steel and Diamond Steel were emitting large amounts of dark black smoke, which also contained harmful gases, which caused severe damage to the surrounding environment and the health of the residents.  
Both factories did not comply with environmental laws, nor did they have a system in place to reduce the harmful effects of their emissions.
 In the light of the above facts, the SEPA team locked both the factories on the complaints of the residents of the area.

 
 
آلودگی پھیلانے پر ضلع غربی میں اسٹیل پگھلانے کے دوکارخانے سیل

کراچی: حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیراعلی سندھ کے مشیر برائے قانون, ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب اور ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) کے ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل کی ہدایات پر سیپا ضلع غربی کی مانیٹرنگ ٹیم نے  منگھوپیر روڈ پر واقع اسٹیل پگھلانے والے دو کارخانوں کو آلودگی پھیلانے کی پاداش میں سیل کردیا.
تفصیلات کےمطابق سیپا مانیٹرنگ ٹیم نے پتہ چلایا کہ زیمسن اسٹیل اور ڈائمنڈ اسٹیل نامی دونوں کارخانوں کی پیداواری سرگرمیوں سے بڑی مقدار میں گہرا سیاہ دھواں خارج ہورہا تھا جس میں نقصان دہ گیسیں بھی شامل تھیں جس کی وجہ سے اطراف کے ماحول اور رہائشیوں کی صحت کو سخت نقصان ہورہا تھا.
دونوں کارخانے نہ ہی ماحولیاتی قوانین کی پابندی کررہے تھے اور نہ ہی سرگرمیوں سے خارج ہونے والے دھویں کے مضر اثرات میں کمی کرنے کا کوئی نظام نصب کررکھا تھا.
مذکورہ حقائق کی روشنی میں اطراف کے رہائشیوں کی شکایات پر سیپا کی ٹیم نے دونوں کارخانوں کو مقفل کردیا
 
     
 
Use of medical waste as fuel in brick kilns in Tando Allahyar;  SEPA issues warning
TANDO ALLAHYAR:  Under the special directives of Sindh Chief Minister's Advisor on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab and Director General of Environmental Protection Agency Sindh (SEPA) Naeem Ahmad Mughal, a team of SEPA under the supervision of Regional Incharge Imran Ali Abbasi and headed by District Incharge Tando Allahyar Shah Khalid along with environmental inspectors took action against the perpetrators of environmental violations in and around Tando Allahyar district and raided the brick kilns causing pollution.
According to details, the team of Sepa Tando Allahyar inspected the brick kilns in and around Tando Allahyar city and inspected the fuel used in the brick kilns and confirmed the use of prohibited items.  On this occasion, Shah Khalid, District Incharge warned the owners of brick kilns to use environmentally friendly fuel on the kilns and make their kilns run according to the law, otherwise they would have to face action under strict environmental laws which may be their arrest in addition to the closure of their kilns.
On this occasion, the district in-charge said that there are several brick kilns in Tando Allahyar district and its adjoining areas, the owners of which had assured not to use prohibited items for fuel, but when the public complaint increased, SEPA team found at their site  garbage piles, plastic bottles, medical waste and other prohibited items which were used to make bricks.  He was outraged and instructed them to burn environmentally friendly fuels and to move the kilns to ZigZag technology.  If anti-environment fuel is burnt on these kilns, a case will be registered against these kilns after legal action.
 
 
سکھر میں ممنوعہ پلاسٹک بیگز کے استعمال میں کمی آنے لگی
ٹنڈوالہیار میں اینٹوں کے بھٹوں میں طبی فضلے کابطور ایندھن استعمال؛ سیپا نے وارننگ جاری کردی

ٹنڈوالہ یار۔  وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون, ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب اور ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) کے  ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل کی خصوصی ہدایت پر سیپا کے ریجنل انچارچ عمران علی عباسی کی نگرانی اور  ضلعی انچارچ  ٹنڈوالہ یار شاہ خالد کی سربراہی میں ماحولیاتی انسپیکٹروں نے ضلع ٹنڈوالہ یار اور اس کے گردونواح  میں ماحولیاتی خلاف ورزی کے مرتکب عناصر کے خلاف کاروائی کی اور آلودگی کا باعث بننے والے  اینٹوں کے بھٹوں  پر  چھاپے مارے.
 تفصیلات کے مطابق سیپا ٹنڈو الہیار کی ٹیم نے  ٹنڈوالہ یار شہر اور اس کے گردونواح میں قائم اینٹوں کے بھٹوں کا معائنہ کیا اور اینٹوں کے بھٹوں میں استعمال ہونے والے ایندھن کاجائزہ لیا اور ممنوعہ قرار دی گئی اشیاء کے استعمال کی تصدیق ہونے پراینٹوں کے بھٹوں کے مالکان پر سخت برہمی کا اظہار کیا  اس موقع پرسیپا کے ضلعی انچارچ  شاہ خالد نے اینٹوں کے بھٹہ مالکان کو تنبیہ کی کہ وہ بھٹوں پر ماحول دوست ایندھن کا استعمال کریں اور اپنے بھٹوں کو قانون کے مطابق بنائیں ماحولیاتی قوانین کے تحت چلائیں بصورت دیگر سخت قانونی کاروائی بشمول بھٹوں کی بندش کے ساتھ ساتھ انہیں جیل بھی جانا پڑے گا. 
اس موقع پر ضلعی انچارچ  نے بتایا کہ ضلع ٹنڈوالہ یار اور اس کے ملحقہ علاقوں میں متعدد اینٹوں کے بھٹے ہیں جن کے مالکان نے ایندھن کے لئے ممنوعہ اشیاء استعمال نہ کرنے کی یقین دہانی کروائی تھی لیکن عوامی شکایت بڑھنے پرجب چھاپہ مارا گیا تو وہاں کچرے کے ڈھیر ،پلاسٹک کی بوتلیں، طبی فضلہ اوردیگر ممنوعہ اشیاء اینٹیں پکانے کے لئے استعمال کی جارہی تھیں. جس پر سخت برہمی کا اظہار کیا گیا اور انہیں ماحول دوست ایندھن جلانے کی ہدایات جاری کی گئیں اور انھیں زگ زیگ ٹیکنولوجی پر بھٹے منتقل کرنے کی ہدایت بھی جاری کی گئی ۔ اگر ان بھٹوں پر  ماحول دشمن ایندھن جلایا گیا تو ان  بھٹوں پر  قانون کے تحت کاروائی کے بعد مقدمہ درج  کروایا جائے گا۔

سکھر: ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) کے ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل وقار حسین پھلپوٹو کی سربراہی میں سیپا سکھرکی ٹیم نے شہر کے مختلف علاقوں میں کاروائیاں کی اور تلف نہ ہونے والی پلاسٹک کی تھیلیوں کی سپلائی وفروخت کرنیوالے ہول سیلرز و ریٹیلرز اور گوری سپر اسٹور، ڈالفن بیکرز، کرن بیکرز کے علاوہ مختلف بڑے آئوٹ لیٹس کا دورہ کیا جدھر انہیں پابندی شدہ پلاسٹک بیگز کہیں پر بھی نہ ملے ۔
 تفصیلات کے مطابق وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون, ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی  بیرسٹر مرتضی وہاب اور ڈائریکٹر جنرل ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) نعیم احمد مغل کی خصوصی ہدایت پر ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل سیپا وقار حسین پھلپوٹو ، ریجنل انچارج سکر اجمل خاں تنیو ، اسسٹنٹ ڈائریکٹر گل امیر اور مختیارکار سکھر سٹی  کے ہمراہ سکر شہر کے مختلف علاقوں میں پابندی شدہ پلاسٹک شاپنگ بیگز سپلائی و فروخت کرنیوالے ہول سیلرز و ریٹیلروں کی دکانوں پر چھاپے مارے اور کہیں سے بھے غیر قانونی بیگس نہ ملے۔ اس کے علاوہ سکھر کے بڑے اسٹورز ، گوری،  ڈالفن بیکرز اور کرن بیکرز پر بھی اب ماحول دوست پلاسٹک اور کاغذ کی تھلیاں پائی گئیں۔  
  اس موقع پر  ادارہ  تحفظ ماحولیات  سندھ کے  ایڈشنل  ڈائریکٹر  جنرل   نے میڈیا کو بتایا کہ ڈاریکٹر جنرل ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ کی خاص ہدایات پر آج سکر شہر  کے مختلف علاقوں میں پلاسٹک بیگز فروخت کرنیوالی چھوٹی بڑی دکانوں پر چھاپے مارے ہیں۔ اور ان مالکاں اور ہول سیلرز اور ریٹیلرز کو سیپا ایکٹ 2014 کے مطابق پہلے سے نوٹس بھی دیے گئے تھے۔ اور حال ہی میں  ڈپٹی کمشنر سکھر کی سربراہی میں  ایک آگاہی ریلی بھی نکالی گئی تھی جس میں واسطے داروں اور عوام الناس کو  آگاہ کیا گیا تھا کہ پابندی شدہ پلاسٹک کی تھیلیوں کی خرید و فروخت اور استعمال روکا جائے۔  ان سب کاوشوں کے نتیجے میں آج سکر کے ہول سیلرز اور بڑے اسٹورز پر سندھ حکومت کے دیے گئے نوٹیفکیشن کے مطابق  حل پذیر پلاسٹک شاپنگ بیگز مل رہے ہیں۔ یہ سب ڈپٹی کمشنر سکھر اور ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ، ریجنل آفس سکھر کی کوششوں کا نتیجہ ہے۔ 
اب سکھر ریجن کے دیگر اضلاع میں بھی کاروائیاں تیز کی جائیںگی تا کہ اس ریجن کو پلاسٹک سے پاک کیا جائے۔   
ان کاروایوں کا مقصد  حکومت سندھ کی جانب سے پلاسٹک بیگز کے حوالے سے جاری کردہ نوٹیفیکیشن پر  مکمل عمل کرنا ہےاور جو دکاندار ممنوعہ پلاسٹک بیگز کی خریدوفروخت یا تیاری میں پایا گیا تو اسکے خلاف( سیپا) ایکٹ 2014 کے مطابق سخت سے سخت قانونی  کاروائی کی جائے گی۔

لاڑکانہ میں اے ڈی جی سیپا وقار حسین پھلپوٹو کا دورہ

دھواں دینے والی گاڑیوں پر ٹریفک پولیس کے ذریعے جرمانے عائد کئے
آلودگی پھیلانے والی فیکٹریوں کی انتظامیہ پر اظہار برہمی کیا
طبی فضلہ ڈھنگ سے تلف نہ کرنے پر اسپتالوں کی سرزنش کی
لاڑکانہ: ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ(سیپا) کے ایڈشنل ڈائریکٹر جنرل وقار حسین پھلپوٹو کی سربراہی میں  لاڑکانہ شہر کے مختلف علاقوں میں کاروائیاں کرتے ہوئےسکھر روڈ لاڑکانہ پر گاڑیوں کو روک کر ان سے نکلنے والے دھویں کو چیک کیا۔ اور اناج منڈی کے قریب واقعہ رائس مل اور انڈس ھاسپٹل لاڑکانہ کا بھی اچانک دورہ کیا. ماحولیاتی تحفظ کے قانون 2014 پر عمل نہ ہونے پر مالکاں پر برہمی کا اظھار کرتے ہوئے قانونی کاروائی کا حکم دیا 
تفصیلات کے مطابق وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون, ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی  بیرسٹر مرتضی وہاب اور ڈائریکٹر جنرل ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) نعیم احمد مغل کی خصوصی ہدایت پر ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل سیپا وقار حسین پھلپوٹو ، ریجنل انچارج سیپا لاڑکانہ سید ممتاز علی شاہ اور  ریجنل انچارج سکھر اجمل خاں تنیو  اور سندھ پولیس اور ٹریفک پولیس کی بھاری نفری کےہمراہ سکھر روڈ لاڑکانہ  پرکاروائی کر کے مختلف قسم کی گاڑیوں کی چیکنگ کی جس دوران گاڑیوں سے نکلنے والے ذہریلے دھویں کی جدید آلات سے چیکنگ کی گئ۔ اور ذہریلی گئسوں کی مقدار زیادہ نکالنے والی گاڑیوں پر بھاری جرمانے بھی عائدکئے گئے.
 اسکے بعد اےڈی جی سیپا نے اناج منڈی کے قریب واقعہ رائس مل کا دورہ کیا اور مل میں ماحولیاتی تقاضے پورے نہ ہونے کی وجہ سے مل مالک کو نوٹس دینے کا حکم دیا گیا اور برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ماحولیاتی  تحفظ کے قانون 2014 پر عمل نہ کرنے کی صورت میں بھاری جرمانے اور قید بھی ہو سکتی ہے۔ 
 اس موقع پر  ادارہ  تحفظ ماحولیات  سندھ کے  ایڈشنل  ڈائریکٹر  جنرل   نے انڈس ہاسپٹل لاڑکانہ میں  میڈیا کو بتایا کہ ڈائریکٹر جنرل ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ کی خاص ہدایات پر آج لاڑکانہ  میں ماحول کو بہتر بنانے کے لیے مختلف کاروائیوں کا مقصد یہ بتانا ہے کہ  ہر ادارہ جو ماحول کو خراب کر رہا ہے اس پر سیپا سخت سے سخت کاروائی کریگا۔ انڈس ہسپتال کا طبی فضلہ قانونی طریقے سے ٹھکانے نہ لگانے پر انتظامیہ کی غفلت کا بھی نوٹس لیا گیا اور انہیں خبردار کیا کے ہسپتال وہسٹ منجمنٹ رولز 2014 کی پاسداری کے جائے اور انسانی جانوں اور ماحول پر منفی اثر ڈالنے والے عناصروں کے خلاف سیپا کے قانون 2014 کے تحت قانونی کارروائی کی جائی گے ۔
 
 
Tap water in Hyderabad not drinkable, SEPA serves notice to WASA

KARACHI: The laboratory test of water samples collected from Hyderabad and carried out by the Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) found unfit for human consumption. 
Subsequently, SEPA issued a notice to the Managing Director of Water and Sanitation Authority (MD WASA) Hyderabad strictly reprimanding it on the supply of poor quality water to the residents of Hyderabad city because of its improper filtration which proves to be unfit for the human condition. 
Referring to the visit by the DG SEPA Naeem Ahmed Mughal of the site of the filter plant of WASA located at Jamshoro Road, the notice said that during the site visit it was observed that the filter plant was found malfunctioning and was supplying drinking water without necessary treatment. The things were worse so much so that even chlorination was not being applied and it was observed that water being supplied was unfit for human consumption. 
During the recent visit of DG SEPA Naeem Ahmed Mughal, it was also found that two chambers of six filter beds of the referred filter plant were not working and the condition of the plant was dilapidated. Also, clarifiers were non-functional and clarifier tanks were filled with mud. 
It was also noted during the subject visit that the capacity of the plant is 50 million gallons per day (MGD) but it was working at 30 MGD. Samples of the drinking water collected from the outlet/discharge point of the plant showed that the quality of water is unfit for human consumption. The copy of the lab report of water samples carried out by the SEPA was also enclosed with the notice which was issued to WASA. 
The WASA has been directed to take immediate corrective measures to make the plant fully functional within fifteen days for the provision of safe and clean drinking water to the citizens of Hyderabad. It was also directed to ensure effective chlorination of the water before supplying it to the citizens. 
WASA has also been warned that in case of any mishap as a result of the consumption of poor quality water, the responsibility shall lie on its management and it will have to face any consequences in this regard. 
WASA has also been informed that in case of non-compliance with the directives stated above, legal action under the provision of the Sindh Environmental Protection Act 2014 will be initiated against the management of WASA Hyderabad.


 حیدرآباد میں نلکے کا پانی پینے کے قابل نہیں ، سیپا کا واسا کو نوٹس 

 کراچی: ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) کے لیبارٹری ٹیسٹ سے پتہ چلا ہے کہ حیدرآباد کے شہریوں کو نلکوں سے فراہم کیا جانے والا پانی پینے کے قابل نہیں ہے, سیپا کے ڈائریکٹر جنرل نعیم مغل نے حال ہی میں واسا کے جامشور روڈ پر لگے فلٹر پلانٹ سے پانی کے نمونے لیبارٹری ٹیسٹ کے لیے خود اکٹھے کئے تھے.
 لہذہ سیپا نے منیجنگ ڈائریکٹر واٹر اینڈ سینی ٹیشن اتھارٹی (ایم ڈی واسا) حیدرآباد کو ایک نوٹس جاری کرتے ہوئے حیدرآباد شہر کے باسیوں کو ناقص معیار کے پانی کی فراہمی پر سختی سے سرزنش کی ہے .
 جامشورو روڈ پر واقع واسا کے فلٹر پلانٹ کی سائٹ کا ڈی جی سیپا کے دورے کا ذکر کرتے ہوئے نوٹس میں کہا گیا ہے کہ سائٹ کے دورے کے دوران دیکھا گیا ہے کہ فلٹر پلانٹ میں خرابی پائی گئی ہے اور وہ بغیر کسی مناسب نگہداشت کے پینے کا پانی فراہم کررہا ہے۔ پلانٹ کے امور اس قدر خراب تھے کہ کلورینیشن بھی نہیں کی جارہی تھی اس لیے ایسے پانی کی فراہمی انسانی استعمال کے لئے نا مناسب ہے۔
 ڈی جی سیپا کے حالیہ دورے کے دوران ، یہ بھی پتہ چلا کہ مذکورہ فلٹر پلانٹ کے چھ فلٹر بیڈز اور دو چیمبر کام نہیں کررہے تھے اور پلانٹ کی حالت خستہ تھی۔  نیز کلیریفائیر غیر فعال تھے اور کلیئرفائیر ٹینک مٹی سے بھرے تھے۔
 دورے کے دوران یہ بھی نوٹ کیا گیا تھا کہ پلانٹ کی گنجائش یومیہ 50 ملین گیلن (ایم جی ڈی) ہے لیکن یہ 30 ایم جی ڈی میں کام کر رہا ہے۔  پلانٹ کے آؤٹ لیٹ / ڈسچارج پوائنٹ سے جمع شدہ پینے کے پانی کے نمونے یہ ظاہر کرتے ہیں کہ پانی کا معیار انسانی استعمال کے لئے نا مناسب ہے۔  سیپا کے ذریعہ کئے گئے پانی کے نمونوں کے تجزیوں کی لیب رپورٹ کی کاپی کو بھی نوٹس کے ساتھ منسلک کیا گیا ہے جو واسا کو جاری کیا گیا ہے۔
 حیدرآباد کے شہریوں کو پینے کے صاف پانی کی فراہمی کے لئے واسا کو پندرہ دن کے اندر پلانٹ کو مکمل طور پر فعال بنانے کے لئے فوری اقدامات لینے کی ہدایت کی گئی ہے۔  شہریوں کو پانی کی فراہمی سے قبل پانی کی موثر کلورینیشن کو یقینی بنانے کی بھی ہدایت کی گئی ہے۔
 واسا کو یہ بھی خبردار کیا گیا ہے کہ ناقص معیار کے پانی کے استعمال کے نتیجے میں کسی قسم کے حادثے کی صورت میں ، ذمہ داری اس کی انتظامیہ پر عائد ہوگی اور اس سلسلے میں اسے کسی بھی قسم کے نتائج کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔
 واسا کو یہ بھی بتایا گیا ہے کہ مذکورہ بالا ہدایات پر عمل نہ کرنے کی صورت میں واسا حیدرآباد کی انتظامیہ کے خلاف سندھ انوائرمنٹل پروٹیکشن ایکٹ 2014 کی متعلقہ شق کے تحت قانونی کارروائی کا آغاز کیا جائے گا
۔
 
     
 
SEPA's notice on burning medical waste by Civil Hospital Nowshero Feroz  despite having an incinerator 
Additional DG of SEPA was sent from Karachi to inspect the site
 
Strict action will be taken against the hospital if burning continues

KARACHI: The Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) has sent a senior officer from its headquarters in Karachi to the site of the burning of infectious waste in the Civil Hospital Nowshero Feroze despite of having an incinerator.
ADG SEPA Waqar Hussain Phulpoto inspected the direct violation so that strict legal action can be taken against the hospital at the highest level.
According to details, on the special directives of Sindh Government Spokesperson and Advisor to Chief Minister Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab and Director General SEPA Naeem Ahmed Mughal, the Additional Director General SEPA Headquarters Waqar Hussain Phulpoto along with Regional Incharge SEPA Sukkur Ajmal  Khan Tanio and in-charge District Nowshero Feroze Asadullah Tanio, Assistant Director and Zalifqar Ali Bhatti visited the Civil Hospital of Nowshero Feroze and expressed their displeasure over the lack of sanitation and conventionally burning its medical waste despite of having an incinerator.  The team recommended to the higher authorities to issue a notice to the hospital management so that the hospital administration can run the incinerator at full capacity as soon as possible and save the environment and the surrounding population from the toxic gases emitted from burning medical waste.
In addition, the SEPA team, while conducting operations in different areas of Nowshero Feroz City, raided the shops of wholesalers and retailers supplying and selling non-biodegradable plastic bags and confiscated banned plastic bags.
 On the occasion, Additional Director General Waqar Hussain Phulpoto, who was on a special visit from SEPA Karachi, told the media that raids were carried out on small and big shops which were selling banned plastic bags in different areas of Nowshero Feroze city and shop owners, wholesalers and retailers were issued notices on the spot and it has been decided to take strict action against them after confiscating a large quantity of illegal bags and meanwhile cases against them will also be forwarded to the Judicial Magistrate.  SEPA's action was aimed at strictly enforcing the notification issued by the Sindh government regarding the ban on plastic bags.  And any shopkeeper found involved in the sale or manufacture of insoluble plastic bags will be subject to the strictest legal action under the SEPA Act 2014.
 
     
 
SEPA seals polluting factory in Korangi

KARACHI: The monitoring team of Korangi District of  Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) has sealed the International Metal Factory in Korangi Industrial Area which was emitting smoke filled with various harmful gases in excess of the prescribed limits in its production activities.
It may be noted that Barrister Murtaza Wahab, Spokesman of the Government of Sindh and Advisor to the Chief Minister Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development, has strongly directed SEPA to take stern action across the board throughout the province against the polluting elements under the concerned environmental laws.
According to the details, the investigation team of Sepa Korangi district had found that the said factory was completely ignoring the environmental requirements in its production process as a result of which the factory was emitting smoke beyond the limits of the provincial environmental standards.  The surrounding air has become very polluted and the residents of the nearby residential population are also directly being affected by the air emissions from the factory. Therefore, the monitoring team recommended that the factory be closed under the Sindh Environmental Protection Act 2014.
Approving the proposal of the investigation team of Seps Korangi district, DG Sepa Naeem Ahmed Mughal issued orders to seal the factory which were immediately implemented with the help of local police.
It should be noted that under the Sindh Environmental Protection Act 2014, any activity which causes irreparable damage to the environment due to the spread of pollution beyond the prescribed limits or if there is a fear of any damage then such activities will be kept closed till then all its environmental affairs related to its activity are rectified.

کورنگی میں فضائی آلودگی پھیلانے کی مرتکب فیکٹری سیل

کراچی: ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) ضلع کورنگی کی مانیٹرنگ ٹیم نے کورنگی انڈسٹریل ایریا میں اپنی پیداواری سرگرمیوں میں  مقررہ حدود سے زائد مختلف نقصان دہ گیسوں سے بھرا دھواں خارج  کرنے کی پاداش میں انٹرنیشنل میٹل فیکٹری سیل کردی.
واضح رہے کہ حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون, ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی سیپا کو سختی سے ہدایت ہے کہ آلودگی پھیلانے والے عناصر کے خلاف بلاتعطل ماحولیاتی قوانین کے تحت سخت سے سخت کارروائی صوبے بھر میں بلا تفریق جاری رکھی جائے
تفصیلات کے مطابق سیپا ضلع کورنگی کی تفتیشی ٹیم نے پتہ چلایا تھا کہ مذکورہ فیکٹری اپنے پیداواری امور میں ماحولیاتی تقاضوں کو یکسر نظر انداز کررہی ہے جس کے نتیجے میں فیکٹری سے صوبائی ماحولیاتی معیارات کی مقررہ حدود سے زائد دھواں خارج ہورہا ہے جس سے اطراف کی فضاء خاصی آلودہ ہوگئی ہے اور ماحول کے ساتھ ساتھ قریبی رہائشی آبادی کے مکین بھی فیکٹری کے فضائی اخراج سے براہ راست متاثر ہورہے ہیں لہذہ مانیٹرنگ ٹیم نے سفارش کی کہ سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014 کے تحت مذکورہ فیکٹری کو بند کرایا جائے.
سیپا ضلع کورنگی کی تفتیشی ٹیم کی تجویز منظور کرتے ہوئے ڈی جی سیپا نعیم احمد مغل نے فیکٹری سیل کرنے کے احکامات جاری کئے جن پر مقامی پولیس کی مدد سے فوری طور پر عملدرآمد کرادیا گیا.
واضح رہے کہ سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول سندھ 2014 کے تحت ایسی سرگرمی جس کی وجہ سے مقررہ حدود سے زائد آلودگی پھیلنے کے باعث ماحول کو ناقابل تلافی نقصان ہورہا ہو یا ہونے کا خدشہ ہو تو ایسی سرگرمیوں کو اس وقت تک سیل رکھا جائے گا جبکہ تک کہ اس سرگرمی سے جڑے تمام ماحولیاتی امور درست نہ کرلیے جائیں.

 
  SEPA grants one week's time to K Electric, Lucky Cement  
 
KARACHI: Naeem Ahmed Mughal, Director General, Sindh Environmental Protection Agency (SEPA), has given the management of K Electric and Lucky Cement one week's time to cope with their environmental issues in their production and supply activities. Otherwise necessary action will be taken under the Sindh Environmental Protection Act 2014 against them.
During separate personal hearings of the management of the two companies in his office today (Wednesday), DG SEPA expressed dismay over the dissatisfactory steps taken by the two companies to prevent air pollution, especially emissions of large amounts of thick smoke from stack/chimneys of their plants.  
Subsequently he directed them to turn their environmental issues in the direction of rectification within a week's time.
It may be recalled that earlier DG SEPA had  summoned the management of K Electric and Lucky Cement for a personal hearing today (Wednesday) on their insufficient compliance with the environmental standards. They were offered the opportunity of personal hearing so that they could defend their position  before any further legal action is initiated by SEPA against them. 
It may be pointed out that on the directives of Sindh Government's Spokesman and Sindh Chief Minister's Adviser on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab, SEPA is taking all possible steps to prevent pollution in the entire province.
Separate notices were issued to the top management of the two companies three days ago which mentioned that according to SEPA's monitoring team, environmental requirements were not being fully met during the production and supply activities of the two companies and coal particles, fumes and  plenty of other emissions were polluting the surrounding air.
The notices also said that the measures taken by both the companies for proper disposal of solid waste and prevention of air emissions were inadequate, which was a clear violation of the Sindh Environmental Protection Act 2014 and its sub-rules.
Under the Sindh Environmental Protection Act 2014, if any kind of damage has been done, is happening or is expected to happen to the environment during an activity, then the person responsible for that activity should be informed before taking any legal action.  Defendants are also given the opportunity to have a personal hearing for the defence of their position.

 
 
سیپا کی کے الیکٹرک, لکی سیمنٹ کو ایک ہفتے کی مہلت

کراچی:  ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) کے ڈائریکٹرجنرل نعیم احمد مغل نے کے الیکٹرک اور لکی سیمنٹ کی انتظامیہ کو ایک ہفتے کے اندر اندر اپنے پیداواری اور رسدی امور میں ماحولیاتی معاملات کو بہتر بنانے کا وقت دیا ہے بصورت دیگر دونوں اداروں کے خلاف سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014 کے تحت ضابطے کی کارروائی کی جائے گی
اپنے دفتر میں دونوں اداروں کی انتظامیہ کی علیحدہ علیحدہ ذاتی شنوائی کے موقع پر ڈی جی سیپا نے فضائی آلودگی خاص طور پر بھاری مقدار میں راکھ کے فضاء میں  اڑنے کی روک تھام کے لیے مذکورہ کمپنیوں کی جانب سے لیے گئے غیر تسلی بخش اقدامات پر برہمی کا اظہار کیا اور انہیں اپنے ماحولیاتی معاملات ایک ہفتے کے اندر درستگی کی سمت موڑنے کی ہدایات دیں.
یاد رہے کہ ماحولیاتی معیارات پر غیر تسلی بخش عمل کرنے پر کے الیکٹرک اور لکی سیمنٹ کی انتظامیہ کو ذاتی شنوائی کے لیے ڈی جی سیپا نے اپنے دفتر آج (بروز بدھ) طلب کیا تھا تاکہ کسی مزید قانونی کارروائی سے قبل انہیں دلائل اور شواہد کی مدد سے اپنے دفاع کا پورا موقع دیا جائے گا۔
واضح رہے کہ حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایات پر سیپا کی جانب سے پورے صوبے میں آلودگی کی روک تھام کے لیے بھرپور اقدامات لیے جارہے ہیں   
دونوں کمپنیوں کی اعلی انتظامیہ کو تین روز قبل جاری شدہ علیحدہ علیحدہ نوٹسز میں کہا گیا تھا کہ سیپا کی مانیٹرنگ ٹیم کے مطابق دونوں کمپنیوں کی پیداواری اور رسدی سرگرمیوں کے دوران ماحولیاتی تقاضوں کو ملحوظ خاطر نہیں رکھا جارہا ہے اور کوئلے کے ذرات، دھویں اور دیگر اخراج کی کافی مقدار ہوا میں شامل ہوکر آس پاس کی فضاء کو آلودہ کررہے ہیں۔ 
نوٹسز میں یہ بھی کہا گیا تھا کہ ٹھوس فضلے کے مناسب بندوبست اور فضائی اخراج کی روک تھام کے لیے دونوں کمپنیوں کے اقدامات ناکافی دکھائی دیتے ہیں جو سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014اور اس کے زیریں قواعد و ضوابط کی صریح خلاف ورزی ہے۔ 
سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014 کے تحت اگر کسی سرگرمی کے دوران ماحول کو کسی بھی قسم  کے نقصان کا ارتکاب ہو چکا ہو، ہورہا ہو یا ہونے کا اندیشہ ہو تو ایسی صورت میں کسی قانونی کارروائی سے قبل اس سرگرمی کے ذمہ دار فرد کواپنا دفاع کرنے کے لیے ذاتی شنوائی کا موقع دیا جاتا ہے۔ 
 
 
ڈی جی سیپا نعیم مغل کا حیدرآباد ریجن کا طوفانی دورہ

حیدرآباد ٹول پلازہ پر زائد دھواں دینے والی گاڑیوں پر جرمانے
کوٹری سائٹ کی تین ری سائکلنگ فیکٹریوں کی ماحولیاتی جانچ پڑتال
ترقیاتی منصوبوں کے ماحولیاتی پہلووں کا جائزہ
حیدرآباد:.ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) کے ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل نے حیدرآباد کے مختلف علاقوں کا آج (19 اکتوبر) طوفانی دورہ کیا اور ماحولیاتی نگرانی کے متعدد امور بذات خود نمٹائے.
دورے کے آغاز میں انہوں نے سیپا حیدرآباد کے ریجنل انچارج ڈپٹی ڈائریکٹر عمران علی عباسی اور اسسٹنٹ ڈائریکٹر علی نواز بھنبھرو اور قطب الدین درس کے ہمراہ حیدرآباد ٹول پلازہ پر گاڑیوں کی چیکنگ کی اور ٹریفک پولیس کی وساطت سے زائد دھواں دینے والی گاڑیوں پر جرمانے بھی کیے.
بعد ازیں ڈی جی سیپا نے کوٹری سائٹ کا بھی اچانک دورہ کیا اور بیٹریوں کی ری سائکلنگ کرنے والی تین فیکٹریوں کی تفصیلی ماحولیاتی جانچ پڑتال کی. تینوں فیکٹریوں کی انتظامیہ کو ذاتی شنوائی کے لیے کل بروز منگل (20 اکتوبر) طلب بھی کرلیا گیا.
اس کے علاوہ ڈی جی سیپا نعیم مغل نے ریجنل آفس حیدرآباد میں مختلف منصوبوں کی دستاویزی جانچ پڑتال بھی کی اس موقع پر منصوبوں کی انتظامیہ نے انہیں پریزینٹیشنز بھی دیں.
اس موقع پر ڈی جی سیپا نے ماحولیاتی قوانین کی پاسداری کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ صوبے کے ماحولیاتی قوانین پر عمل نہ کرنے والوں کے خلاف بلاتفریق قانونی کارروائی کی جائے گی
 
 
SEPA calls in CEO of KE for personal hearing
Also summons heads of Lucky, Dewan Cements

KARACHI: The Director General of Sindh Environmental Protection Agency (SEPA), Naeem Ahmed Mughal has called the CEOs of K Electric, Lucky Cement, and Dewan Cement in separate personal hearings owing to their non-compliance with the environmental standards in their operational activities. 
On the directives of Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development Barrister Murtaza Wahab, SEPA has expedited its monitoring activities throughout the province to manage different types of pollution at their source. 
The notices - addressed separately to the three companies -  said that the SEPA monitoring team directly observed that the huge amount of soot/smoke/visible emissions were being released by their stack/chimneys/facility and negatively affecting the nearby areas. 
“It was also observed by the SEPA team that with regard to the handling of waste material and air emissions in the operational activities of their plants, insufficient measures for mitigating the pollution load were being taken which confirms their violation of Sindh Environmental Protection Act 2014 (SEP Act 2014) and its Rules and Regulations made there-under,” said the notices.
It has also been explained in one of the subject notices that if SEPA finds an activity violating any provision of SEP Act 2014 and its subsidiary rules and regulations then an opportunity of personal hearing is offered to such violator before furthering a legal action. 
Therefore, heads of the three companies were directed to appear in person before DG SEPA on 21st October at different times to explain their position regarding their compliance with the SEP Act 2014. They were also directed to bring a copy of the environmental approval of SEPA – if any - which was issued previously to them related to their operational activities along with the report of compliance conditions, imposed in referred approval. 
Notices also mentioned that in case of failure to appear on the stipulated date and time, further legal action shall be initiated against them as per the referred environmental law. 

 
     
     
 
کے الیکٹرک، لکی اور دیوان سیمنٹ کمپنیوں کے سربراہوں کی سیپا کے دفتر طلبی

کراچی:ادارہ تحفظ ماحولیات حکومت سندھ (سیپا) کے ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل نے ماحولیاتی معیارات پر عمل نہ کرنے کی پاداش میں کے الیکٹرک، لکی سیمنٹ اور دیوان سیمنٹ کے سربراہوں کو ذاتی شنوائی کے لیے اپنے دفتر طلب کرلیا ہے جس میں کسی مزید قانونی کارروائی سے قبل انہیں دلائل اور شواہد کی مدد سے اپنے دفاع کو پورا موقع دیا جائے گا۔
واضح رہے کہ حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایات پر سیپا نے پورے صوبے میں آلودگی کی روک تھام کے لیے اپنی سرگرمیاں تیز تر کردی ہیں۔  
تفصیلات کے مطابق تینوں کمپنیوں کی اعلی انتظامیہ کو جاری شدہ علیحدہ علیحدہ نوٹسز میں کہا گیا ہے سیپا کی مانیٹرنگ ٹیم کے مطابق تینوں کمپنیوں کی پیداواری سرگرمیوں کے دوران ماحولیاتی تقاضوں کو ملحوظ خاطر نہیں رکھا جارہا ہے اور کوئلے کے ذرات، دھویں اور دیگر اخراج کی کافی مقدار ہوا میں شامل ہوکر آس پاس کی فضاء کو آلودہ کررہے ہیں۔ 
نوٹسز میں یہ بھی کہا گیا کہ ٹھوس فضلے کے مناسب بندوبست اور فضائی اخراج کی روک تھام کے لیے تینوں کمپنیوں کے قدامات ناکافی دکھائی دیتے ہیں جو سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014اور اس کے زیریں قواعد و ضوابط کی صریح خلاف ورزی ہے۔ 
نوٹسز میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ اگر کسی سرگرمی کے دوران ماحول کو کسی بھی قسم کے نقصان کا ارتکاب ہو چکا ہو، ہورہا ہو یا ہونے کا اندیشہ ہو تو ایسی صورت میں کسی قانونی کارروائی سے قبل اس سرگرمی کے ذمہ دار فرد کواپنا دفاع کرنے کے لیے ذاتی شنوائی کا موقع دیا جاتا ہے۔ 
لہذہ تینوں کمپنیوں کے سربراہوں کو 21اکتوبر 2020کو مختلف اوقات میں تمام ضروری دستاویزات سمیت ڈی جی سیپا کے روبرو پیش ہونے کا کہا گیا ہے بصور ت دیگر ان کے خلاف مذکورہ قانون کے تحت
 ضابطے کی کارروائی کی جائے گی۔

 
     
 
Sindh Government adopts two parks of KMC

Advisor on Environment inaugurated the first adopted park
 
Saplings of democracy will continue to be planted in the desert of dictatorship
More parks are also being adopted: Wahab
KARACHI: Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development Department Barrister Murtaza Wahab has said that the Government of Sindh has adopted two parks of KMC – New Clifton Park and Family Park Clifton ST14 – and more such parks are also being adopted. 
Speaking at the first adopted park’s – New Clifton Park – inauguration and plantation ceremony Barrister Murtaza Wahab said that in accordance with the vision of the provincial government to make Sindh green and clean after adopting both the park they will be fully rehabilitated and will be included in the list of the best parks of the city. Both the park will be managed by Environment, Climate Change and Coastal Development Department Government of Sindh and Sindh Environmental Protection Agency. 
He further said that it has been a long-standing tradition of the Pakistan Peoples’ Party to keep planting the sapling of democracy in the desert of dictatorship while PPP also firmly believes in more and more tree plantations to offset the harmful effects of the ever-rising air pollution. 
He said that the provincial government is busy protecting the environment from the menace of pollution on one hand and on the other and equally important side it is endeavoring to rehabilitate the already degraded environment by promoting green practices. “Adoption of parks is also a step to achieve these goals”, he added. 
Referring to the issue of efforts of the federal government to take over the islands of Sindh, he said that according to every concerned section of the Constitution of Pakistan all the natural resources of the province are its own property which should also be managed and protected by the province itself. However, he added, if the federal government wants to help provinces to develop their islands, it can do so staying within its constitutional limits. In this regard, he remarked, Governor Sindh should study the concerned sections of law and constitution before issuing any statement on the matter of island so that his statement may be taken seriously. 
Replying to another question he said that the dignified people of Punjab deserves applause for the astonishing success of the massive rally of the Pakistan Democratic Movement )PDM) at Gujranwala the other day and huge turnout of masses in the rally proved the fact that people are really fed up with the antagonistic policies of the federal government and its departure from the rule is now in its own interest. 
He said that public participation in today’s rally of PDM in Karachi will be beyond the expectations because dethroning the inefficient government is not the target of a party but it is a matter of the safety of Pakistan. History is witnessed to the fact that whenever the issue of the safety of Pakistan arose, people proved that no one will be allowed to look at our dear motherland with a malicious eye. 
He suggested that the spokesperson of the federal government should opt for one of the two ways; either to protect the interests of their bosses or to protect the interests of the country. He said that an associate of the Modi is one who expressed his good wishes through a tweet on Modi’s victory in the election. While the stance of PPP is very clear in this regard, that it will as usual stand against any decision taken by India which may affect Pakistan or the people of Pakistan; he added.  
He said that inefficient people can boast quite easily but once the time to deliver arrives they have nothing but to play their own armpits. “Where are ten million jobs, where are five million housing units; it is easy to boast but quite difficult to prove the claims right” he added. 
In the end, Advisor on Environment planted a sapling after inaugurating the park. Secretary Environment, Climate Change and Coastal Development Government of Sindh Muhammad Aslam Ghouri and Director General Sindh Environmental Protection Agency Naeem Ahmed Mughal besides higher officials of SEPA and a large number of media-persons also attended the ceremony. 
 
 
حکومت سندھ نے کے ایم سی کے دو پارک گود لے لیے
مزید پارک بھی گو د لیے جارہے ہیں، مرتضی وہاب
آمریتی صحرا میں جمہوریت کے پودے بھی لگائے جاتے رہیں گے
گود لیے گئے پہلے پارک کی افتتاحی تقریب سے خطاب
کراچی: حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب نے کہا ہے کہ سندھ حکومت نے صوبے کو سرسبز و شاداب بنانے کے وژن کے مطابق کراچی میں کے ایم سی کے زیر اہتمام چلنے والے دوپارکوں کو گود لے لیا ہے جن کی مکمل بحالی کرتے ہوئے انہیں شہر کے مثالی پارکوں کی فہرست میں شامل کیا جائے گا، دونوں پارکوں کا انتظام صوبائی محکمہ ماحولیات اور ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ سنبھالے گا۔  
گود لئے گئے دو پارکوں میں سے پہلے پارک نیو کلفٹن پارک کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مشیر ماحولیات نے کہا کہ پاکستان پیپلز پارٹی کی ہر دور میں روایت رہی ہے کہ آمریتی صحرا میں جمہوریت کا پودا لگانے کے ساتھ ساتھ وہ قدرتی ماحول بہتر بنانے کے لیے زیادہ سے زیادہ شجر کاری پر بھی یقین رکھتی ہے تاکہ فضائی آلودگی کی بھی کسی قدر تلافی ہوسکے، انہوں نے مزید کہا کہ کلفٹن ہی میں واقع کلفٹن فیملی پارک ایس ٹی فورٹین کوبھی صوبائی حکومت نے گود لے لیا ہے جبکہ مزید ایسے پارک جن کی بہتر آبادکاری کی ضرورت ہے انہیں بھی گود لیا جارہا ہے۔ 
مرتضی وہاب کا کہنا تھا ایک طرف تو حکومت سندھ ماحول کو بچانے کی پالیسی پر عمل پیرا ہے جبکہ دوسری جانب ماحول کو پہلے سے پہنچائے گئے نقصانات کی تلافی کے لیے بھی یکساں کوششیں کررہی ہے اور پارکوں کو گود لینا بھی اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے۔ 
سندھ کے جزائر وفاق کی تحویل میں لینے کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ آئین پاکستان کی تمام دفعات میں یہ بات روز روشن کی طرح عیاں ہے کہ کسی بھی صوبے میں واقع ہر قسم کے قدرتی وسائل اسی صوبے کی ملکیت ہوتے ہیں جن کی نگہبانی اور فروغ بھی اس صوبے ہی کی ذمہ داری ہوتی ہے تاہم وفاق اگر اس کام میں صوبے کی مدد کرنا چاہے تو وہ اپنی آئینی حدود میں رہتے ہوئے اپنی ذمہ داری پوری کرسکتا ہے۔ان کاکہنا تھا کہ گورنر سندھ کو چاہیے کہ اس معاملے پر کسی قسم کی رائے دینے سے قبل وہ آئین و قانون کو اچھی طرح سے پڑھ لیں تاکہ ان کی بات کو سنجیدگی سے لیا جانے لگے۔  
ایک اور سوال کے جواب میں مرتضی وہاب نے کہا کہ کل پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے گجرانوالہ میں کامیاب جلسے پر پنجاب کے غیور عوام مبارکباد کے مستحق ہیں اور جلسے میں عوام کے جم غفیر نے یہ ثابت کردیا کہ ملک کے عوام وفاقی حکومت کی پالیسیوں سے نالاں ہیں اور اس کی روانگی ہی اس کے حق میں بہتر ہے۔ 
انہوں نے مزید کہا کہ آج کراچی میں ہونے والے جلسے میں بھی عوام کی تعداد توقعات سے کہیں بڑھ کر ہوگی کیونکہ مسئلہ کسی پارٹی کا نہیں بلکہ پاکستان بچانے کا ہے اور تاریخ اس بات کی شاہد ہے کہ جب بھی پاکستان بچانے کی بات آئی تو عوام نے ثابت کیا کہ پاکستان کی طرف کسی کو میلی آنکھ سے دیکھنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔
انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت کے ترجمانوں کو یہ طے کرنا ہوگا کہ ان کے لیے پاکستان کا مفاد پہلے ہے یا پھر وفاقی حکومت کا، کیونکہ وہ اکثر وفاقی حکومت کا دفاع کرتے کرتے پاکستان کا مفاد پس پشت ڈال دیتے ہیں، اس حوالے سے انہوں نے مزید کہا کہ مودی کا یار وہ ہے جس نے مودی کے انتخاب پر ٹوئٹ کے ذریعے نیک تمناؤں کا اظہار کیاتھا جبکہ پاکستان پیپلز پارٹی کا موقف اس حوالے سے بالکل واضح ہے کہ بھارت کا ہر وہ فیصلہ جس میں پاکستان اور پاکستان کے عوام کے لیے کسی قسم کا بغض ہو وہ قابل قبول تودرکنا سننے کے لائق بھی نہیں ہوگا۔ 
انہوں نے کہا نااہلوں کے لیے دعوے کرنا آسان ہوتا ہے اسی لیے جب کام کرنے کا وقت آیاتو وفاقی حکومت کے سارے کے سارے دعوے دھرے رہ گئے، کہاں گئی وہ ایک کروڑ نوکریاں، کہاں گئے و ہ پچاس لاکھ گھر، کہنا آسان ہے جبکہ کرنا بہت مشکل۔  
آخر میں مشیر ماحولیات نے پارک میں شجر کاری کا آغاز کرتے ہوئے چیکو کا پودا لگایا۔ اس موقع پر سیکریٹری ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی حکومت سندھ محمد اسلم غوری اور ڈائریکٹر جنرل ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ(سیپا) نعیم مغل کے علاوہ سیپا کے اعلی افسران، عملے کے افراد اور میڈیا کی کثیر تعداد نے شرکت کی
 
     
 
14th October 2020
SEPA TAKES ACTION AGAINST M/S UNIQUE PLASTIC DISPOSAL
KARACHI: Naeem Ahmed Mughal Director General, Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) sealed M/s. Unique Plastic Disposal located at Plot No. 112/2, Sector 7/A, Haji Ibrahim Goth, Korangi Industrial Area, Karachi on Wednesday here due to improper of handling of Hazardous Waste Material including unauthorized management of Hazardous, Medical, Infectious & expired Goods at their facility.
 DG SEPA also paid site visit of said company along with concerned Deputy Director (Tech.)/ District Incharge of District Korangi and Field Team. During surprise visit it was found that insufficient measures were taken by the said company with regard handling of hazardous waste material and engaged in gross violation of Sindh Environmental Protection Act-2014 and its Rules & Regulations made there under. According to details, a District korangi monitoring team of SEPA found a private company name M/s Unique Plastic involved in disposing of hazardous, clinical and expired goods/ items process without adopting any scientific authorized manners in regard of dealing with hazardous waste as per requirement of provincial environmental protection act 2014. Subsequently this process stopped / sealed and its operation has been suspended by DG SEPA on the spot.
The DG SEPA once again reminded that SEPA will not tolerate any kind of such activities and matter will be dealt as per provision of SEP ACT 2014. Moreover, it is to be noted that such waste management and disposing off activities may carry out only on scientific and environmentally authorized manners where irresponsible dealing may cause severe environmental, health and ecological damages.

 
 
ڈی جی سیپا نے مہلک مواد بے احتیاطی سے تلف کرنے والی فیکٹری سیل کردی

کراچی: ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ کے ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل نے اپنی ٹیم اور مقامی پولیس کے ہمراہ حاجی ابراہیم گوٹھ کورنگی انڈسٹریل ایریا میں مہلک, ضرر رساں اور متعدی ٹھوس مواد اور اشیاء غیر محفوظ طریقوں سے تلف کرنے والی کمپنی یونیک پلاسٹک ڈسپوزل سیل کردی.
تفصیلات کے مطابق ضلع کورنگی کی مانیٹرنگ ٹیم نے پتہ چلایا تھا کہ مذکورہ کمپنی مجوزہ ماحولیاتی طریقوں کو نظر انداز کرتے ہوئے روایتی غیر محفوظ طریقوں سے مہلک اور متعدی ٹھوس و طبی فضلے کو تلف کرتی ہے جس کا نوٹس لیتے ہوئے ڈی جی سیپا نے فوری کارروائی کرتے ہوئے فیکٹری سیل کردی.
اس موقع پر ڈی جی سیپا کا کہنا تھا کہ ہر وہ سرگرمی جس سے ماحول کو ناقابل تلافی نقصان پہنچتا ہو اس کے تسلسل کو قطعی برداشت نہیں کیا جائے گا اور ایسی نقصان دہ سرگرمیوں میں ملوث عناصر کو قرار واقعی سزا دی جائے گی.
واضح رہے کہ سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحولیات 2014 کے تحت ہر قسم کے ضرر رساں ٹھوس فاضل مواد کو مجوزہ سائینسی طریقوں سے منظور شدہ انسنیریٹر میں ڈال کر تلف کرنا ضروری ہے بصورت دیگر کسی اور طریقے سے مواد تلف کرنے والوں کو مذکورہ قانون کے تحت سزا ہوسکتی ہے

 
 
28% monitored vehicles emit smoke above limits in Karachi

KARACHI: Nearly 28 percent of environmentally monitored vehicles  plying on the roads of Karachi emit smoke above the limits set by Sindh Environmental Quality Standards 2014 (SEQS).
This was revealed from the monthly data of Sindh Environmental Protection Agency pertaining to its vehicular emissions monitoring carried out in September 2020 at various busy spots of the city.
SEPA conducts this exercise regularly in compliance with the directives of Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtuza Wahab.
According to details, a team of SEPA headed by Deputy Director Sada Bukhsh randomely checked the different types of vehicles at 4K Chowrangi, Malir Halt, Singer Chowrangi, Landhi Babar Market, Brooks Chowrangi, Defence More, Korangi Crossing, Veta Chowrangi, Chamra Chowrang, Qayyumabad and New Town during the month and found one out of every four vehicles emitting gases more than prescribed limits.
Data says out of total 275 checked vehicles the emissions of 79 vehicles were not within the limits set by SEQS. SEPA penalized them of total 79 thousand rupees with the help of Traffic Police.
It may be pointed out that according to the Section 15 of Sindh Environmental Protection Act 2014 causing the vehicular emissions deviating from their standards is a punishable offence.

 
 
کراچی میں اوسطا" اٹھائیس فیصد گاڑیاں حدود سے زائد دھواں دیتی ہیں

کراچی:.شہر میں اوسطا" اٹھائیس فیصد گاڑیاں صوبائی ماحولیاتی معیارات کی مقررہ حدود سے زیادہ دھواں دیتی ہیں
تفصیلات کے مطابق حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون, ماحولیات, موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایات پر ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ (سیپا) گاڑیوں کی باقاعدگی سے ماحولیاتی نگرانی کرتا ہے
سیپا کے گاڑیوں کے ماہانہ ماحولیاتی اعداد و شمار برائے ستمبر 2020میں انکشاف ہوا ہے کہ ہر چار میں سے ایک گاڑی قابل برداشت حد سے زیادہ آلودگی پھیلاتی ہے.
سیپا نے ستمبر 2020 میں شہر کی مختلف شاہراہوں پر 275 گاڑیوں کی چیکنگ کی جو سیپا کی ٹیموں نے ڈپٹی ڈائریکٹر صدا بخش کی نگرانی میں فور کے چورنگی, ملیر ہالٹ, سنگر چورنگی, لانڈھی بابر مارکیٹ, بروکس چورنگی, ڈیفنس موڑ, کورنگی کراسنگ, ویٹا چورنگی, چمڑہ چورنگی, قیوم آباد اور نیوٹاون کی شاہراہوں پر مقامی ٹریفک پولیس کی مدد سے کی.
چیک کی گئی کل 275گاڑیوں میں سے 79 گاڑیاں مقررہ حدود سے زائد دھواں دیتی پائی گئیں جن پر ٹریفک پولیس کے ذریعے 79 ہزار روپے جرمانہ بھی کیا گیا.
واضح رہے کہ سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014 کے تحت مقررہ حدود سے زائد کسی بھی قسم کا فضائی اخراج قابل سزا جرم ہے


 
 
SEPA closes four plastic manufacturing units in Site area

KARACHI: A team of Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) District West headed by Director Karachi Office raided four plastic bags manufacturing units in Site industrial area on Wednesday here.
The raids were made on the directives of Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barister Murtuza Wahab.
The SEPA team found all the four units were manufacturing non-biodegradable plastic bags which are prohibited in Sindh. Taking action on the spot with the help of local police, the team stopped their operations since their manufacturing activity is the violation of ban on plastic bags in Sindh.
It may be pointed out that the use of non-biodegradable plastic bags is hazardous for human health and environment. Being undissolvable after their use they remain in land environment causing serious negative impact on the soil with their toxic effects. They also choke swerage system, struck in electric supply vires and hurt the aesthetics of living environment.
In view of this Government of Sindh had banned the use, sale, purchase and manufacturing of non-biodegradable plastic bags in the province taking the lead as the first provincial government which took such important environmental preventive step and created an example for others to follow.
 
 
سیپا نے ممنوعہ پلاسٹک بیگز کے چار کارخانے بند کرادئیے

کراچی(7آکتوبر): ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ( سیپا) ضلع غربی نے ایک بڑی کارروائی کرتے ہوئےسائیٹ صنعتی زون میں ممنوعہ پلاسٹک بیگز بنانے کے چار بڑے کارخانوں میں کام بند کروا دیا، کارروائی سندھ حکومت کے ترجمان مشیر  قانون ، ماحولیات و ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایت پر کی گئی۔ کامیاب کارروائی پر مشیر ماحولیات بیرسٹر مرتضی وہاب نے سیپا کی ٹیم کی کارروائی کو قابل تحسین قرار دیا اور کہا کہ ناقابل تحلیل پلاسٹک بیگز کی تیاری اور فروخت صوبے بھر میں ممنوع ہے اس قسم کے کاروبار جس سے ماحولیاتی آلودگی میں اضافہ ہو کا کرنا قطعی طور پر درست عمل نہیں ہے انہوں نے کہا کہ کاروباری حضرات ماحولیاتی آلودگی کے خاتمے میں حکومت کا ساتھ دیں۔ اس موقع پر ڈائریکٹر کراچی سیپا وارث علی گبول نے کہا کہ چاروں فیکٹریوں میں ممنوعہ اور ناقابل تحلیل پلاسٹک بیگز تیار کئے جارہے تھے جو ماحولیاتی قوانین پر پورا نہیں اُترتے، غیر معیاری پلاسٹک بیگز ماحولیاتی آلودگی کا بڑا سبب ہیں مزکورہ فیکٹریاں ممنوعہ پلاسٹک مصنوعات کی تیاری میں ملوث تھیں اور ماحولیاتی قوانین کی مسلسل خلاف ورزی کی مرتکب ہورہی تھیں۔ ڈائریکٹر کراچی سیپا وارث علی گبول نے مزید کہا کہ صوبائی محکمہ ماحولیات نے ناقابل تحلیل پلاسٹک بیگز کی تیاری اور فروخت پر پابندی عائد کررکھی ہے سیپا کی ٹیمیں ایسے غیر قانونی دھندوں کے خلاف کارروائیاں کررہی ہیں عوام کی جانب سے بھی ایسے کاروبار کی نشاندہی کی جانا ضروری ہے انہوں نے کہا کہ ضلع غربی سمیت سندھ بھر میں ممنوعہ پلاسٹک بیگز کی تیاری اور فروخت کے خلاف کارروائیاں جاری رہیں گی۔
 
 
SEPA to introduce Cleaner Production Policy

KARACHI: On the directives of Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change, and Coastal Development Barrister Murtuza Wahab, Sindh Environmental Protection (SEPA) has prepared the initial draft of the Cleaner Production Policy with the help of a few consultants and has already initiated the consultative process to get views of stakeholders to finalize it soon. 
SEPA with the help of WWF, Pakistan engaged M/s Management Environmental and Social Solutions Company (MESSCO) Pvt. Ltd as a lead Policy Consultant and M/s Indus Environmental Engineering Services (IEEC) as a co consultant for making the final draft of the referred policy. 
In this regard, it conducted a consultative workshop in collaboration with WWF-Pakistan and Indus Messco Consortium (IMC) on Wednesday here in a local hotel (Regent Plaza) with renowned environmental experts to take their views to further hone the draft of the referred policy to make it a comprehensive document which can be put into practice smoothly with discernible results. 
Speaking at the workshop, Waqar Hussain Phulpoto, Additional Director General, SEPA said Cleaner Production Policy is actually a way-head to environmental legislative mechanism to provide detailed guidelines to manufacturing and services sectors for safer production practices.   
Defining its basic concept, he said that cleaner production is the continuous application of an integrated preventive environmental strategy applied to processes, products, and services to increase overall efficiency and reduce risks to humans and the environment. 
He further said that the initiative has been taken to develop a robust cleaner production policy and in the later stages, the document may provide a framework for implementation of certain environmental standards to address the environmental challenges as a result of industrial operations in Sindh. 
“Once this policy is approved Sindh will be the leading province to introduce Cleaner Production in Pakistan”, he added.
Jibran Khalid Sr. Environmental Specialist and the leading author of the initial draft policy document on cleaner production shed light on the key aspects of the policy, covering the objectives, outcomes, and proposed implementation phases of the policy on cleaner production during his presentation. 
The action plan based on the policy document will consist of three phases he added; short-term, mid-term and long-term, with defined activities and objectives under each phase. 
During his presentation, he further said that a Cleaner Production Cell (CPC) may be established in SEPA and this strategy will enable SEPA to achieve higher acceptance of the policy by the industrial associations and other stakeholders. 
Followed by this presentation the meeting participants were divided in (04) working groups in order to have a guided and coordinated effort to review the initial draft of the cleaner production policy and implementation plan. 
Irfan Ahmed, a representative of UNIDO, updated the forum that the cleaner production is already being implemented within a number of industrial units on a voluntary basis but there is a need of a systematic and effective defined policy to further strengthen the system. 
He suggested that SEPA once the policy is approved may engage certified auditors to ensure the policy implementations within industries. The incentive-based approach needs to be adopted by SEPA to reward the industries already taking cleaner production initiatives across the province.
Dr Kishan Chand Mukwana policy advisor of IMC, Love Kumar of WWF also spoke on the occasion. 
Participants included representatives from governmental institutions, manufacturing associations, financial institutions, and private sector organizations among others.
SEPA is planning to organize more consultative workshops in order to take all the relevant stakeholders on board before the proposed policy document is approved by the Government of Sindh (GoS).
It may be pointed out that the policy consultants followed the standard policy development cycle and in line with the standardized practice for policy development, IMC organized the present workshop which was planned in continuation of the multiple consultation sessions, key informant interviews and consultative workshops organized in last few months. 
During these workshops and consultation meetings, a number of stakeholders from various government departments, NGOs, and Industrial Associations upon directions of SEPA and WWF, Pakistan were approached by IMC team. 
WWF-Pakistan is taking lead in this task of SEPA as both had signed a Memorandum of Understanding (MoU) in the year 2018, under the 
 umbrella of that MoU both parties agreed to work together for the betterment of the environment in the region. 

 
     
 
سندھ میں ماحول دوست پیداواری پالیسی متعارف کرانے کا فیصلہ

کراچی: حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیراعلیٰ سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایات پر ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ(سیپا) نے مختلف ماحولیاتی مشیروں کی مدد سے سندھ میں ماحول دوست پیداواری پالیسی متعارف کرانے کے لیے پالیسی کا ابتدائی مسودہ تیار کرلیا ہے جسے مختلف سطحوں پر مشاورتی مراحل سے گزار کر حتمی منظوری دی جائے گی جس پر عمل کرتے ہوئے صوبے کے تمام پیداواری اور خدمات کے شعبہ جات اپنے سارے امور میں ایسی ٹیکنالوجی اور سرگرمیوں کو ملحوظ خاطر رکھیں گے جن سے انسانی صحت اور ماحول کو نہ ہونے کے برابر نقصان ہوتا ہو اور ہونے والے نقصان کی بھی بہ آسانی تلافی ہوسکتی ہو۔ 
اس ضمن میں پالیسی کا حتمی مسودہ تیار کرنے کے لیے  سیپا نے ڈبلیو ڈبلیو ایف پاکستان کی مدد سے منیجمنٹ انوائرنمنٹل اینڈ سوشل سولیوشنز کمپنی بطور کلیدی مشیر اور انڈس انوائرنمنٹل انجینئرنگ سروسز بطور شریک مشیر نامزد کردیا ہے۔  
اس حوالے سے سیپا نے آج(بدھ کے روز) ایک مقامی ہوٹل(ریجنٹ پلازہ) میں ڈبلیو ڈبلیو ایف پاکستان اور انڈس میسکو کنسورشیم کی شراکت سے معروف ماحولیاتی ماہرین، سرکاری افسران اور ماحولیاتی تدریس سے جڑے ماہرین کا مشاورتی ورکشاپ کرایا جس میں پالیسی کے مسودے پر ان کی آراء لی گئیں تاکہ اس کے مندرجات کو زیادہ سے زیادہ موثر بنایا جاسکے۔ 
ورکشاپ سے خطاب کرتے ہوئے سیپا کے ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل وقار حسین پھلپوٹو نے کہا کہ ماحول دوست پیداواری پالیسی سندھ میں متعارف کرنے کا مقصد تمام پیداوار ی اور خدمات کی سرگرمیوں کی لاگتوں کو کم کرتے ہوئے انہیں ماحول دوست بنانا ہے تاکہ زیادہ سے زیادہ کاروباری حضرات پالیسی میں دی گئی تجاویز پر عمل کرتے ہوئے پیداواری شعبے کو ایک مثالی ماحول دوست شعبہ بنا سکیں۔ 
انہوں نے کہا کہ جیسے ہی پالیسی کا حتمی مسودہ تیار ہوجائے گا تو اسے منظوری کے لیے پیش کردیا جائے گا جس کے بعد سندھ ملک کا پہلا صوبہ ہوگا جس نے پیداواری سرگرمیوں کے حوالے سے باقاعدہ ایک پالیسی متعارف کرائی ہوگی۔ 
پالیسی کے ابتدائی مسودے کے مصنف اور معروف ماحولیات دان جبران خالد نے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پالیسی پر عملدرآمد سے قبل سیپا کو اپنے دفتر میں ماحول دوست پیداواری سیل کھولنا چاہیے تاکہ پالیسی پر عملدرآمد کا باریک بینی سے جائزہ لیا جاسکے اور ہر قدم پر عملد رآمد کرنے والوں کو رہنمائی فراہم کی جاسکے۔ 
یونائٹیڈ نیشنز انڈسٹریل ڈیولپمنٹ آرگنائزیشن کے نمائندے عرفان احمد نے پالیسی کے مسودے پر رائے دیتے ہوئے کہا کہ اس قسم کی پالیسی بہت سے صنعتی ممالک میں پہلے ہی عملدرآمد ہورہی ہیں اور سندھ میں اس کے متعارف کرانے کے بعد ہمارا ملک بھی ایسی اقوام میں شامل ہوجائے گا جو اپنی پیداواری سرگرمیوں میں ہر لحاظ سے ماحولیاتی حفاظت اور پائیدار کا پورا خیال رکھتے ہیں۔ 
ورکشاپ سے انڈس میسکو کنسورشیم کے صلاح کار ڈاکٹر کشن چند مکوانا اور ڈبلیو ڈبلیو ایف پاکستان کے لو کمار نے بھی خطاب کیا۔ 
اس سے قبل بھی ڈبلیو ڈبلیو ایف پاکستان کے ساتھ مل کر سیپا متعدمشاورتی سیشن کراچکا ہے اور مستقبل قریب میں چند مزید سیشن منعقد کرائے جائیں گے تاکہ تمام شعبہ جات کے ماہرین کی آراء سے استفادہ حاصل کرنے کے بعد پالیسی کو حتمی شکل دی جائے۔ 
 
     
 
SEPA shuts 100 illegal battery kilns in district West
Action against shopkeepers using prohibited plastic bags
KARACHI: On the directives of Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtuza Wahab, different monitoring teams of Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) have taken actions against polluters in districts West and Central on Wednesday here.
According to details, a team of SEPA district West under the supervision of Acting Director SEPA Karachi Region Waris Ali Gabol raided in old Cattle Colony in Surjani and shuts 100 illegal setups where batteries were being melted to recycle them illegally. The action was taken with the help of local police and administration. 
The team found that all the 100 kilns were operating without obtaining any registration from any authority and were also not following any precautionary measures to control their emissions. Also unauthorized recycling of any product is strictly prohibited by law. It was also observed that owing to burning of batteries huge amount of air pollution was being generated causing respiratory and coronary diseases in residents of nearby areas. 
In another action, the monitoring team of district Central headed by its incharge Kamran Khan visited various markets of F.B Area and Karimabad and seized the prohibited plastic bags which were being used by shopkeepers to offer grocery and other items to their buyers. Shopkeepers were directed to never use non-biodegradable plastic bags which are banned throughout Sindh and in case of otherwise legal action will be taken against the violators. 
 
 
سیپا نے ضلع غربی میں بیٹریاں پگھلانے کی سو غیر قانونی بھٹیاں بند کرادیں 
ضلع وسطی میں ممنوعہ پلاسٹک کی تھیلیاں استعمال کرنے والوں کے خلاف کارروائی

کراچی: حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلیٰ سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضیٰ وہاب کی ہدایت پر ادارہ تحفظ ماحولیات کی ضلع غربی کی ٹیم نے سرجانی میں پرانی بھینس کالونی میں واقع بیٹریاں پگھلانے کی سو غیر قانونی بھٹیا ں بند کرادیں جبکہ ضلع وسطی کی چھاپہ مار ٹیم نے کریم آباد اور ایف بی ایریا میں مختلف مارکیٹوں میں ممنوعہ پلاسٹک بیگز استعمال کرنے والے دکانداروں کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے مذکورہ پلاسٹک بیگز موقع پر ہی ضبط کرلئے اور دکانداروں کو پابندکیا گیا کہ آئندہ وہ صرف قابل تلف پلاسٹک بیگز میں گاہکوں کو سودا سلف فراہم کریں گے بصورت دیگر ان کے خلاف قانونی چارہ جوئی کی جائے گی، دونوں کارروائیاں پولیس اور مقامی انتظامیہ کی مدد سے کی گئیں۔ 
ضلع غربی کے علاقے سرجانی میں واقع بھینس کالونی میں بیٹریاں پگھلانے کی سو غیر قانونی بھٹیوں کو بند کرنے کی کارروائی سیپا کی ٹیم نے کراچی ریجنل آفس کے قائم مقام ڈائریکٹر وارث علی گبول کی قیادت میں کی گئی جہاں ٹیم نے دیکھا کہ بھٹیوں کو نہ ہی کسی قانون کے تقاضے پورے کرتے ہوئے قائم کیا گیا تھا اور نہ ہی ماحولیاتی قوانین پر عملدرآمد کیا جارہا تھا اس کے علاوہ بیٹریاں پگھلانے کے عمل سے علاقے میں شدید فضائی آلودگی پھیل رہی تھی جس سے رہائشی تنفس، جلد، اعصاب اور قلب کے امراض میں مبتلا ہورہے تھے ساتھ ہی ساتھ حفاظتی معیارات پورے کئے بغیر بیٹریاں پگھلانے سے ماحول کے ساتھ ساتھ انسانی جانوں کو بھی شدید خطرہ ہوتا ہے، مزید یہ کہ غیر مستند طریقوں سے بیٹریوں کی ری سائکلنگ(دوبارہ قابل استعمال بنانا) کی کسی بھی قانون کے تحت اجازت نہیں ہے۔ 
اتنی بڑی تعداد میں غیر قانونی بیٹریاں پگھلانے کے بھٹوں کو موثر کارروائی کے ذریعے بند کرانے پر مشیر ماحولیات مرتضیٰ وہاب نے ڈی جی سیپا نعیم احمد مغل اور ضلع غربی کی ٹیم کی کارکردگی کو سراہا اور اسی جذبے اور لگن کے ساتھ ماحول کے تحفظ، بحالی اور بہتری کے لیے آلودگی کی روک تھام کی کارروائیاں جاری رکھنے کی ہدایات دیں۔ 
جبکہ ضلع وسطی میں ممنوعہ پلاسٹک بیگز استعمال کرنے والے دکانداروں کے خلاف کارروائی سیپا ضلع وسطی کی ٹیم نے انچارج ضلع وسطی  کامران خان کی قیادت میں کی
 
     
  آج مورخہ  24 ستمبر 2020 کو، لو کاربن گیس ٹیکنالوجیز اور پریکٹسز کے  حوالے سے ورلڈ وائڈ پاکستان اور سندھ انوائرنمنٹل پروٹیکشن ایجنسی کے باہمی اشتراک سے کراچی کے مقامی ہوٹل میں ورکشاپ کا انعقاد کیا گیا۔قرآن پاک کی تلاوت کے بعد جناب گلزار فرروز،پروجیکٹ ڈائریکٹر اور چیئرمین  پاکستان ٹینرز ایسوسی ایشن نے خطاب کیا اور کہا کے ہم کمبائنڈ ایفولنٹ ٹریٹمنٹ پلانٹ کی  استعداد کو بہتر بنانے کے حوالے سے کام کر رہے ہیں اور اس حوالے سے جدید   ٹیکنولوجی کا حصول ہماری ترجیح ہے،انہوں نے مزید کہا کہ لیبر گڈز کی درآمد سے پاکستان اہم زرمبادلہ حاصل کرتا  ہے لہذا ضرورت اس امر کی ہے کہ نہ صرف مقامی  ماحولیاتی قوانین کی پابندی کے لیے لیے بلکہ بین الاقوامی  اسٹینڈز کو پورا کرنے  کے حوالے سے بھی ہم کام کریں  ،اور ٹینریز  ایسو سیشن پاکستان ہر طرح کے ویسٹ مینجمنٹ کو کنٹرول کرنے حوالے سے بھی مربوط طریقے سے کام کر رہی ہے،ڈاکٹر آصف ،چیئرمین ڈیپارٹمنٹ آف انوائرمنٹل انجینئرنگ این ای ڈی   یونیورسٹی کراچی نے لو کاربن گیس ٹیکنالوجی اور اس کی  عمل پذیری  کے حوالے سے خطاب کیا اور اس کے مختلف پہلوؤں پر روشنی ڈالی،مزید برآں انہوں نے کہا کہ اس بات کی اشد ضرورت ہے کہ ویسٹ مینجمنٹ کو کنٹرول کرنے کے حوالے سے سے ایک مربوط اور سیر حاصل نظام عمل میں لایا جائے،انہوں نے مزید کہا کہ کہ  ماحولیاتی ڈسٹرکشن   کی وجہ سے انسانی صحت پر  جو نقصان ہوتا ہے اس کا احاطہ ممکن نہیں،انہوں نے مزید کہا کے  ویسٹ اصل میں ریسورس ہے اور اس حوالے سے ہمیں سرکلر اکنامی کے کونسیپٹ پر توجہ دینے کی ضرورت ہے تاکہ ہم  طرح کے ویسٹ کو واپس استعمال کرنے کے قابل بنا سکیں  آس کے بعد ڈبلیو ڈبلیو ایف پاکستان کی جانب سے  جناب ارجمند اجمد نے کلینر پروڈکشن اور لیدر انڈسٹری کے حوالےحوالےسے  خطاب کیا اور کہاں کے انوارمنٹ فٹ پرنٹ کو کنٹرول کرنے کے لئے لیے یہ بات نہایت اہم ہے کہ کہ ہم ویسٹ کو اس کے اورینج پر ہی کنٹرول کریں نہ کہ صرف اس کی ڈسپوزیبل پر توجہ دیں ،اس کے بعد ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل  سندھ انوائرمنٹل پروٹیکشن ایجنسی جناب وقار حسین پھلپوٹو نے اپنے خطاب میں کہا کہ سپا لیدر انڈسٹریز کی نگرانی کا کام بخوبی کر رہی ہے اور اس حوالے سے سے بہت ساری لیدر انڈسٹری کو پراسیکیوٹ بھی کیا گیا ہے اور ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم ویسٹ کو ری سائیکل اور دوبارہ استعمال کرنے کے قابل بنانے پر  توجہ دیں ،آخر میں سیکرٹری ماحولیات ، ‏کلائمیٹ چینج اور کوسٹل ڈویلپمنٹ حکومت سندھ جناب اسلم غوری صاحب نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں نالج شیئرنگ کی ضرورت ہے اور اس طرح کی ورکشاپ  اس حوالے سے برین سٹارمنگ کا  کام کرتی ہیں ،انہوں نے تمام اورگنایزر کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ  میرا دفتر  اس حوالے سے نئی تجاویز کو خوش آمدید کہے گا ،انہوں نے آخر میں کہا کہ مربوط ترقی ہی کامیابی کی ضامن ہے اور اس کے ماحولیاتی قوانین کی پاسداری کی ضرورت ہے  
     
     
     
 
بن قاسم ٹاؤن میں صنعتی گندہ پانی صاف کرنے کے پلانٹ کی تنصیب
مشیر ماحولیات مرتضی وہاب نے پلانٹ کا افتتاح کردیا
واٹر کمیشن کی ہدایات پر تمام صنعتیں ٹریٹمنٹ پلانٹ لگائیں: مشیر ماحولیات
گندہ پانی براہ راست سمندر میں بہانے والی صنعتوں کے خلاف کارروائی کا حکم

کراچی:حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایات پر عمل کرتے ہوئے بن قاسم ٹاؤن میں واقع کپڑے کی مل بنام رجبی ٹیکسٹائل مل نے اپنی صنعت سے نکلنے والے کیمیکل زدہ نقصان دہ پانی کو بے ضرر کرنے کے بعد بہانے کے لیے ٹریٹمنٹ پلانٹ کی تنصیب کردی ہے جس کا افتتاح مشیر ماحولیات بیرسٹر مرتضی وہاب نے کیا۔
پلانٹ کی تنصیب پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے مشیر ماحولیات نے اس موقع پر کہا کہ کپڑا مل سے نکلنے والا تمام گندہ پانی اب بے ضرر ہونے کے بعد براستہ ملیر ندی سمندر میں گرے گا جس سے سمندری ماحول کو ہونے والے نقصان میں کچھ کمی آئے گی اور سمندر سے جڑی تمام مصنوعات بشمول سمندری غذا کے معیار پر بھی تھوڑا بہت فرق پڑے گا تاہم رجبی ٹیکسٹائل مل کی طرح دیگر تمام ایسی صنعتیں جن کی پیداواری سرگرمیوں سے نقصان دہ پانی کا اخراج ہوتا ہے وہ بھی اپنے ٹریٹمنٹ پلانٹس جلد از جلد لگواکر ماحولیاتی قوانین پر عمل کرنے کا ثبوت دیں تاکہ صنعتی آبی آلودگی کی بھرپور روک تھام کرتے ہوئے اپنے سمندری و آبی ماحول کو پوری طرح بچایا جاسکے۔ 
انہوں نے کہا کہ صنعتیں اگر اپنی پیداواری سرگرمیوں کے دوران تمام ماحولیاتی تقاضوں کو پورا کریں تو ان کی مصنوعات کا معیار بہتر ہوگا اور عالمی منڈیوں میں ان کی طلب میں اضافہ ہوگا جس سے برآمدات میں اضافے کے باعث نہ صرف زرمبادلہ کے ذخائر بڑھیں گے بلکہ ایسی صنعتوں کے منافع جات میں بھی بھرپور اضافہ ہوگا۔
انہوں نے کہا کہ سندھ میں آبی آلودگی کی روک تھام کے لیے عدالت عظمی کی ہدایت پر بننے والے واٹر کمیشن کی ہدایات کے مطا بق سندھ کی ایسی تمام صنعتیں جن کی پیدواری سرگرمیوں سے نقصان دہ پانی پیدا ہوتا ہے ان پر لازم ہے کہ ایسے پانی کو بہانے سے قبل وہ اچھی طرح بے ضرر بناکر قریبی آب گا ہ میں بہائیں بصورت دیگر ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ خلاف ورزی کرنے والی صنعتوں کے خلاف سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول کے تحت حسب معمول قانونی کارروائی جاری رکھے گا۔
انہوں نے ادارہ تحفظ ماحولیات کے عملے اور افسران کو اس موقع پر ہدایات جاری کیں کہ وہ دیگر صنعتوں کی ماحولیاتی نگرانی تیز تر کردیں اور باہمی مشاورت کے ذریعے زیادہ سے زیادہ صنعتوں سے ٹریٹمنٹ پلانٹ لگوائیں تاکہ صنعتی ترقی کا پہیہ بھی چلتا رہے اور ماحول کو بھی کسی قسم کا نقصان نہ ہو۔
ٹریٹمنٹ پلانٹ کے افتتاح کے موقع پر ای پی اے سندھ کے ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل، ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل وقار حسین پھلپوٹو، ڈپٹی ڈائریکٹرز وارث گبول اور منیر احمد عباسی کے علاوہ رجبی ٹیکسٹائل مل کی اعلی انتظامیہ بھی اس موقع پر موجود تھی۔
 
 
Wastewater treatment plant begins operations at Bin Qasim Town
Wahab inaugurates the plant having capacity of 525k gallon/per day

KARACHI: On the directives of Spokesperson to Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtuza Wahab, a textile mill in Bin Qasim Town M/s Rajby Textile Mills has installed its own wastewater treatment plant to neutralize the toxic effects of its effluent before releasing it into any water body. 
Inaugurating the treatment plant, Barrister Murtuza Wahab expressed his satisfaction and said that from now industrial wastewater of one more factory will be released into the sea through Malir River after fully subsiding its harmful effects. “Though this will help reduce pollution load slightly on our marine environment therefore to fully overcome the menace of industrial water pollution all industries which release harmful wastewater should install their in-house treatment plan without further delay. 
He said that compliance with environmental laws with regard to industrial air and water pollution control will enhance the image of our manufacturing units and demand of their products will rise in global markets. This will not only enhance our export giving a spike in our foreign exchange reserves but simultaneously it will also help grow the profitability of such industries. 
He said that those industries which release their wastewater without any treatment will be dealt in accordance with the concerned clauses of Sindh Environmental Protection Act 2014 and in this regard Sindh Environmental Protection Agency should further beef up its monitoring activities to never let anyone harm our natural environment. 
He further said that as per directives of the Water Commission - which was constituted on the orders of Supreme Court of Pakistan - every wastewater-generating industry must treat its effluent before releasing it into any water body. To implement the directives of the Water Commission, SEPA should ensure installation of treatment plants at all effluent-generating industries so that industrial growth may continue without harming our environment. 
On this occasion DG SEPA Naeem Ahmed Mughal, Additional DG Waqar Hussain Phulpoto, Deputy Directors Muneer Ahmed Abbasi  and Waris Gabol were also present besides top management of M/s Rajby Textile Mill
 
 
وفاق کراچی کے مسائل حل نہیں کرسکتا گیس تو فراہم کرے، بیرسٹر مرتضی وہاب
صنعتوں کو گیس کی فراہمی کے لیے ہرممکن مدد کریں گے، ترجمان سندھ حکومت کا کاٹی سے خطاب
کراچی (22ستمبر)
سندھ حکومت کے ترجمان مشیر  قانون ، ماحولیات و ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب 
نے کہا ہے کہ وفاق کراچی کے بزنس مین کے مسائل حل نہیں کرسکتا تو کم از کم اسے گیس تو دے، گیس کے حصول کے لیے صنعتکاروں کو قانونی مدد سمیت ہر طرح کا تعاون فراہم کرنے کے لیے تیار ہیں۔ انہوں نے کورنگی ایسوسی ایشن آف ٹریڈ اینڈ انڈسٹری (کاٹی) کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ان خیالات کا اظہار کیا۔ اپنے خطاب میں بیرسٹر مرتضی وہاب نے مزید کہا کہ گیس کے معاملے پر سندھ حکومت قانونی طور پر آپ کی مدد کے لیے تیار ہیں۔ جس صوبے میں گیس پیدا ہوتی ہے آئینی طور پر پہلا حق سندھ کا ہے۔ بجلی اور گیس وفاقی حکومت کے دائرہ اختیار میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ٹریٹمنٹ پلانٹ کے حوالے سے ہم قانون سازی کریں گے،اسی سال اس کا قانون منظور کرائیں گے،واٹر بورڈ کا معاملہ بھی حل کرائیں گے۔انڈسٹریل سالڈ ویسٹ کے معاملے پر بزنس کمیونٹی کے ساتھ ہوں۔  انہوں نے کہا کہ بزنس ایڈوائزری کونسل کی بات  وزیر اعلیٰ کے سامنے رکھوں گا۔ انہوں نے کہا کہ وفاق کے اعلان کردہ 11سو ارب کے پیکج پر بزنس کمیونٹی بھی نظر رکھے۔ اس میں سے 750 ارب سندھ حکومت دے رہی ہے جب کہ کراچی سے 14 سیٹیں لینے کے بعد وفاق نے ساڑھے تین سو ارب کا وعدہ کیا اور دعا ہے کہ ان کا حال بھی پہلے اعلان کیے گئے 162 ارب روپے جیسا نہ ہو۔ انہوں نے بتایا کہ کاٹھور میں پام آئل کی پیدوار کا پائلٹ پرجیکٹ سے جلد خوش خبری ملے گی۔ اس علاوہ پام کی کاشت کے لیے 16 سو ایکٹر زمین حاصل کرلی گئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ دھابیجی سے کراچی جنوبی کے لیے 30 لاکھ گیلن یومیہ پانی کی فراہمی لائن بھی بچھائی جارہی ہے۔
اس موقع پر صدر کاٹی شیخ عمر ریحان، سینیٹر عبدالحسیب خان، چیئرمین و سی ای او کائٹ زبیر چھایا، خالد تواب، سلیم الزماں، سینئر نائب صدر محمد اکرام راجپوت، نائب صدر سید واجد حسین، گلزارفیروز اور دیگر نے بھی خطاب کیا، جبکہ فرحان الرحمان، مسعود نقی، ایس ایم یحیٰ، جوہر قندھاری، دانش خان اور دیگر بھی موجود تھے۔ قبل ازیں شیخ عمر ریحان نے کہا کہ گیس کی عدم فراہمی کی وجہ سے صنعتوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے اور موجودہ حالات میں صنعتی پیداوار کے متاثرہونے کا مطلب ملکی معیشت کی تباہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے ساحلی علاقوں میں سورج مکھی کی کاشت سے کثیر زرمبادلہ بچایا جاسکتا ہے اور سلسلے میں وفاقی حکومت اپنا کردار ادا کرے۔ ان کا کہنا تھا کہ کورنگی صنعتی علاقے میں سیوریج اور پانی کی فراہمی کے شدید مسائل ہیں انھیں فوری حل کروانے کے لیے سندھ حکومت کردار ادا کرے۔ انہوں نے اس موقع پر صنعتکاروں کے مسائل حل کرنے میں بے مثال کردار ادا کرنے پر ایڈمنسٹریٹر کورنگی شہریار گل میمن کے لیے گولڈ میڈل دینے کا اعلان بھی کیا۔ خالد تواب نے کہا کہ اگر اسمبلی کے ارکان گیس کے معاملے پر گورنر ہاؤس پر دھرنا دیں گے تو بزنس کمیونٹی آپ کے ساتھ ہوگی۔ 

اس موقعے پر کاٹی کے سلیم الزمان، گلزار فیروز، ڈی دی کورنگی شہریار گل میمن اور ڈی جی سیپا نعیم مغل ، محکمہ ماحولیات کے افسران وقار پھلپوتہ ،وارث گبول ، منیر عباسی، اور دیگر بھی موجود  تھے۔
 
 
Today,on dated 22/9/20, a consultative meeting was held at Korangi  association of trade and industry KATI, advisor to CM Sindh for Environment, Climate Change and Costal Development Barrister Murtaza Wahab was the chief guest, Director General SEPA Mr Naeem Ahmed Mughal, Additional Director General SEPA Mr Waqar Hussain Phulpoto along with other eminent personalities from industrial sector and other fields of life were present at the occasion. After the recitation of Holy Quran, a welcome address was given by the president of KATI , Sheikh Umer Rehan. He gave recommendations to the chief guest and said that the coastal area of Sindh is fertile for the cultivation of sunflower and Pakistan can save up to three billion US dollars per annum in regard of edible oil import. He said that KATI is willing to share it's expertise in this regard with government of Sindh. He further underscored that the cost of doing business is getting higher and he urged that installation of waste water treatment plants are not possible for small industrial units as it's only doable for exporters. He urged a legal amendment in this regard, he further said that we are requesting to expedite the process of working of five combined effluent treatment plants as PC for the project has already been approved. He also urged to make an advisory committee on trade and industry in liaison with KATI for facilitation. Mr. Saleem uz Zaman, the incoming president of KATI, also spoke and said we are already complying with Sindh environmental quality standards but we need to have combined effluent treatment plant on urgent basis. He also said that in this regard proposed legal amendment has already been forwarded to the concerned quarter, and we need facilitation in this regard.He further said that there is a need of proper system of procedure for conducting public hearing by Sepa as public hearing used to be hijacked from some elements due to vested interests. Mr Gulzar Firoz also said that KATI needs government help to expedite different industrial matters, he said that Korangi is turning into a waste dumping site. Mr Zubair Chhaya has said that Karachi has been suffering badly because of lack of coordination among different civic agencies, he said that we are planning to harvest an urban forest at Malir river. Mr Khalid Tawab has said that there is a need of having a proper infrastructure in city on SOS basis, Mr Abdul Haseeb Khan has said business community and government needs to be on same page, chief guest Mr Murtaza Wahab has said that KATI is a solution oriented association, and if business gets secure, Pakistan will be secure, he further said that federal government has not given priority to Karachi and Sindh and we need action oriented plans not merely announcements from federal government. He further said that as per constitution Sindh demands it's right on gas availability from federal government, he said that he endorsed the feelings and thoughts of KATI,  he said that at Dhabeji special economic zone is being established and government of Sindh is working on it. He further said he is ready to sit with KATI on a matter for installation of treatment plants ,and the matter will be presented to the Sindh assembly and it will get passed from Sindh assembly this year.He said that for the making of business advisory committe, he will talk to Chief Minister Sindh , he also elaborated that Sindh government has already conceived an idea at Kathore near Thatta for the cultivation of sun flower and Palm trees.He also extended his help to facilitate the matters of KATI with Karachi water and sewerage board, he also appreciated the working of Deputy Commissioner and municipal administrator Korangi Mr Shehyar Memon. He said that he and his party will always be ready to help out KATI. He also briefed about the initiatives taken by Sindh government for the betterment of citizens.
 
 
(پریس ریلیز) 
محکمہ تحفظ ماحولیات(  سیپا)ضلع ٿرپارکر .

 ادارہ تحفظ ماحولیات  ضلع ٿرپارکر شہر کے مختلف علاقوں میں کاروائیاں پلاسٹک بیگس سپلائی وفروخت کرنیوالے ہول سیلرز و ریٹیلرز کی دکانوں پر چھاپے ۔

  تفصیلات کے مطابق مشیر تحفظ ماحولیات و کوسٹل ڈیویلوپمینٹ و موسمیاتی تبدیلی  بیرسٹر مرتضی وہاب اور ڈائریکٹر جنرل تحفظ ماحولیات نعیم احمد مغل اور تحفظ ماحولیات ریجنل انچارچ میرپورخاص محمد صھیب راجپوت  کی خصوصی ہدایات پرایڈیشنل انچارج ڈسٹرکٹ  ٿرپارکر علی محمد رند کی سربراہی  میں اپنی ٹیم  کے ہمراہ ٿرپارکر شہر کے مختلف علاقوں میں پلاسٹک بیگز سپلائی و فروخت کرنیوالے ہول سیلرز و ریٹیلروں کی دکانوں پر چھاپے ، ماحول کو خراب کرنے والی نان بائیوگریڈ یبل پلاسٹک بیگ فروخت کرنے والے دوکان داروں کو نوٹس جاری کیے۔  اس موقع پر ڈسٹرکٹ انچارج و اسسٹنٹ ڈائریکٹر  تحفظ ماحولیات ضلع ٿرپارکر علی  محمد رند  نے میڈیا کو بتایا کہ ریجنل انچارج تحفظ ماحولیات میرپورخاص کی خاص ہدایات پر آج ہم نے ضلع ٿرپارکرکے مختلف علاقوں میں پلاسٹک بیگز فروخت کرنیوالے چھوٹی بڑی دکانوں پر چھاپے مارے ہیں اور ان دوکان داروں اور ہول سیلروں اور ریٹیلروں کو سیپا ایکٹ 2014 کے مطابق نوٹس بھی دیے ہیں آج شہر کے ان تمام ریٹیلروں و ہول سیلروں کو وارنگ دی ہے کہ حکومت سندھ کی جانب سے پلاسٹک بیگ کے حوالے سے جاری کردہ نوٹیفیکیشن پر عمل کیاجائے اور جو دکاندار غیر تحلیل شدہ پلاسٹک بیگ کی خریدوفروخت یا تیاری میں پایا گیا تو اسکے خلاف( سیپا) ایکٹ 2014 کے مطابق سخت سے سخت قانونی  کاروائی کی جائے گی۔


 
 
SEPA seals illegal  iron ore plant in Malir district

KARACHI: On the directives of Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtuza Wahab, the Environmental Protection Agency, Government of Sindh (SEPA) has stopped the environmentally unauthorized sinteted iron ore plant in district Malir near gaghar phatak area lately on friday evening here. 
According to details, a district Malir's monitoring team of SEPA - headed by Deputy Director Munir Abbasi - learnt that an environmentally hazard-producing plant was being operated in the vicinity of gakhar phatak area, that too, without obtaining any NoC from the provincial environmental regulator in such non-environmental friendly manners which was causing serious hazards for the said area. Moreover, it was creating multiple environment-related issues like heavy emissions of smoke, dust and toxicity in the air. Consequently local environment of surrounding area was being damaged and subsequently was  effecting badly its fauna and flora. 
District Incharge of Malir  Muneer Ahmed Abbasi along with Nadeem Qureshi environmental inspector initiated action promptly under Section 21 of Sindh Environmental Protection Act 2014 and stopped the referred operation on the spot with the help of local police. 
Team further
directed the plant management to stop all operational feature and not to re-start anymore. 
The Director General SEPA Naeem Mughal appreciated the timely action of SEPA’s team under the supervision of District Incharge  Muneer A Abbasi Deputy Director and said that on the directives of Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtuza Wahab strict action is being taken against all such environmental violations throughout the province.Such stern action are taken across the board by SEPA for the safeguard of our environment, he added.
He further said that  such type of environmentally harmful activities retards the process of sustainable development and put the safety of our coming generations into a grave peril.
 
   
   
 
سیپا نے سٹی اسکول کی عمارت کی تعمیر رکوادی

کراچی: حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایات پر ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ(سیپا) کے ضلع وسطی کی مانیٹرنگ ٹیم نے فیڈرل بی ایریا کے بلاک چار میں ماحولیاتی اجازت کے بغیر جاری سٹی اسکول کی عمارت کی تعمیر رکواکر اس کی چہار دیواری کے داخلی دروازے کو سربمہر کردیا۔ 
تفصیلات کے مطابق سیپا کے ضلع وسطی کے انچارج کامران خان کی قیادت میں مانیٹرنگ ٹیم نے آج(بدھ) فیڈرل بی ایریا میں جائے وقوع کا دورہ کیا اور عمارت کی تعمیر ماحولیاتی اجازت کے بغیر ہوتا دیکھ کر مقامی پولیس کی مدد سے موقع پر ہی تعمیر رکوادی اور تعمیراتی عملے سے احاطے کو خالی کراکے اس کے صدر دروازے کو سیل کردیا تاکہ مزید کسی قسم کی تعمیراتی سرگرمی نہ کی جاسکے۔ 
واضح رہے کہ سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول کی دفعہ 17کے تحت صوبے بھر میں کسی بھی قسم کی تجارتی عمارت کی تعمیر و دیگر ترقیاتی سرگرمیوں سے قبل اس کی سیپا سے ماحولیاتی منظوری حاصل کرنا ضروری ہے تاکہ تعمیر و تنصیب کے دوران ماحولیاتی نقصان کو کم سے کم کیا جاسکے اور ہونے والے ناگزیر نقصان کا بھرپور مداوا کیا جاسکے، بصورت دیگر مذکورہ قانون کی دفعہ 21کے تحت سیپا بلااجازت شروع کی گئی کسی بھی قسم کی ترقیاتی سرگرمی کو رکواسکتا ہے۔
سیپا کے ڈائریکٹر جنرل نعیم مغل نے اس موقع پر مانیٹرنگ ٹیم کے مذکورہ بروقت اقدام کو سراہا اور کہا کہ مشیر ماحولیات مرتضی وہاب کی ہدایات پر ماحولیاتی قوانین پر عملدرآمد کو یقینی بنایا جارہا ہے او ر اس حوالے سے ماحولیاتی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف بلاتفریق کارروائی کی جارہی ہے۔ 

SEPA stops unauthorized construction of City school’s building
KARACHI: Environmental Protection Agency, Government of Sindh (SEPA) has stopped the environmentally unauthorized construction of a building of City School on Wednesday here. 
According to details, a district central’s monitoring team of SEPA found that a building of City School was being constructed in Federal B Area Block 4 without obtaining any NoC from the provincial environmental regulator. Subsequently it stopped its construction on the spot with the help of local police. 
The building was evacuated of masonry workers and then its boundary wall’s entrance was sealed to ward off resumption of further construction activities. 
The Director General SEPA Naeem Mughal appreciated the timely action of SEPA’s team under the supervision of District Incharge Kamran Khan and said that on the directives of Spokesperson of Sindh Government and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtuza Wahab strict action is being taken against all such development activities which are carried out without obtaining environmental approval from SEPA. 
It may be pointed out that according to Section 17 of Sindh Environmental Protection Act 2014 any construction or development activity cannot be initiated in the province without obtaining its NoC from SEPA. For this purpose the proponent of the development/construction project has to submit the initial environmental examination (IEE) report for smaller project and environmental impact assessment (EIA) report for bigger project for the review of SEPA. 
Eventually SEPA grants NoC on satisfactory assurances of necessary precautionary measures to avoid any major harm to environment while carrying out the activity. The report should also promise to offset any unavoidable damage to environment after completion of the project. 

Attachments area

 
     
 
سیپا کو مقدمات ماحولیاتی ٹریبونل میں بلاتاخیر بھیجنے کی ہدایات
کراچی: حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب  نے ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ(سیپا) کو ہدایات دی ہیں کہ ماحولیاتی خلاف ورزیوں کے مقدمات بغیر کسی تاخیر کے ماحولیاتی ٹریبونل میں بھیجے جائیں تاکہ صوبے کے قدرتی ماحول کو نقصان پہنچانے والوں کو قرار واقعی سزا دلوائی جاسکے۔ 
اس ضمن میں سیکریٹری محکمہ ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی حکومت سندھ خان محمد مہر نے آج(پیر) اپنے دفتر میں سیپا کے شعبہ قانون اور شعبہ ماحولیاتی مانیٹرنگ کے افسران کے جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہا کہ ماحولیات کو نقصان پہنچانے والے اگر اپنی روش سے باز نہ آئیں تو ان کے خلاف مقدمات کی تیاری اور انہیں ماحولیاتی ٹریبونل میں بھیجنے میں کسی تامل کا مظاہر ہ نہیں کیا جائے کیونکہ ماحول دشمنی کا قلع قمع کرنے کے لیے ضروری ہے کہ آلودگی پھیلانے ولوں سے قانون کے مطابق سختی سے نمٹا جائے۔ 
انہوں نے کہا کہ سیپا کے شعبہ قانون کو مستحکم کیا جائے اور انہیں وہ تمام لوازمات فراہم کی جائیں جس سے انہیں مقدمات کی تیاری اور انہیں ماحولیاتی ٹریبونل میں بھیجنے میں آسانی ہو کیونکہ ادارے کے قانونی افسران کی پیشہ ورانہ استعداد میں اضافے ہی سے قانونی پکڑ دھکڑ کے کام میں تیزی لائی جاسکتی ہے۔ 
سیکریٹری ماحولیات نے اجلاس میں بتایا کہ ماحولیاتی قوانین کی خلاف ورزی کرنے والے عناصر کے خلاف مقدمات ماحولیاتی ٹریبونل میں بھیجنے میں سست روی کو حکومتی سطح پر سنجیدگی سے دیکھا جارہا ہے کیونکہ ابتدائی نوٹسز اور،ماحول دشمن سرگرمیوں کی بندش کے احکامات سے ماحولیاتی نقصان پہنچانے کے عمل کو روکا تو جاسکتا ہے مگر ماحول کو پہنچائے گئے نقصان کی تلافی کے لیے ضروری ہے کہ ماحول دشمن عناصر پر بھاری جرمانے عائد کئے جائیں اور سنگین خلاف ورزی کرنے والوں کو قید کی بھی سزا دی جائے تاکہ ماحولیاتی ابتری کا تدارک کیا جاسکے۔ 
انہوں نے مزید کہا کہ سیپا کے ماحولیاتی تفتیشی افسران کو مقدمات تیار کرنے کی بنیادی قانونی تربیت فراہم کی جائے اور انہیں اس حوالے سے تمام ضروری قانونی پیچیدگیوں سے اچھی طر ح واقف کرایا جائے تاکہ وہ قانونی کارروائی کے لیے نقائص سے پاک مقدمات بنائیں جس پرماحولیاتی  ٹریبونل جلد از جلد انصاف کے تقاضوں کے مطابق فیصلہ جاری کرسکے۔ 
واضح رہے کہ سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014کے مطابق کسی بھی قسم کی ماحولیاتی خلاف ورزی کرنے والوں کو پہلے مرحلے میں بطور سرزنش نوٹس جاری کیا جاتا ہے جبکہ خلاف ورزی جاری رہنے پر ان کی سرگرمیوں کو بند بھی کرایا جاسکتا ہے تاہم ہر قسم کی ابتدائی کارروائی کے باوجود اگر خلاف ورزی بدستور جاری رہے یا گزشتہ خلاف ورزیوں سے ماحول کو سنگین نقصان پہنچا ہو تو ایسی صورت میں ان کا مقدمہ ماحولیاتی ٹریبونل میں سخت سزا دلوانے کے لیے بھیجا جاتا ہے۔ 
اجلاس میں سندھ کی اسسٹنٹ پروزیکوٹر جنرل برائے ماحولیات ایڈوکیٹ شبانہ اسفندیار، سندھ کے ماحولیاتی ٹریبونل کی رجسٹرار عابدہ پروین کے علاوہ سیپا کے ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل وقار حسین پھلپوٹو اور ڈائریکٹرز عرفان احمد عباسی اور عاشق لانگاھ بھی شریک تھے۔ 


SEPA asked for speedy prosecution of violators

KARACHI: Spokesperson of Government of Sindh and Advisor to CM Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtuza Wahab has issued directives to Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) for speedy prosecution of the violators of environmental regulations of Sindh. He asked SEPA to file cases against such elements in Sindh Environmental Tribunal without any delay. 
To implement above directives, the Secretary Environment, Climate Change and Coastal Development Department, Government of Sindh Khan Muhammad Mahar has conducted a review meeting of law and technical officers of SEPA.
He said that if environmental violation continues unabated then their cases must be prepared without any delay and be forwarded to Sindh Environmental Tribunal for litigation to stop such violations in letter and spirit. 
He further said that lackluster in prosecution against violators by SEPA is being seriously viewed by the Sindh Government because prosecution is an effective tool to ward off environmental violations. It becomes more effective if initial punitive actions ranging from serving of warning notices to issuance of environmental protection order to violators do not work. 
He underlined the need of strengthening of law section of SEPA to fully equip it with necessary resources for the better functioning for the greater cause of environmental litigation. He said that efficient legal staff means prompt and speedy prosecution of environmental violators which is need of the time. 
He also said that environmental investigation officers of SEPA may be provided basic training to prepare the court cases and they should have necessary perception on all legal complications related to effective enforcement of environmental laws.
It may be pointed out that according to Sindh Environmental Protection Act 2014, initially SEPA issues warning notices to violators of environmental law and if violation continues it finally issues environmental protection order (EPO) ordering the stoppage of their unlawful activities. If violator fails to comply with the orders of SEPA then its case is forwarded to Sindh Environmental Tribunal for litigation. 
Those who attended the review meeting were; Assistant Prosecutor General for Environment Advocate Shabana Asfandyar, Registrar Sindh Environmental Protection Tribunal Abida Perveen apart from Additional DG SEPA Waqar Hussain Phulpoto and Directors Irfan Ahmad Abbasi and Ashique Ali Langah. 




 
 
لاک ڈاؤن سے فضائی معیار میں آنے والی چالیس فیصد بہتری برقرار رکھنے کا سیپا کا عزم
ڈی جی سیپا کی سربراہی میں شہر کی تمام صنعتی انجمنوں کے سربراہوں کا ہنگامی اجلاس
کراچی: حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلی سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایات پرکویڈ 19کی روک تھام کے لیے لگایا گیا لاک ڈاؤن ختم ہونے کے بعد معمولات زندگی بحال ہونے کے باعث شہر میں فضائی آلودگی میں دوبارہ اضافہ روکنے کے لیے ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ نے فضائی معیار کو پستی کی جانب جانے سے روکنے کے لیے پہلے مرحلے میں شہر کی تمام صنعتی انجمنوں کو ہدایات جاری کی ہیں کہ وہ فوری طور پر اپنے اپنے صنعتی علاقوں کے فضائی معیار کی ماحولیاتی نگرانی کرائیں اور فضائی آلودگی میں ہونے والے اضافے کی روک تھام کے لیے ہنگامی بنیادوں پر دھوں دینے والی فیکٹریوں کی چمنیوں کو درست حالت میں کرنے کے ساتھ ساتھ اپنی فیکٹریوں کے اطراف میں زیادہ سے زیادہ پودے لگائیں۔ 
تمام صنعتی انجمنوں سے کہا گیا ہے کہ ایک ہفتے کے اندر اندر شجرکای کا پلان ڈی جی سیپا کے دفتر میں جمع کرائیں، اس کے ساتھ ساتھ شہر میں گاڑیوں کی ماحولیاتی نگرانی کی مہم بھی جلد ہی شروع کی جارہی ہے جس میں شہر کی مصروف شاہراہوں پر مقررہ حدود سے زائد دھواں دینے اور شور کرنے والی گاڑیوں کا ٹریفک پولیس کی وساطت سے موقع پر ہی چالان و جرمانہ کیا جائے گا۔ 
 ڈائریکٹر جنرل سیپا نعیم احمد مغل کی سربراہی میں شہر کی تمام صنعتی انجمنوں بشمول لانڈھی، فیڈرل بی ایریا، سائٹ، نارتھ کراچی اورسپر ہائی وے کی انڈسٹریل ایسوسی ایشنزکے سربراہوں  کے سائٹ ایسوسی ایشن کے دفتر میں منعقدہ ہنگامی اجلاس میں یہ بھی طے کیا گیا کہ صنعتی علاقوں کی مصروف شاہراہوں پر ٹریفک کی روانی جاری رکھنے کے لیے وہاں کی صنعتیں اپنی مدد آپ کے تحت موثر اقدامات لیں گی اور اپنی شٹل سروس کی گاڑیوں کو ترجیحی بنیادوں پر بہتر بناکر ان سے دھویں کا اخراج مقررہ حدود میں لائیں گی۔  
 اس موقع پر ڈائریکٹر جنرل نعیم احمد مغل اس عزم کا اعادہ کیا کہ فضائی آلودگی میں کمی برقرار رکھنے کے لیے تمام عملی اقدامات لیے جائیں گے انہوں نے مزید کہا کہ کراچی شہر میں فضائی آلودگی کی صورتحال ہم سب کے لیے یکساں تشویش کا موجب ہے اور ہماری کوشش ہوگی کہ لاک ڈاؤن کے نتیجے میں شہر کے فضائی معیار میں جو چالیس فیصد تک بہتری آئی ہے اسے واپسی سے باز رکھا جائے جس کے لیے فضائی معیار سے وابستہ تمام متعلقہ اداروں اور افراد بشمول صنعتوں اور گاڑیاں مالکان کو اپنا کردار ادا کرنا ہوگا تاکہ دوبارہ ہم اس فضائی ابتری کی طرف نہ جاسکیں جس میں سانس لینا دشوار ہوجاتا ہے اور انسانی صحت براہ راست متاثر ہوتی ہے۔
 انہوں نے کہ کہ لاک ڈاؤن کے دوران سیپا کی جانب سے لاک ڈاؤن سے پہلے اور لاک ڈاؤن کے بعد شہر کے فضائی معیار پر کرائے گئے تقابلی مطالعے سے معلوم ہوا تھا کہ شہر میں فضائی معیار میں اوسط چالیس فیصد تک کمی آئی تھی جسے ہم سب کو مل کر برقرار رکھنا ہے۔ 
 ڈائریکٹر جنرل نے اس بات کی بھی ہدایت کی کہ تمام صنعتی تنظیمیں مل کر کر شہر کی فضائی آلودگی کی روک تھام پر ایک جامع اسٹڈی کروائیں،انہوں نے مزید کہا کہ کچرہ چاہے صنعتی ہو گھریلو اس کو صحیح  طریقے سے ٹھکانے لگانے کے لیے اقدامات کئے جائیں،ڈائریکٹر جنرل نے مزید کہا کہ جن صنعتوں نے ابھی تک واٹر کمیشن کی ہدایت کے مطابق ویسٹ واٹر ٹریٹمنٹ پلانٹ نہیں لگائے ہیں وہ انہیں فوری طور پر لگوائیں، بصورت دیگر ان کے خلاف قانونی کاروائی کی جائے گی۔
آخر میں نعیم احمد مغل نے کہا کہ ماحولیاتی آلودگی کے سدباب کے لیے ادارہ تحفظ ماحولیات سندھ ہمیشہ کی طرح تمام صنعتی انجمنوں کو ہر ممکن سہولت مہیا کرے گا کیونکہ تمام متعلقہ اسٹیک ہولڈرز  کے تعاون بغیر ماحولیاتی آلودگی میں مستقل بنیادوں پر کمی لانا ممکن نہیں ہے۔
جن صنعتی سربراہوں اور رہنماؤں نے اجلاس میں شرکت کی ان میں سائٹ ایسوسی ایشن کے چیئرمین سلیمان چاولہ کے علاوہ زبیر موتی والا، جاوید بلاوانی اور سلیم پاریکھ جبکہ نارتھ کراچی انڈسٹریل ایسوسی ایشن کے نسیم اختر، سپر ہائی وے ایسو سی ایشن کے جناب شاہین، فیڈرل بی ایریا ایسوسی ایشن کے محمد عرفان، کورنگی انڈسٹریل ایسوسی ایشن کے عمر ریحان، بن قاسم ایسو سی ایشن کے نوید شکورجبکہ لانڈھی انڈسٹریل ایسوسی ایشن کے زین بشیر شامل تھے، سیپا کے ڈائریکٹر کراچی آفس ڈاکٹر عاشق علی لانگاھ, ڈپٹی ڈائریکٹرزٹیکنیکل عمران صابر اور وارث گبول بھی اس موقع پر موجود تھے۔ 
 
     
 
SEPA taking steps to retain rise in air quality after lock-down
KARACHI: Sindh Environmental Protection Agency (SEPA) is taking two major steps with regard to industrial and vehicular emissions control on emergency basis to retain the 40 per cent improvement in the air quality of Karachi which was witnessed after the imposition of lock-down to contain the spread of Covid 19.
SEPA has issued directives to all industrial associations to conduct air quality monitoring in their industrial areas to check air quality degradation and plant saplings in huge number in and around their factories. Industries were asked to submit their tree plantation plan within one week into the office of SEPA.
The steps are being taken on the directives of Spokesperson of the Government of Sindh and Advisor to CM Sindh.
Industries have also been directed to improve the conditions of their buses of shuttle service to control their air emissions and take practical measures to facilitate smooth plying of vehicles in and around their factories. 
Moreover, SEPA is also re-launching its vehicular emission control campaign throughout the city to fine/penalize smoke-emitting vehicles with the help of traffic police.   
In this regard an emergency meeting of all industrial associations of the city including Federal B Area, North Karachi, SITE, and Super Highway was held under the chairmanship of Director General SEPA Naeem Ahmed Mughal at the office of   SITE Association.
The meeting was attended by Sulaiman Chawla President SITE Association, Shaheen Ilyas President Super Highway, Nasim Akhtar President North Karachi Industrial Association, Noman Yaqoob President Landhi Association, Abdullah Abid F.B.Area Industrial Association, Sheikh Umer Rehan President Korangi Association of Trade and Industry, Naveed Shakoor President Bin Qasim Association besides prominent industrialists Zubair Motiwala, Salim Pareekh and Javed Balwani.
Representatives from SEPA were Director Regional Office Karachi Aashiqui Langha, Deputy Directors Waris Gabol and Imran Sabir besides DG SEPA.
Addressing the meeting, the DG SEPA Naeem Ahmed Mughal said that for the vigorous enforcement of environmental laws all necessary measures are being taken by the environmental watchdog on priority basis. 
He informed the participants of the meeting that SEPA had conducted a comparative study of air quality of Karachi prior to lock-down and during the lock-down; which revealed a 40 per cent improvement in air as a result of lock-down. 
He pointed out that deteriorating air environment is equally a matter of grave concern for all of us and its control is possible with the collective efforts of all stakeholders including industries and vehicle owners/transporters. 
He further said that to improve the air quality in the city all the industrial associations should start beautification campaigns at the major roundabouts in their areas along with plantation at the open spaces to improve the air quality parameters. 
DG SEPA further directed that all the industrial associations should conduct an air quality study in Karachi to analyze the present air quality with regard to its improvement. He also underscored the need of environment-friendly transport for commuting the industrial workers to help mitigate their air emissions. 
The DG SEPA specifically directed for the proper disposal of solid waste being generated by the industries which includes both hazardous and non-hazardous industrial waste. 
“Wastewater treatment plants should be installed as per the directives of Water Commission and in case of any negligence on this score, SEPA will take stern action’, he warned. 
He further said that the culprits who are responsible for the burning of solid waste in any area will be dealt with iron hand. SEPA simply needs cooperation of public in this regard to complain us as and when any such incident occurs in their area.  
At the end, he vowed to provide every technical assistance to industries with regard to industrial pollution control. 
It may be recalled that according to data collected in April 2020 during the lock-down by SEPA from different locations of six districts of Karachi the average particulate matter 2.5 (PM 2.5) – the most lethal and stubborn air pollutant – was improved by 39 percent as compared to the same data taken from 76 locations of the city in February 2020 before the lock-down. Likewise, the noise level of the city was also improvement by 19 percent during the lock-down.
The district-wise details of the data revealed that air quality of districts Central, East, South, West, Malir and Korangi was improved by 8, 61, 40, 37, 25 and 54 percent respectively while an improvement in the noise level of Central 42, East 20, South 15, West 17, Malir 2 and Korangi 26 percent occurred during the lock-down as compare to before lock-down.
 
 
Sepa takes action against 7 construction projects of District East

KARACHI: Sindh Environmental Protection Agency (Sepa) has initiated various types of legal action with reference to Section 17 of Sindh Environmental Protection Act 2014 (SEP Act14) against seven construction projects of residential and commercial buildings which are in progress in various localities of District East of Karachi division.
The action has been taken on the directives of Spokesperson of Government of Sindh and Advisor to Chief Minister Sindh on Law, Environment, Climate Change and Coastal Development Barrister Murtuza Wahab.  
According to details, an Environmental Protection Order (EPO) has been issued on an under-construction project situated in P.E.C.H Society as soon as it was established that the project is being constructed in open violation of the concerned clauses of SEP-Act14. While another EPO is under process which will be issued on another such project being carried out in Bahadurabad. 
Besides, the proponents of another two projects under construction in Scheme 33 and PIB Colony are being directed to appear in person before Director General Sepa to defend their position that why not a legal action with regard to their violation may be initiated against them. 
Two more projects of similar nature are being further surveyed from environmental point of view and their management has been informed in this regard. The management of seventh construction project located at Shaheed-e-Millat Road has submitted its Environmental Impact Assessment (EIA) Report in Sepa which is being processed as per concerned rules and regulations. 
It may be pointed out that it is mandatory for all development projects in Sindh to obtain their environmental approval from Sepa else their environmental clearance will remain in question. People interested to buy any shop or flat in any construction project in Sindh should check an NoC issued from Sepa, in addition to other necessary documents, before initiating their booking process. 
A development project carried out without obtaining its environmental approval puts severe harmful effects on environment and climate conditions of the area. Mostly such projects design and build their sewerage and solid waste systems, car parking, rescue arrangements and the provisions of utility services by putting aside their environmental requirements. As a result instead of ensuring sustainable development they bring on public nuisance. 
 
 
 
ضلع شرقی کے سات رہائشی و تجارتی تعمیراتی منصوبوں کے خلاف سیپا کی کارروائ

کراچی: حکومت سندھ کے ترجمان اور وزیر اعلیٰ سندھ کے مشیر برائے قانون، ماحولیات، موسمیاتی تبدیلی اور ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب کی ہدایات پر ادارہ تحفظ ماحولیات، حکومت سندھ نے ضلع شرقی کے مختلف علاقوں میں واقع سات زیر تعمیر رہائشی و تجارتی تعمیراتی منصوبوں کے خلاف سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحولیات 2014کی دفعہ 17کے تحت کارروائی کرتے ہوئے انہیں فی الفور ماحولیاتی تقاضے پورے کرنے کی تاکید کردی ہے جبکہ ماحولیاتی قانون کے برخلاف بدستورتعمیرات جاری رکھنے والے منصوبوں کی تعمیراتی بندش کے احکامات جاری کئے جارہے ہیں۔ 
تفصیلات کے مطابق اسکیم نمبر تیتیس میں واقع تین اور شہید ملت روڈ، بہادر آباد، پی آئی بی کالونی اور پی سی ایچ ایس میں زیر تعمیر ایک ایک رہائشی و تجارتی تعمیراتی منصوبوں کے خلاف مختلف نوعیت کی ماحولیاتی کارروائیوں کا آغاز کردیا گیا ہے۔
اس ضمن میں سنگین ماحولیاتی خلاف ورزی کے مرتکب پی سی ایچ ایس میں زیر تعمیر منصوبے کی تعمیرات کی بندش کا حکم نامہ(انوائرنمنٹل پروٹیکشن آرڈر) بھی جاری کیا جاچکا ہے جبکہ بہادرآباد میں واقع زیر تعمیر پلازہ کے خلاف ایسا ہی حکم نامہ منظوری کے مراحل میں ہے۔
 اس کے علاوہ اسکیم نمبر تیتیس اور پی آئی بی کے ایک ایک زیر تعمیر منصوبے کی انتظامیہ کو ڈائریکٹر جنرل ای پی اے سندھ کے روبرو پیش ہوکر اپنے منصوبے کا ماحولیاتی دفاع کرنے کا موقع فراہم کردیا گیا ہے، ساتھ ہی ساتھ اسکیم نمبر تیتیس کے مزید دو منصوبوں کا تفصیلی ماحولیاتی سروے کرنے کے لیے ان کی انتظامیہ کو آگاہ کردیا گیا ہے جبکہ شہید ملت روڈ پر واقع زیر تعمیر منصوبے کی انتظامیہ نے ای پی اے سندھ کی ہدایات پر اپنے منصوبے کا ای آئی اے (ماحولیاتی جائزہ رپورٹ) جمع کرادیا ہے جس کی جانچ  پڑتال کی جارہی ہے۔ 
واضح رہے کہ سندھ کے قانون برائے تحفظ ماحول 2014کی دفعہ 17کے تحت پورے سندھ میں کسی
 بھی قسم کا تعمیراتی منصوبہ شروع کرنے سے قبل ای پی اے سندھ سے اس کی ماحولیاتی منظوری لینی ضروری ہے بصورت دیگر ایسا منصوبہ غیر قانونی کہلائے گا اور ایسا منصوبہ اگر فلیٹوں اور دکانوں پر مشتمل ہو تو اسے خریدنے کے خواہشمندوں کو چاہئے کہ وہ دکان یا فلیٹ بک کرانے سے قبل اس کا ماحولیاتی اجازت نامہ متعلقہ بلڈر سے طلب کریں اور ماحول دوستی کا مظاہرہ کرتے ہوئے بلا اجازت تعمیر ہونے والے منصوبوں میں کسی قسم کی کوئی جائیداد نہ خریدیں۔  
کوئی بھی تعمیراتی منصوبہ ماحولیاتی منظوری کے بغیر شروع کرنے سے اطراف کے ماحول کو سنگین نقصان پہنچتا ہے کیونکہ ایسے منصوبوں کا سیوریج، کچرے کا بندوبست، ہنگامی حالات سے بچاؤ، کارپارکنگ کے علاوہ اس کی تعمیر کے دوران بھی کسی قسم کے ماحولیاتی تقاضوں کو ملحوظ خاطر نہیں رکھنے کے امکان کو رد نہیں کیا جاسکتا ہے جس سے ماحول کو نقصان ہونے کے ساتھ ساتھ اطراف میں رہائش پذیر لوگوں اور وہاں سے گزرنے والوں کو شدید زحمت کا سامنا  توکرنا پڑتا ہی ہے۔اس کے ساتھ ساتھ ایسا منصوبہ پائیدار ترقی کی بھی روح کے منافی ہوتا ہے کیونکہ ترقی صرف وہی پائیدار ہوتی ہے جس میں ماحولیات کا کم سے کم نقصان ہو اور ہونے والے نقصان کی بھی لازمی تلافی کی جائے۔